"عبد اللہ بن مسلم بن عقیل" کے نسخوں کے درمیان فرق

Jump to navigation Jump to search
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
م (خودکار: درستی املا ← عبد اللہ، اور، لیے؛ تزئینی تبدیلیاں)
'''عبد اللہ بن مسلم بن عقیل''' [[واقعہ کربلا|کربلا]] میں شہید ہونے والوں میں سے ایک تھے۔ ان کے والد [[مسلم ابن عقیل]] [[علی بن ابی طالب]] کے بھائی عقیل ابن ابوطالب کے بیٹے تھے یعنی [[حسین ابن علی]] کے چچا زاد بھائی تھے۔
 
کربلا کی جنگ میں شہید ہونے والوں میں سے ایک عبد اللہ بن مسلم بن عقیل اے ، ایک تیر ان کے ماتھے پر لگا جس سے ان کا ہاتھ ماتھے سے پیوست ہو گیا۔ کہا جاتا ہے کہ جب انہیں شہید کیا گیا تو ان کی عمر چودہ سال تھی۔ کہا جاتا ہے کہ وہ عاشورہ کے دن [[محمد|نبی اکرم (ص)]] کے اہل خانہ سے شہید ہونے والے پہلے شخص تھے <ref>[http://www.aqaed.info/ahlulbait/books/mws-ashwra/indexs.html عبد اللہعبداللہ بن مسلم بن عقيل] موسوعة عاشوراء</ref>
 
== نسب ==
والدہ: رقية بنت [[علي بن أبي طالب]]، و
 
أمها الصهباء: أم حبيب بنت عباد بن ربيعة بن يحيى العبد بن علقمة التغلبية. جو کہا جاتا ہے: [[علي بن أبي طالب]] نے اليمامہ کی فتح یا عين التمر کی فتح کے وقت خریدی تھی.<ref>السماوي، إبصار العين في أنصار الحسين (ع)، ص...</ref>
کہا جاتا ہے کہ [[يوم عاشوراء]] سنة 61ھ وقت شہادت آپ کی عمر 26 سال تھی،<ref>محمدي الري شهري، موسوعة الإمام الحسين (ع)، ص160 -161.</ref>
 
ان کے والد مسلم بن عقیل کی عمر کی بنیاد پر ، جن کی عمر وقت شہادت 28 سال بتائی جاتی ہے ، یہ بیان درست نہیں لگتا .<ref>شهيدي، بعد خمسين سنة دراسة حول قيام الإمام الحسين (ع)، ص122.</ref> اس مضمون کی نظرثانی میں ذکر کیا گیا تھا کہ عمر عبد اللہعبداللہ بن مسلم 14 سال کی عمر میں شہید ہوئےہوئے، اور اس کا امکان نہیں ہے۔
 
ایسے مورخین ہیں جنہوں نے [[مسلم بن عقیل]] کے بیٹوں اور بیٹیوں کے بارے میں بات کی ، تاہم ان کی زندگی اور اس کی عمر اور شہادت کے بارے میں بہت سارے اختلافات پائے جاتے ہیں<ref>أبو الفرج الأصفهاني، مقاتل الطالبيين، ص52.</ref>
== كربلاء میں ==
 
[[احمد بن اعثم|ابن أعثم الكوفي]] ،نیز الخوارزمی نے دیکھا کہ دشمنوں سے لڑنے کے لیےلئے الطالبيين (آل ابو طالب) سے سب سے پہلے نکلنے والا عبداللّہ بن مسلم تھا۔<ref name="مع الركب الحسيني، ج4، ص 367">مع الركب الحسيني، ج4، ص 367.</ref>
 
[[ابن شہرآشوب |ابن شهر آشوب]] نے لکھا ہے: «عبدللہ بن مسلم نے تین حملوں میں اٹھانوے دشمن کے سپاہیوں کو قتل کیا ، اور پھر عمرو بن صبیح الصيداوي اور اسد بن مالک نے آپکو شہید کیا۔»۔<ref name="مع الركب الحسيني، ج4، ص 367" />
 
[[بلازری|البلاذري]] کہتا ہے: «عمرو بن صبيح الصيداوي نے عبداللّہ بن مسلم بن عقیل تیر مار کر کو گھوڑے سے نیچے گرایاگرایا، اور لوگوں کو آپ کے قتل کے لیےلئے کہا، ويقال:اور إنکہا رقادکہ الجنبيمیں كاننے يقول:آل رميتالحسين فتىکے منایک آلبچے الحسينکو ويدہتیر علىمار جبهتہکر فأثبتهاگرایا فيها،اور وجعلتتیر أنضنضماتھے سهميپر حتىلگا نزعتہاور مناس جبهتہتیر سے اس کا ہاتھ اس کے ماتھے کے وبقيساتھ النصلپیوت فيهاہوگیا»۔<ref name="مولد تلقائيا1">مع الركب الحسيني، ج4، ص 368.</ref>
 
وقال السماوي: وكانت قتلتہ بعد عليّ بن الحسين، فيما ذكرہ [[أبو مخنف]] والمدايني وأبوالفرج دون غيرهم»۔<ref name="مولد تلقائيا1" />
[[زمرہ:61ھ کی وفیات]]
[[زمرہ:اصحاب امام حسین]]
 
[[زمرہ:مقتولین کربلا]]
8,349

ترامیم

فہرست رہنمائی