خاندیشی زبان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خاندیشی
آہیرانی
Ahirani
Khandeshi
खान्देशी / अहिराणी
مقامی مہاراشٹر، بھارت
علاقہخاندیش
مقامی متکلمین
1.86 ملین (2011 مردم شماری)[1]
زبان رموز
آیزو 639-3کوئی ایک:
khn – Khandeshi
ahr – Ahirani (duplicate code)
گلوٹولاگkhan1272[3]
India Khandesh locator map.svg
بھارت میں خاندیش خطے کا مقام
MaharashtraKhandesh.png
مہاراشٹر میں خاندیش خطے کا مقام

خاندیشی ہندوستان کی ریاست مہاراشٹر میں ایک ہند آریائی زبان ہے۔ یہ خاندیش خطے میں بولی جاتی ہے ،جوبھیلی اور مراٹھی کے علاقے کے درمیان منسلک ہے ۔ یہ خاندیشی مناسب اور ڈانگری اور آہیرانی بولیوں پر مشتمل ہے۔[4] "آہیرانی" اور "خاندیشی" کے الفاظ کبھی کبھی ایک دوسرے کے ساتھ بدلاؤ سے استعمال ہوتے ہیں: آہیرانی ذات پر مبنی نام کے طور پر ( آہیرسسے) اور خاندیش خطے میں مبنی نام کے طور پر۔

اشتقاقیات[ترمیم]

خاندیشی کا نام خاندیش خطےکےنام پر رکھا گیا ہے۔خاندیشلفظ کی ابتدا کے بارے میں مختلف نظریات موجود ہیں۔ ایک نظریہ میں کہا گیا ہے کہ یہ نام " خان" (ایک لقب مغل نائبین کے ذریعہ استعمال ہونے والا ) اور "دیش" (ملک) سے ماخوذ ہے۔ایک اور نظریہ سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ نام "کانہا" اور "دیش" کے الفاظ سے اخذ کیا گیا ہے۔ "کانہا" کرشن کا ایک نام ہے، اس علاقے کے آہیر لوگوں کے ذریعہ پوجا جانے والا بنیادی دیوتا۔ دوسرے نظریات سے لفظ "خان" کی مختلف ابتدا سے پتہ چلتا ہے، جس میں "کانبائی" (علاقائی مؤنث دیوی)، " کہان " (گھاس یاخشک گھاس) اور "خان" ("تالاب" ، جیسا کہ واغر دریا کے تالاب ) شامل ہیں۔ ڈاکٹر رمیش سوریاونشی کی کتاب آہیرانی بولی میں خاندیش لفظ کے مختلف اشتقاقیات کا ایک تفصیلی مطالعہ سامنے آیا ہے۔

بولیاں(طرز بیان)[ترمیم]

آہیرانی ، خاندیشی کی ایک اہم زبان ہے۔ یہ اصل میں خاندیش خطے میں رہنے والے آہیرس (رزمی مویشیوں کے چرواہے) کے ذریعہ بولا گٔٔءی تھی۔ اس کو مزید علاقہ پر مبنی ذیلی بولیوں جیسے چالیس گاؤں ، دھولیہ ، مالیگاؤں اور دھولے گروپ میں تقسیم کیا گیا ہے۔ اآہیرانی بولی جاتی ہے جلگاؤں (بھوساوال، جمنر، بودواد اور مکتی نگرکے علاوہ) نندوربار، دھولیہ ۔ خاندیش کے باہریہ ناسک کے کچھ علاقوں (باگلان ، مالیگاؤں اور کالون تحصیل) اور اورنگ آباد میں بولی جاتی ہے۔ تحصیلدھرن گاؤں، چوپڑا امل نیر ، ساکری ، سندکھیڑا ،ڈونڈائچا-ورواڑے ، شرپور ، تلودے ، شہادا، مہاراشٹر ، دھادگاؤں ،اکل کوا ، نواپور ، رویر، مہاراشٹر ، پرولا، مہاراشٹر ، ایراندول ، ستنا، بھارت ، مالیگاؤں ، بگلان تعلقہ کے لوگ بھی آہیرانی بولتے ہیں۔ ہمسایہ ریاست گجرات میں ، یہ سورت اور ویارا میں بولی جاتی ہے اور مدھیہ پردیش میں ، امبہ ورلا کے گردونواح میں آہیرانی بولی جاتی ہے۔ ڈاکٹر رمیش سوریاونشی کی تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ ملگھاٹ ٹائیگر ریزرو جنگلات کے آس پاس ، امراوتی ضلع کی تحصیل دھرنی میں بھی آہیرانی زبان بولی جاتی ہے۔ لیکن یہ وہاں گوالی بولی کے نام سے جانی جاتی ہے۔ 40 دیہات میں 30 سے 35 ہزار کے لگ بھگ لوگ گوالی بولی بولتے ہیں۔

