خانان قاراخانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

قراخانیان (قراخانی خانات) یا آل افراسیاب جسے ایلک خانیان (ایلک خانات) کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ ایک ترک حکومت تھی جس نے 840ء سے 1211ء تک وسطی ایشیا پر راج کیا۔ قراخانیان اور ایلیک خانیان خاقان کا شاہی لقب اختیار کرتے تھے جو خاندان کے خاتمے تک ترکوں کا سب سے اہم لقب تھا۔

قراخانی ریاست بمطابق 1000ء

خانات نے وسطی ایشیا میں ما وراء النہرپر فتح حاصل کی اور 999–1211 کے درمیان حکمرانی کی۔ ان کی ما وراء النہر آمد نے وسطی ایشیاء میں [ایرانی]] سے ترک ہونے کی ایک اہم تبدیلی کا اشارہ دیا ، پھر بھی قراخانیوں نے اپنی مقامی ترک ثقافت کو برقرار رکھتے ہوئے آہستہ آہستہ فارس-عرب مسلم ثقافت کو تسلیم کرلیا۔

قراخانی خانات کے دارالحکومتوں میں کاشغر ، بلاساغون ، اؤزگن اور سمرقند شامل تھے۔ 1040 کی دہائی میں ، خانات مشرقی اور مغربی خانات میں تقسیم ہوگیۓ۔ گیارہویں صدی کے آخر میں ، وہ سلجوقیوں کے زیر اقتدار آئے ، اس کے بعد بارہویں صدی کے وسط میں قراختانوں نے بھی حملہ کیا۔ مشرقی خانات کا خاتمہ قراختانوں نے 1211 میں کیا۔ مغربی خانات کو خوارزمشاہی خاندان نے 1213 میں ختم کردیا۔

نام[ترمیم]

قراخانات کی اصطلاح قارا خان یا قارا خاقان۔ (قارا خان کے لفظ "کارا" کے معنی ہیں "سیاہ" اور پرانے ترکی میں "بہادر" بھی ہیں اور خان کا مطلب حکمران ہے)۔ خاقان اس خاندان کے حکمرانوں کا اولین لقب تھا ، اور اسے 19 ویں صدی میں یورپی مستشرقین نے اس خاندان اور اس کے زیر اقتدار ترکوں کو بیان کرنے کے لئے وضع کیا تھا۔

عربی مسلم ذرائع نے اس خاندان کو الخقانیہ ("وہ خاقان") یا الملوک الخانیا العترک (ترکوں کے خانال بادشاہ) کہا۔

فارسی ذرائع نے اکثر ال افراسیاب کی اصطلاح استعمال کی تھی لیکن اس سے قبل اسلام سے پہلے ما وراء النہر کے غیر متعلق بادشاہ افراسیاب کی ایک کڑی تعلق تھی۔ انہیں فارسی میں ایلک خانیان بھی کہا جاتا ہے۔ چینی ماخذ اس خاندان کو کلاہان یا ہیہان (لفظی طور پر "بلیک خان") یا دشی (عربوں کے لئے ایک اصطلاح ہے جو عام طور پر مسلمانوں تک پھیلا ہوا ہے) کے طور پر اشارہ کرتے ہیں۔

تاریخ[ترمیم]

ابتدائی تاریخ[ترمیم]

پہلی اویغور سلطنت سے تسلسل اور قاراخوجہ سے قرابت داری کے علاوہ قاراخانی افسانوی افراسیاب شاہی سلسلہ یا خاندان کی نسل ہونے کے بھی دعوے دار تھے۔ عمودی لکھے جانے والا اویغور رسم الخط تیموریوں کے وقت سے مغربی ترکستان میں مسلمان ترکوں کے درمیان خاصہ استعمال ہونے لگا تھا اس کے ساتھ ساتھ مشرقی ترکستان کے کچھ حصوں میں مانچو دور حکومت میں مروج ہو گیا تھا۔

