حسین شیخ الاسلام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(حسین شیخ الالسلام سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
حسین شیخ الاسلام
(فارسی میں: حسین شیخ‌الاسلام ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تفصیل= حسین شیخ الالسلام 2020ء میں

مناصب
رکن مجلس ایران   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن مدت
6 جون 2005  – 6 جون 2009 
حلقہ انتخاب تہران، رے، شمیرانات و اسلامشہر 
معلومات شخصیت
پیدائش 7 دسمبر 1952[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اصفہان  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 5 مارچ 2020 (68 سال)[2]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات کووڈ-19  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت State flag of Iran (1964–1980).svg شاہی ایرانی ریاست (1952–1979)
Flag of Iran.svg ایران (1979–5 مارچ 2020)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عارضہ کووڈ-19 (–5 مارچ 2020)  ویکی ڈیٹا پر (P1050) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کیلیفورنیا، برکلے  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تخصص تعلیم کمپیوٹر سائنس  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان،  سفارت کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان فارسی،  عربی،  انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حسین شیخ الالسلام (فارسی: حسین شیخ‌الاسلام‎; 29 نومبر 1952ء – 5 مارچ 2020ء) ایک ایرانی قدامت پسند سیاست دان اور سفیر تھیے اور وزیر خارجہ محمد جواد ظریف کے مشیر بھی رہے۔[3][4] وہ سات مرتبہ مجلس ایران کے رکن منتخب ہوئے[5] اور ایران کے سفیر برائے سوریہ بھی رہے۔[6]
حسین پارلیمان کے اسپیکر علی لاریجانی کے معاون بوائے بین القوامی امور رہے۔ حسین ان طلبہ کا حصہ تھے جنھوں نے 1979ء میں امریکی اہلکاروں کو یرغمال بنایا تھا۔[7]

حسین شیخ الاسلام کی وفات کووڈ-19 سے 5 مارچ 2020ء کو ہوئی۔[8][9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. بیداری اسلامی، سوریه و اهرم تروریسم — اخذ شدہ بتاریخ: 5 مارچ 2020
  2. دیپلمات سابق ایران بر اثر ابتلا به کرونا درگذشت؛ ل فاطمه رهبر «وخیم» اعلام شد
  3. "آرکائیو کاپی". 06 اپریل 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 مارچ 2020. 
  4. "شیخ الاسلام مشاور وزیر خارجہ شد". Yjc.ir. اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2020. 
  5. FA Wikipedia
  6. "Kharrazi in Damascus for foreign ministers meet of Iraq neighbors". www.globalsecurity.org. 
  7. "Analysis: Iran Sends Terror-Group Supporters To Arafat's Funeral Procession". RadioFreeEurope/RadioLiberty. 
  8. "دیپلمات سابق ایران بر اثر ابتلا بہ کرونا درگذشت؛ حال فاطمہ رهبر «وخیم» اعلام شد". (Radio Farda) رادیو فردا (بزبان فارسی). اخذ شدہ بتاریخ 5 مارچ 2020. 
  9. "اعلیٰ ایرانی سرکاری اہلکار کورونا وائرس کے مرض کے ہلاک". العربیہ انگریزی. 5 مارچ 2020. اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2020. 

بیرونی روابط[ترمیم]