Jump to content

"اہل سنت" کے نسخوں کے درمیان فرق

م
درستی املا بمطابق فہرست املا پڑتالگر + ویکائی
م (خودکار: خودکار درستی املا ← سے، سے)
م (درستی املا بمطابق فہرست املا پڑتالگر + ویکائی)
آج اکیسویں صدی کی ابتدا پر مسلمانوں میں تفرقہ بازی کی ابتدا ہوئے قریب قریب 1400 سال سے زیادہ ہو گئے ہیں۔ ۔<ref>Islam's Sunni-Shiite split. [http://www.csmonitor.com/2007/0117/p25s01-wome.html Dan Murphy]</ref> [[632ء]] میں محمد {{درود}} کی وفات سے شروع ہونے والی مسلمانوں کی تفرقہ بازی کی اس داستان کو اگر پیچیدہ تاریخی و معاشرتی وجوہات و واقعات کی طوالت سے صرف نظر کرتے ہوئے مختصر بیان کرنے کی کوشش کی جائے تو یوں کہا جاسکتا ہے کہ مسلمانوں کے درمیان {{جسامتعر|110%|أهل السنة والجماعة}} یعنی سنی اور {{جسامتعر|110%|الشيعة الامامية الاثنا العشرية}} یعنی شیعہ تفرقے کی تشکیل کا آغاز نفسیاتی طور پر، محمد {{درود}} کی وفات کے بعد آپ {{درود}} کے جانشین اور امت کے لیے خلیفہ کا تعین کرنے کے وقت سے ہوچکا تھا۔ اس انتخاب پر جن لوگوں کا خیال تھا کہ چونکہ خود محمد {{درود}} نے کسی جانشین کی جانب اشارہ نہیں کیا اس لیے جو بھی متقی اور کامل مومن ہو وہ خلیفہ بن سکتا ہے، محمد {{درود}} کے ایک ساتھی اور ان کی تعلیمات پر عمل کرنے والے [[ابو بکر]] کے حق میں فیصلہ ہوا اور 632ء تا [[634ء]] کی مدت کے لیے وہ خلیفہ رہے، اسی عمل پیرا ہونے والوں کی نسبت سے اس گروہ یا تفرقے کو اہل السنۃ یا سنی کہا گیا۔ <br>اس وقت کچھ لوگوں کے مطابق حضرت محمد {{درود}} نے اپنے بعد [[علی بن ابی طالب]] کی ولایت کا بار ہا اعلان کیا تھا اور امامت خدا کی طرف سے ودیعت کی جاتی ہے۔ پھر [[عمر]] کا انتخاب بطور خلیفۂ دوم ([[634ء]] تا [[644ء]]) کر لیا گیا اور علی بن ابی طالب کی حمایت کرنے والے افراد کی [[نفسیات]] میں وہ حمایت اور شدت اختیار کر گئی، اگر تفصیل سے تاریخ کا مطالعہ کیا جائے تو یہ وہ عرصہ تھا کہ گو ابھی شیعہ و سنی تفرقے بازی کھل کر تو سامنے نہیں آئی تھی لیکن تیسرے خلیفہ [[عثمان]] کے انتخاب ([[644ء]] تا [[656ء]]) پر بہرحال ایک جماعت اپنی وضع قطع اختیار کر چکی تھی جس کا خیال تھا کہ چونکہ علی بن ابی طالب، محمد {{درود}} کے اصلی جانشین تھے لہذا ان کو ناانصافی کا نشانہ بنایا گیا ہے، اس جماعت سے ہی اس تفرقے نے جنم لیا جسے {{جسامتعر|110%|شيعة علی}} اور مختصرا{{دوزبر}} شیعہ کہا جاتا ہے۔
===خلافت راشدہ کا اختتام===
کوئی ساتویں صدی کے میان سے امت محمدی {{درود}} میں ایک پرتشدد اور افراتفری کا دور شروع ہوا جس کی شدت و تمازت عثمان کی شہادت پر اپنے عروج پر پہنچی؛ اب خلافت راشدہ کا اختتام قریب قریب تھا کہ جب علی بن ابی طالب خلیفہ کے منصب پر آئے ([[656ء]] تا [[661ء]])۔ لوگ فتنۂ مقتل{{زیر}} عثمان پر نالاں تھے اور علی بن ابی طالب پر شدید دباؤ ان کے قاتلوں کی گرفتاری کے لیے ڈال رہے تھے جس میں ناکامی کا ایک خمیازہ امت کو [[656ء]] کے اواخر میں [[جنگ جمل]] کی صورت میں دیکھا نصیب ہوا؛ پھر عائشہ کے حامیوں کی شکست کے بعد [[دمشق]] کے حاکم امیر معاویہ نے علی بن ابی طالب کی بیعت سے انکار اور عثمان کے قصاص کا مطالبہ کر دیا، فیصلے کے لیے میدان جنگ چنا گیا اور [[657ء]] میں [[جنگ صفین]] کا واقعہ ہوا جس میں علی بن ابی طالب کو فتح نہیں ہوئی۔ معاویہ کی حاکمیت [[مصر]]، [[حجاز]] اور [[یمن]] کے علاقوں پر قائم ہو گئی۔ [[661ء]] میں [[عبد الرحمن بن ملجم]] کی تلوار سے حملے میں علی بن ابی طالب شہید ہوئے۔ یہاں سے ،سے، علی بن ابی طالب کے حامیوں اور ابتدائیییی سنی تاریخدانوں کے مطابق، [[حسن ابن علی]] کا عہد شروع ہوا۔
 
== حوالہ جات ==