قاراخانی اور قاراخیتان ریاستوں کے خانہ بدوش عناصر نے جدید قپچاق ترک بولنے والی قازق، کرغز اور تاتار ثقافتوں کی بنیاد رکھی۔ قاراخانی تہذیب کے کچھ اسلامی اور ایرانی اثرات آج بھی تاجک، ازبک، افغان، ہوئی اور اویغور لوگوں میں پائے جاتے ہیں، جن میں سے دو چغتائی ترک زبان بولنے والے ہیں۔

ابتدائی ہجرتیں[ترمیم]

اویغوروں کی ایک شاخ دریائے گانسو اور تارم دریا کے طاس کے نخلستانوں کو ہچرت کر گئی، جس نے گاؤچانگ (خوجا) اور ہامی (کومول) اور بدھ ریاستوں کا ایک قاراخوجہ نام کا وفاق تشکیل دیا۔ دوسروں نے تارم دریا کے مغربی طاس، وادی فرغانہ، جنگاریا اور قازقستان کی مسلم سلطنت خوارزم کے سرحدی حصوں پر قبضہ کر لیا۔ وہ 10 ویں صدی عیسوی تک مسلمان ہو گئے اور ان ہی میں سے ابھرنے والے شاہی خاندان کو تاریخ میں قاراخانی کہا گیا ہے۔

999ء میں ہارون (یا حسن) بغرا خان نے، جو اویغور کارلوک اتحاد کے سردار کا پوتا تھا، سامانی سلطنت کے دار الحکومت بخارا پر قبضہ کر لیا۔ سامانی سلطنت کے علاقے خراسان اور افغانستان، سلطنت غزنویہ اور ماورا النہر قاراخانیوں کے قبضے میں چلے گئے، اس طرح آمو دریا دونوں حریف سلطنتوں کے درمیان سرحد بن گیا۔ اس دورانیے میں قاراخانیوں نے اسلام قبول کر لیا۔

11 ویں صدی عیسوی کے شروع میں قاراخانیوں کا اتحاد اندرونی خانہ جنگیوں کی وجہ سے ٹوٹ گیا۔ 1041ء میں محمد عین الدولہ ( دور حکومت: 52-1041ء) نے سلطنت کے مغربی علاقوں کی حکومت سنبھالی، جس کا مرکز بخارا تھا۔ 11 ویں صدی کے آخر میں ایران میں سلجوقوں کے عروج سے قاراخانی سلجوقوں کے باجگذار بن گئے۔ بعد میں انہوں نے شمال میں خانان قاراختان اور جنوب میں سلجوقوں کے اقتدار کے آگے سر جھکایا۔

سلجوقوں کے زوال کے بعد 1140ء میں قاراخانی، شمالی چین میں حریف ترک قاراختائی اتحاد کے اقتدار کے نیچے آ گئے۔ عثمان (دور حکومت:11-1204ء) نے تھوڑی مدت کے لیے خاندان کی آزاد حکومت کو بحال کیا، لیکن 1211ء میں قاراخانیوں کو محمد علاؤ الدین خوارزم شاہ نے شکست دی اور اس قاراخانی سلسلہ شاہی کا خاتمہ ہو گیا۔

مشہور قاراخانی حکمران[ترمیم]

تاریخی اہمیت کے حامل قارا خانی حکمرانوں میں کاشغر کا محمود تامگاچ شامل ہے۔

اس کے علاوہ قارا خانی فوج کے کئی فوجی کمانڈر شہرت کے حامل ہوئے جن میں عثمان خوارزمی نے 1244ء میں مصر کے مملوکوں کی دعوت پر، اپنی فوج بیت المقدس بھیجی اور مسلمانوں کی کی طرف سے اس مقدس شہر کو صلیبیوں سے آزاد کروایا۔

قارا خیتانی حملہ[ترمیم]

زوال[ترمیم]