حضرت ایشاں

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حضرت ایشاں
Darbare Hazrat Eshan after renovation by Khwaja Sardar Sayyid Mir Sultan Masood Dakik.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1563  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
بخارا،  خانیت بخارا،  ازبکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 4 نومبر 1642 (78–79 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لاہور،  مغلیہ سلطنت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مدفن مقبرہ خواجہ ایشاں (بیگم پورہ)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام دفن (P119) ویکی ڈیٹا پر

حضرت ایشاں یا خواجہ سید خاوند محمود نقشبندی (پیدائش: 1563ء— وفات: 4 نومبر 1642ء) لاہور میں سلسلہ نقشبندیہ کے جلیل القدر بزرگ تھے۔

ولادت[ترمیم]

حضرت ایشاں کی ولادت 971ھ میں بخارا میں ہوئی ۔

نام[ترمیم]

اصل نام خاوند محمود تھا جامع کمال و صاحب حال و قال ہونے کی وجہ سے حضرت ایشاں کہا جاتا ہے ان کے والد کا نام میر سید شریف بن خواجہ ضیاء بن خواجہ میر محمد بن تاج الدین حسین بن خواجہ علاؤ الدین عطار ہے یہ خوارزم کے سادات سے تھے۔

وجہ تسمیہ حضرت ایشاں[ترمیم]

لفظ آں شان فارسی کا لفظ ہے جس کے لفظی معنی وہ شانبمعنی بڑی شان والا کے ہیں سید خاوند محمود کو ان کی عظمت شان کی وجہ سے حضرت ایشاں کہا جاتا ہے اوریہی نام ان کے اصل نام پر بھی غالب آ گیا ۔

نسبت جدی[ترمیم]

حضرت ایشاں کا نسب والد کی طرف سے خواجہ علاؤالدین عطار سے ملتا ہے جو شاہ بہاؤالدین کے خلیفہ تھے اور دوسری طرف سے خواجہ اتا تک پہنچتا ہے

تعلیم و تربیت[ترمیم]

ابتدائی تعلیم والد محترم سے حاصل کی بارہ برس کی عمر میں قرآن کے حافظ ہوئے پھر مدرسہ سلطانیہ میں داخلہ لے کر علوم متداولہ کی 14 سال میں تکمیل کی علم میں بہت عبور تھا عربی اور فارسی میں ملکہ کامل تھا ۔

بیعت و خلافت[ترمیم]

جب 18 برس کے ہوئے تو خواجہ محمد اسحاق سفید کے حلقہ ارادت میں داخل ہوئے جنہوں نے سلسلہ نقشبندیہ میں بیعت کر کے اسباق و وظائف دیے اور منازل سلوک طے کرا کر خرقہ خلافت عطا کیا اس کے علاوہ شاہ بہاؤالدین نقشبند خواجہ بزرگ سے نسبت اویسی بھی حاصل تھی ان کے علاوہ خواجہ محمد قبادانی سے بھی فیض یاب ہوئے۔

تبلیغی اسفار[ترمیم]

صوفیانہ ذوق کی وجہ سے اکثر سیر و سیاحت میں رہتے تیس سال کی عمر میں شہر وخش جو ختلان کے قریب ہے گئے پھر بلخ سمرقند ہرات قندھار سے ہوتے ہوئے کابل پہنچے جہاں پہلے وعظ میں ہی لوگوں پر وجد کی کیفیات طاری ہوگئیں دوسال کابل میں قیام کیا وادی کشمیر میں تشریف لے گئے جہاں ایک مدرسہ و خانقاہ قائم کیے پھر آگرہ چلے گئے عہد شاہجہاں میں لاہور تشریف لائے ۔

قیام لاہور[ترمیم]

شاہجہاں کے حکم سے حضرت ایشاں مستقل لاہور آ گئے اور جس جگہ آپ کا مقبرہ ہے یہاں ایک باغ اور خانقاہ تعمیر ہو رہی تھی جہاں آپ اقامت گزیں ہوئے قیام لاہور میں حاکم لاہور کا نواب وزیر خان اکثر حاضر ہوتا تھا وہ آپ کا مرید تھا لاہور میں آپ کا قیام 9 سال رہا جہاں انہوں نے درس و تدریس اور علم باطنی کی ترویج کی ۔

معاصرین[ترمیم]

حضرت ایشاں کے معاصرین میں مجدد الف ثانی،شیخ عبد الحق محدث دہلوی شاہ حسین بلاول قادری مفتی عبد السلام شیخ محمد طاہر نقشبندی اور ملا عبد الحکیم سیالکوٹی ہیں ۔

خلفاء کرام[ترمیم]

حضرت ایشاں نے بے شمار لوگوں کو راہ حق پر گامزن کیا 16 خلفاء ہیں جنہیں مختلف علاقوں لوگوں کی رشد وہدایت کے لیے مامور فرمایا ان میں

  • خواجہ خاوند احمد جو آپ کے فرزند تھے
  • خواجہ عبد الرحیم نقشبندی جو خواجہ علاؤ الدین عطار کی اولاد سے تھے
  • خواجہ سید یحییٰ جو شاہ شجاع کرمانی کی اولاد سے تھے
  • خواجہ عبد العزیز وحیدی
  • خواجہ ترسون المعروف خواجہ باقی
  • خواجہ شادمان کابلی
  • خواجہ مرزا ہاشم جو خواجہ دیوانہ بلخی کے بھائی تھے یہ سحبان قلی خان بادشاہ بلخ کے مرشد تھے
  • خواجہ لطیف درخشی
  • خواجہ مرزاابراہیم جو مجدد الف ثانی کے بھائی ہیں
  • خواجہ باندی کشمیری
  • خواجہ حاجی طوسی
  • حاجی ضیاء الدین
  • خواجہ ابو الحسن سمرقندی
  • مولانا پائندہ حارثی
  • خواجہ معین الدین احمد نقشبندی جو آپ کے فرزند تھے[1]

وفات[ترمیم]

حضرت ایشاں کی12 شعبان بروز اتوار 1052ھ بمطابق 1642ء میں عہد شاہجہاں میں وفات ہوئی جب سعید خان بہادر جنگ حاکم لاہور تھا شاہجہاں نے تجہیز و تکفین کے لیے سید جلال الدین صدر الصدور کو بھیجا ۔

مزار مبارک[ترمیم]

ان کا مزار بیگم پورہ میں یتیم خانہ دار الفرقان لاہور پنجاب کے متصل واقع ہے بہت بلند و بالا گنبد میں تین قبریں ہیں پہلی قبر حضرت ایشاں کی دوسری میر جان نقشبندی کی اور تیسری قبر ان کے چھوٹے بھائی سید محمود آغا کی ہے۔[2]

نگار خانہ[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تذکرہ مشائخ نقشبندیہ نور بخش توکلی صفحہ692،مشتاق بک کارنر لاہور
  2. تذکرہ اولیاء پاکستان جلد دوم ،صفحہ 277 تا282،عالم فقری،شبیر برادرز لاہور