خاطر غزنوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خاطر غزنوی
پیدائش مرزا ابراہیم بیگ
25 نومبر 1925(1925-11-25)ء
پشاور، برطانوی ہندوستان
وفات 7 جولائی 2008(2008-07-07)ء
پشاور، پاکستان
قلمی نام خاطر غزنوی
پیشہ مصنف، پروفیسر، نقاد
زبان اردو، ہندکو
نسل پشتون
شہریت Flag of پاکستانپاکستانی
تعلیم ایم اے (اردوپی ایچ ڈی
مادر علمی پشاور یونیورسٹی
اصناف شاعری، افسانہ، ترجمہ، تنقید
نمایاں کام روپ رنگ
خواب در خواب
چٹانیں اور رومان
رزم نامہ
اہم اعزازات صدراتی تمغا برائے حسن کارکردگی

پروفیسر خاطر غزنوی (پیدائش: 25 نومبر، 1925ء - وفات: 7 جولائی، 2008ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو اور ہندکو کے ممتاز شاعر، ادیب، نقاد، پشاور یونیورسٹی کے استاد اور اکادمی ادبیات پاکستان کے سابق ڈائریکٹر جنرل تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

خاطر غزنوی 25 نومبر، 1925ء کو اس وقت کے برطانوی ہندوستان کے شہر پشاور میں پیدا ہوئے۔[1][2] ان کا اصل نام مرزا ابراہیم بیگ اور خاطر تخلص تھا[3]۔ انہوں نے عملی زندگی کا آغاز ریڈیو پاکستان پشاور سے کیا۔ بعد ازاں پشاور یونیورسٹی سے اردو میں ایم اے اور پی ایچ ڈی کیا اور اسی شعبہ میں تدریس کے پیشے سے وابستہ ہوئے۔ اس دوران وہ دو ادبی جرائد سنگ میل اور احساس سے منسلک رہے۔ 1984ء میں انہیں اکادمی ادبیات پاکستان کا ڈائریکٹر جنرل مقرر کیا گیا۔[2]

فن[ترمیم]

خاطرغزنوی جدید اردو اور ہندکو شاعری اور نثر میں ایک منفرد حیثیت کے حامل تھے۔ ان کی شاعری میں انسان بولتا ہے، وقت اپنی راگنی سناتا ہے، ماحول اپنے نغمے الاپتا ہے۔ جدید دور کی زندگی میں جو کچھ ہے، جو کچھ ہو سکتا ہے یا جو کچھ ہونا چاہیے، اس کی ان گنت تصویریں خاطر کی شاعری میں نمایاں ہو کر مجموعی طور پر اس کو نئی زندگی کا مرقع بلکہ نگار خانہ بناتی ہیں اور یہی ان کی شاعری کی نمایاں ترین خصوصیت ہے۔ ان مشہور غزل ملاحظہ ہو:[1]

گو ذرا سی بات پہ برسوں کے یارانے گئےلیکن اتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے
میں اِسے شہرت کہوں یا اپنی رُسوائی کہوںمجھ سے پہلے اُس گلی میں، میرے افسانے گئے
یوں تو وہ، میری رگِ جاں سے بھی تھے نزدیک تر آنسوؤں کی دُھند میں، لیکن نہ پہچانے گئے
وحشتیں کچھ اس طرح اپنا مقدر ہو گئیں ہم جہاں پہنچے، ہمارے ساتھ ویرانے گئے
اب بھی ان یادوں کی خوشبو ذہن میں محفوظ ہے بارہا ہم جن سے گلزاروں کو مہکانے گئے
کیا قیامت ہے کہ خاطر کشتۂ شب بھی تھے ہم صبح بھی آئی تو مجرم ہم ہی گردانے گئے

تصانیف[ترمیم]

شاعری[ترمیم]

  • روپ رنگ
  • خواب درخواب
  • شام کی چھتری
  • کونجاں

نثر[ترمیم]

  • اُردو زبان کا مآخذ ہندکو
  • زندگی کے لیے پھول
  • پھول اور پتھر
  • چٹانیں اور رومان
  • رزم نامہ
  • سرحد کے رومان
  • پشتو متلونہ
  • دستار نامہ
  • پٹھان اور جذباتِ لطیف
  • خوشحال نامہ
  • چین نامہ
  • اصناف ادب
  • ایک کمرہ
  • جدید اُردو ادب

اعزازات[ترمیم]

حکومت پاکستان نے خاطر غزنوی کی ادبی خدمات کے اعتراف کے طور پر صدراتی تمغا برائے حسن کارکردگی عطا کیا۔[2]

وفات[ترمیم]

خاطر غزنوی 7 جولائی، 2008ء کو پشاور، پاکستان میں وفات پاگئے اور قبرستان رحمٰن بابا پشاور میں آسودۂ خاک ہوئے۔[1][2][3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ خاطر غزنوی، پاکستانی کنیکشنز، برمنگھم برطانیہ
  2. ^ ا ب پ ت ص 1011، پاکستان کرونیکل، عقیل عباس جعفری، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء
  3. ^ ا ب ریختہ ویب، بھارت