حلقہ ہائے مشتری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ایک تصویر جس میں مشتری کے حلقے کا نظام دکھایا گیا ہے

حلقہ ہائے مشتری کئی حلقے ہیں جو سیارے مشتری کے گرد چکر لگاتے ہیں۔ یہ زحل اور یورینس کے گرد پائے جانے والے حلقوں کے بعد نظام شمسی میں پائے جانے والے حلقوں کا تیسرا مجموعہ تھا۔ حلقوں کو زمین سے دیکھنا بہت مشکل ہے، اس کے لیے انتہائی طاقتور دوربینوں کی ضرورت ہے۔[1] 1979 میں وائجر 1 خلائی جہاز نے سیارے کا دورہ کرنے تک انہیں دریافت نہیں کیا گیا۔ [2] گیلیلیو خلائی جہاز نے 1990 کی دہائی میں مزید مطالعات کیا۔[3] ہبل خلائی دوربین اور بڑے زمینی دوربینوں نے حال ہی میں معلومات فراہم کی ہیں۔[4]

حقلے کا نظام بیہوش ہے اور بنیادی طور پر دھول سے بنا ہے۔[2] اس کے چار اہم حصے ہیں: ایک موٹی اندرونی حلقہ جسے "ہالو" حلقہ کہا جاتا ہے، ایک روشن لیکن بہت پتلی "مین" حلقہ، اور دو بیرونی، چوڑی، بیہوش "گوسامر" حلقہ۔ یہ گوسامر حلقے چاندوں امالٹھیہ اور تھیبی کت مٹی سے بنائے گئے ہیں اور ان کے نام پر رکھا گیا ہے۔[5] انہیں گوسامر حلقے کے نام سے جانا جاتا ہے کیونکہ وہ شفاف ہیں، یا "دیکھیے"۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. De Pater، Imke؛ Showalter، Mark R.؛ Burns، Joseph A.؛ Nicholson، Philip D.؛ Liu، Michael C.؛ Hamilton، Douglas P.؛ Graham، James R. (1999). "Keck Infrared Observations of Jupiter's Ring System near Earth's 1997 Ring Plane Crossing" (PDF). Icarus. 138 (2): 214–223. Bibcode:1999Icar..138..214D. doi:10.006/icar.1998.6068. 
  2. ^ ا ب Smith، Bradford A.؛ Soderblom، Laurence A.؛ Johnson، Torrence V.؛ Ingersoll، Andrew P.؛ Stewart، Collins A.؛ Shoemaker، Eugene M.؛ Hunt، G.E.؛ Masursky، Harold؛ Carr، Michael H.؛ Davies، Merton E.؛ Cook، Allan F.؛ Boyce، Joseph؛ Danielson، G. Edward؛ Owen، Tobias؛ Sagan، Carl؛ Beebe، Reta F.؛ Veverka، Joseph؛ Strom، Robert G.؛ McCauley، John F.؛ Morrison، David؛ Briggs، Geoffrey A.؛ Suomi، Verner E. (1979). "The Jupiter System through the Eyes of Voyager 1". Science. 204 (4396): 951–957, 960–972. Bibcode:1979Sci...204..951S. PMID 17800430. doi:10.1126/science.204.4396.951. 
  3. Show alter، Mark R.؛ Burns، Joseph A.؛ Cuzzi، Jeffrey N.؛ Pollack، James B. (1987). "Jupiter's Ring System: New Results on Structure and Particle Properties". Icarus. 69 (3): 458–498. Bibcode:1987Icar...69..4585 تأكد من صحة قيمة |bibcode= value (معاونت). doi:10.1016/0019-1035(87)90018-2. 
  4. Meier، R. (1999). "Near Infrared Photometry of the Jovian Ring and Adrastea". Icarus. 141 (2): 253–262. Bibcode:1999Icar..141..253M. doi:10.1006/icar.1999.6172. 
  5. Esposito، L. W. (2002). "Planetary rings". Reports on Progress in Physics. 65 (12): 1741–1783. Bibcode:2002RPPh...65.1741E. doi:10.1088/0034-4885/65/12/201. 16 جون 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 04 جولا‎ئی 2011.