حصار (شہر)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

हिसार
شہر
From top going clockwise: District Administrative Complex, St. Thomas Church, Fort of Firoz Shah, Sheela Mata Temple and observatory at OP Jindal Gyan Kendra.
From top going clockwise: District Administrative Complex, St. Thomas Church, Fort of Firoz Shah, Sheela Mata Temple and observatory at OP Jindal Gyan Kendra.
عرفیت: شہرِ فولاد
ملکبھارت
ریاستہریانہ
ضلعحصار
بلدیہحصار
شہری ہم بستگیحصار
ڈویژنحصار
آغاز آبادکاری1354
ثبت شدہ1832
قائم ازفیروز شاہ تغلق
وجہ تسمیہفیروز شاہ تغلق
تحصیلیںحصار صدر
حکومت
 • مجلسبلدیہ، حصار
 • رکن پارلیماندوشیانت چؤتالا
بلندی215 میل (705 فٹ)
آبادی (2011)
 • کل301,249
 • درجہ141
 • کثافت438/کلومیٹر2 (1,130/میل مربع)
زبانیں
 • دفتریہندی زبان, پنجابی زبان
 • مقامیہریانوی زبان, باگڑی زبان
منطقۂ وقتبھارتی معیاری وقت (UTC+5:30)
ڈاک اشاریہ رمز125 xxx
UN/LOCODEIN HSS
رمز ٹیلیفون91-1662 xxx xxx
گاڑی کی نمبر پلیٹHR-20 xxxx (غیر تجارتی گاڑیوں کے لیے)
HR-39 xxxx (تجارتی گاڑیوں کے لیے)
نزدیک ترین شہرنئی دہلی, چندی گڑھ
انسانی جنسی تناسب844 مذکر/مؤنث
خواندگی81.04%
لوک سبھا حلقہحصار
ودھان سبھا حلقہحصار شہر
شہری منصوبہ بندی ایجنسیHUDA
نمائندہ شہرمیونسپل کارپوریشن، حصار
آب و ہواCw (کوپن)
بارندگی490.6 ملیمیٹر (19.31 انچ)
اوسط گرمائی درجہ حرارت32.5 °C (90.5 °F)
اوسط سرمائی درجہ حرارت17.6 °C (63.7 °F)
ویب سائٹwww.hisar.nic.in

حصار (انگریزی: Hisar)) بھارت کا ایک آباد مقام جو حصار ڈویژن میں واقع ہے۔[1]

تفصیلات[ترمیم]

حصار (شہر) کی مجموعی آبادی 301,249 افراد پر مشتمل ہے اور 215 میٹر سطح سمندر سے بلندی پر واقع ہے۔

حصار بھارت کے شمال مغرب میں واقع ہریانہ صوبے کے حصار ضلع کا انتظامی ہیڈکوارٹر ہے۔ یہ بھارت کے دار الحکومت نئی دہلی کے 164 کلومیٹر مغرب میں قومی شاہراہ نمبر 10 اور نیشنل ہائی وے نمبر 65 پر پڑتا ہے۔ یہ بھارت کا سب سے بڑا جستی لوہے کا پروڈیوسر ہے۔ [ اسی لیے اسے سٹیل شہر کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ گھاگھرا واحد دریا ہے۔ جمنا نہر حصار ضلع سے ہوکر جاتی ہے، آب و ہوا خشک ہے۔ کپاس پر مبنی صنعت ہیں۔ بھیوانی، حصار، هاسي اور سرسا اہم تجارتی مرکز ہے۔ بہترین نسل کے ساڑو کے لیے حصار بیان کیا گیا ہے۔ یہاں ہندی اور انگریزی سب سے زیادہ بولی جانے والی زبانیں ہیں۔ یہاں کی اوسط شرح خواندگی 81.04 فیصد ہے۔ 60 کی دہائی میں حصار کی فی کس آمدنی بھارت میں سب سے زیادہ تھی۔

حصار پر بہت سارے سلطنتوں کی حکمرانی رہی ہے۔ یہ تیسری صدی قبل مسیح میں موریہ خاندان کا، 13 ویں صدی میں تغلق خاندان کا 16 ویں صدی میں مغل سلطنت کا اور 1 9وي صدی میں برطانوی سلطنت کا حصہ رہا ہے۔ ہندوستان کی آزادی کے بعد یہ پنجاب صوبے کا حصہ بنا دیا گیا لیکن 66 ء میں پنجاب کی تقسیم کے بعد یہ ہریانہ کا حصہ بن گئی۔

یہ شہر ایک دیوار سے گھرا ہے۔ جس میں چار دروازے ہیں- ناگوری گیٹ، موری گیٹ، دہلی گیٹ اور تلاكی گیٹ کے نام سے مشہور ہے۔ یہاں فیروز شاہ کے قلعے اور محل کے باقیات کے ساتھ ساتھ کئی قدیم مساجد ہیں جن میں جہاز بھی ایک ہے، جو اب ایک جین مندر ہے۔ قدیم وقت میں یہ ہڑپا تہذیب کا بنیادی مرکز تھا۔ قدیم دور میں یہاں بہت قبائلی قومیں رہتی تھی۔ ان نسلوں میں بھرت، پرو، مجاوتس اور مهاورش اہم تھی۔

یہاں پر کپاس، اناج اور تیل کے بیجوں کا بڑا بازار ہے۔ اس بازار کے لیے یہ بہت مشہور ہے۔

ٹریفک اور نقل و حمل[ترمیم]

حصار شہر ایک اہم ریل اور سڑک جنکشن ہے۔

سیاحت[ترمیم]

حصار ایک خوبصورت مقام اور سیاحت کا hottie مقام ہے۔ سیاحوں یہاں پر بہت خوبصورت مقامات کی سیر کر سکتے ہیں۔

آبادی[ترمیم]

2011 کی مردم شماری کے مطابق حصار کی آبادی 301،24 9 ہے۔ حصار بھارت کا 141 واں سب سے زیادہ آبادی والا شہر ہے۔ مرد 54 فیصد آبادی جبکہ خواتین 46 فیصد ہیں۔ یہاں جنس تناسب 844 خواتین فی ہزار مرد ہے۔ اوسط شرح خواندگی 81.04 ہے: مرد خواندگی کی شرح 86.13 ہے جبکہ خواتین میں خواندگی کی شرح 75.00 ہے۔ ہندو حصار کی تقریبا 9 7 فیصد آبادی کی تشکیل کرتے ہیں اور مسلم، جین، سکھ اور مسیحی باقی آبادی کی تشکیل کرتے ہیں۔ 19 وي صدی میں حصار میں آریہ سماج بہت کامیاب ہوا اور اس میں لالہ لاجپت رائے کا بہت اہم کردار ادا تھا۔ ہر ذات کے لوگ حصار کو اپنا جائے پیدائش مانتے ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین. "Hisar (city)".