حمل کے جھٹکے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حمل کے جھٹکے
خصوصیت Obstetrics
علامات Seizures, high blood pressure[1]
پیچیدگی Aspiration pneumonia, دماغی شریان, kidney failure, بندش قلب[1][1]
عمومی حملہ After 20 weeks of pregnancy[1]
خطرہ عنصر Pre-eclampsia[1]
تدارک ایسپرین, calcium supplementation, treatment of prior hypertension[2][3]
علاج Magnesium sulfate, hydralazine, emergency زچگی[1][4]
تشخیض مرض 1% risk of death[1]
تعدد 1.4% of deliveries[5]
اموات 46,900 hypertensive diseases of pregnancy (2015)[6]

حمل کے جھٹکے (eclampsia) ایسی خاتون کو آتے ہیں جو حاملہ ہو اور جسے پہلے سے مرگی نہ ہو۔ ایسی خواتین میں حمل کے ابتدائی 20 ہفتوں میں نہ کوئی علامت ہوتی ہے نہ ہی بلڈ پریشر بڑھا ہوا ہوتا ہے۔ اس کے بعد کسی موقعے پر رفتہ رفتہ یا اچانک بلڈ پریشر بڑھنے لگتا ہے جسے پری ایکلیمسیا (preeclampsia) کہتے ہیں۔[7] اگر علاج نہ ملے یا علاج موثر ثابت نہ ہو تو جسم کے دوسرے اعضاء متاثر ہونے لگتے ہیں مثلاً گردے اور جگر، جس کی وجہ سے علامات ظاہر ہونے لگتی ہیں۔ لیکن یہ بھی ممکن ہے کہ کسی حاملہ خاتون کو بغیر کسی علامت کے اچانک جھٹکے لگنا شروع ہو جائیں۔
جیسے جیسے بچہ جننے کا وقت نزدیک آتا ہے خطرہ بڑھتا چلا جاتا ہے۔ وضع حمل کے بعد جھٹکے لگنے کا خطرہ یکدم بہت کم ہو جاتا ہے مگر شاذ و نادر خواتین میں وضع حمل کے بعد بھی جھٹکے آتے ہیں۔ جھٹکے لگ بھگ ایک منٹ تک آتے رہتے ہیں جس کے بعد خاتون یا تو بےہوش ہو جاتی ہے یا اگر جاگتی رہتی ہے تو کچھ کنفیوز سی ہو جاتی ہے۔
حمل کے جھٹکے جان لیوا ثابت ہو سکتے ہیں۔ اس لیے دوران حمل بار بار بلڈ پریشر چیک کروا لینا چاہیے۔ اگر چار گھنٹے سے زیادہ وقفے پر دو دفعہ چیک کرنے پر بلڈ پریشر 140/90 سے زیادہ ہو تو یہ پری ایکلمسیا کی علامت ہے۔
عام طور پر پیدائش کے وقت بچے کا وزن لگ بھگ 3 کلوگرام ہوتا ہے۔ جن خواتین کا بلڈ پریشر زیادہ رہتا ہے ان کے بچے عموماً کمتر وزن کے ہوتے ہیں۔ حاملہ خاتون کا بہت زیادہ بلڈ پریشر بچے کی جان لے سکتا ہے۔ اس کے برعکس شوگر کی مریضہ کے بچے پیدائش کے وقت زیادہ وزن رکھتے ہیں۔

علاج[ترمیم]

جب تک پہلا جھٹکہ نہ آئے حاملہ خاتون کا علاج آسان ہوتا ہے۔ بلڈ پریشر کم کرنے والی دوائیں (جیسے ایلڈومیٹ، ہائڈرالازین وغیرہ) کے مسلسل استعمال سے بلڈ پریشر نیچے آ جاتا ہے اور جھٹکوں کا خطرہ کم ہو جاتا ہے۔
میگنیشیئم سلفیٹ ایک نمک ہوتا ہے جس کے انجکشن جھٹکوں کو روکنے میں بڑے موثر ہوتے ہیں۔
اگر بار بار جھٹکے آ رہے ہوں یا دیر تک قائم رہیں تو مریضہ کو آئی سی یو میں داخل کر کے مصنوعی سانس دینے والی مشین (وینٹیلیٹر) سے منسلک کر دیا جاتا ہے۔
اگر حمل کی مدت پوری ہو چکی ہے اور خودبخود ڈیلیوری کے امکان نہ ہوں تو جراحی (سیزر) سے بچہ نکال لیا جاتا ہے تاکہ ماں اور بچے کو خطرہ کم ہو جائے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج "Chapter 40: Hypertensive Disorders by Williams Obstetrics, 24e"۔ 2014۔
  2. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ WHO2011 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  3. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ Hend2014 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  4. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ BMC2013 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  5. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ Ab2013 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  6. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ GBD2015De نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  7. Mayo Clinic