"ٹھٹہ" کے نسخوں کے درمیان فرق

Jump to navigation Jump to search
154 بائٹ کا اضافہ ،  3 مہینے پہلے
[[فائل:PK Thatta asv2020-02 img08 Shah Jahan Mosque.jpg|300px|تصغیر|ٹھٹہ میں واقع شاہجہاں مسجد، ٹھٹھہ|شاہجہانی مسجد کا گنبد(اندرونی جانب سے)]]
==وجہ تسمیہ==
[[فائل:Tomb of Nawab Isa Khan Tarkhan Makli Thatta.jpg|300px|تصغیر|مقبرہ نواب عیسیٰ خان ترخان ([[مکلی قبرستان]]، ٹھٹہ)]]
[[فائل:PK Thatta asv2020-02 img09 Makli Necropolis.jpg|300px|تصغیر|[[غازی بیگ ترخان|مرزا غازی بیگ ترخان]] اور جانی بیگ ترخان کا مقبرہ ([[مکلی قبرستان]]، ٹھٹہ)]]
[[فائل:Tomb 1 Thatta.jpg|300px|تصغیر|مقبرہ شہزادہ سلطان ابراہیم بن نواب عیسیٰ خان ترخان ، ([[مکلی قبرستان]]، ٹھٹہ)]]
[[فائل:Interior of Shah Jahan Mosque.JPG|300px|تصغیر|شاہجہانی مسجد، ٹھٹہ کا اندرونی منظر]]
[[فائل:Close to grave in Makli Necropolis.jpg|300px|تصغیر|[[مکلی قبرستان]] میں موجود قبور پر آیاتِ قرانی کندہ ہیں جو فن تعمیر میں اعلیٰ مہارت کا ثبوت ہیں۔]]
[[فائل:Tomb of Sultan Ibrahim 03.jpg|300px|تصغیر|مقبرہ شہزادہ ابراہیم بن عیسیٰ خاں ترخان – ([[مکلی قبرستان]]، ٹھٹہ)]]
[[فائل:View of Makli by Usman Ghani (cropped).jpg|300px|تصغیر|[[مکلی قبرستان]]، ٹھٹہ]]
[[فائل:PK Thatta asv2020-02 img01 Shah Jahan Mosque.jpg|300px|تصغیر|شاہجہانی مسجد، ٹھٹہ کا بیرونی منظر]]
*مزید پڑھیں: '''[[احمد حسن دانی]]'''، '''[[میر علی شیر قانع ٹھٹوی]]'''، '''[[تحفۃ الکرام]]'''، '''[[برطانوی ایسٹ انڈیا کمپنی|برٹش ایسٹ انڈیا کمپنی]]'''، '''[[سندھ]]'''
[[فارسی زبان|فارسی]] اور [[عربی زبان|عربی]] کتب میں اِس شہر کا نام '''تھتہ''' یا '''تتہ''' لکھا ہوا ملتا ہے جو کہ '''البتہ''' کا ہم قافیہ ہے۔ مصنف بستان السیاحۃ نے اِسے ’’البتہ‘‘ کا ہم قافیہ ہی مراد لیا ہے<ref>بستان السیاحۃ، ص 188، اشاعت دؤم</ref>۔ لیکن اِس ہم قافیہ بے معنی لفظ سے ٹھٹہ کی وجہ تسمیہ ناقابل فہم ہے بلکہ مصنف [[تحفۃ الکرام]] کی رائے متذکرہ بالا رائے سے کہیں بہتر ہے ۔ [[سندھ]] کے نامور محقق اور کثیر الجہت شخصیت [[میر علی شیر قانع ٹھٹوی]] نے اپنی تصنیف [[تحفۃ الکرام]](سالِ تصنیف: [[1767ء]]) میں ٹھٹہ کے نام کی وجہ یوں بیان کی ہے کہ: ’’اِس وقت ([[1181ھ]] مطابق [[1767ء]]) ٹھٹے کی وجہ تسمیہ کے بارے میں دو باتیں مشہور ہیں: کچھ کہتے ہیں کہ یہ ’’تہ تہ‘‘ یعنی ’’ نشیبی نشیبی‘‘ کی خصوصیت سے منسوب ہے اور کچھ کا کہنا ہے کہ یہ ’’ٹھٹ‘‘ کے لفظ سے موسوم ہے جو سندھیوں کی اصطلاح میں ’’لوگوں کے جمع ہونے کے مقام‘‘ کے معنی رکھتا ہے۔ مخفی نہ رہے کہ یہ سرزمین جیسا کہ تواریخ سے معلوم ہوتا ہے، قدیم زمانے میں بھی ٹھٹے کے نام سے پکاری جاتی تھی اور چونکہ [[سندھ]] کے بالائی حصہ کو عام لوگ ’’سیرو‘‘ کہتے ہیں اور اِس نشیبی حصہ کو ’’لاڑ‘‘ (یعنی نشیب یا ڈھال) کہا جاتا ہے، اِس لیے (یہی رعایت) ٹھٹے کی وجہ تسمیہ کا ایک کھلا ہوا ثبوت ہے۔<ref> [[میر علی شیر قانع ٹھٹوی]] : [[تحفۃ الکرام]]، 24 واں باب،ص 569</ref> مصنف [[تحفۃ الکرام]] کے بیانِ مذکور سے یہی معلوم ہوتا ہے کہ [[1181ھ]] مطابق [[1767ء]] تک اِس شہر کو ٹھٹہ کے نام سے ہی پکارا جاتا تھا۔ یاد رہے کہ یہ [[سلطنت مغلیہ]] کا عہدِ زوال ہے جبکہ [[ایسٹ انڈیا کمپنی]] [[بنگال]] میں اپنے قدم جماچکی تھی۔

فہرست رہنمائی