ہندوستان کی 1971 کی مردم شماری کےمطابق ،آہیرانی کو مادری زبان قرار دینے والے لوگوں کی تعداد 363،780 تھی۔ڈھولیا ، جلگاؤں اور ناندوربراضلاع کی آبادی اور اورنگ آباد اورضلع ناسک کی آہیرانی بولنے والی تحصیل کی2011 کی آبادی کاتخمینہ 1کروڑ تھا۔

اس خطے میں غیر آہیر (جیسے لیوا ، وانی ، بھیل اور پردیشی ذاتوں) آہیروں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے اپنی بولی کے ساتھ ملا کر آہیرانی کی مختلف صورتیں بولنے لگے،جس کی وجہ سے زبان کی دوسری بولیاں پیدا ہوئیں۔چاندواڑی کو چاندواڑ کی پہاڑیوں کے گرد بولا جاتا ہے ، نندوبری نندوربار کے گرد بولی جاتی ہے ، جامنیرئر توادی تحصیل جامنر کے آس پاس بولی جاتی ہے ، تپتنگی ، تپی،تپتی دریاکے کنارے بولی جاتی ہے۔ ڈونگارنگی اجنتا جنگل کی پہاڑیوں کے اطراف میں بولی جاتی ہے۔ یہ سب خاندیشی کے ذیلی بولیوں کے خطے پر مبنی نام ہیں۔ آہیرانی ، گوجر ، بھیلاؤ ، مہاراو ، لیوا اور پوربھی یہ سب خاندیشی کے سماجی (ذات پات پر مبنی) زمرے ہیں۔ متعدد ذاتیں گھر پر اپنی الگ بولی بولتی ہیں لیکن اپنی برادریوں سے باہر روزمرہ مواصلات کے لیے خاندیشی کا استعمال کرتے ہیں۔

ادب[ترمیم]

دیہی زبان ہونے کی وجہ سے، آہیرانی نے زیادہ ادب پیدا نہیں کیاہے۔ بہینہ بائی چودھری (1880–1951) خاندیش کی ایک مشہور شاعرہ ہیں اور ان کے ادب کا مطالعہ مراٹھی زبان کے ماخذوں میں شامل ہے اور مطالعہ کیا جاتا ہے۔ان کی نظموں کی زبان آہیرانی سے مختلف ہے، لیکن آہیرانی سے متاثر ہے۔کچھ کہتے ہیں کہ شاعرہ آہیرانی نہیں، بلکہ لیوا (خاندیشی کی ایک بولی) ہے۔

لسانی تحقیق[ترمیم]

ڈاکٹر رمیش سیتارام سوریاونشی نے آہیرانی پر مندرجہ ذیل کام آہیرانی میں تحریرکیاہے:

  • آہیرانی بھاشا ویدنینک ابھیاسہ (1997) ، ایک لسانی مطالعہ ، جو الفاظ کے گرائمر تشکیل اور آہیرانی میں جملے کی تشکیل کی وضاحت کرتا ہے۔ اکشایا پراکاشن ، پونے
  • آہیرانی - شبدکوش (1997) ، آہیرانی بولی کی پہلی لغت ، جس میں لگ بھگ 10000 الفاظ لکھے گئے ہیں۔ اکشایا پراکاشن ، پونے
  • آہیرانی مہانی انی واق پراچار (1997)
  • آہیرانی بولی میں ایک ہزار اقوال اور چار ہزار محاورے ، ان کے معانی کی مثال کے ساتھ۔ اکشایا پراکاشن ، پونے
  • خندیشاتل کرشک جیون سچترا کوشا (2002) ،خاندیش میں کسانوں کے استعمال کردہ الفاظ کی ایک لفظی لغت۔ اس کتاب میں کسانوں کے ذریعہ استعمال ہونے والے اوزاروں کی تصاویر ہیں ، جن میں تمام اوزار اورحصوں پر آہیرانی بولی میں مقامی ناموں کا لیبل لگا ہوا ہے۔ مہاراشٹرا ریاستی حکومت کے ساہتیہ انی سنسکرتی منڈل ،ممبئی کے ذریعہ شائع کیا گیا۔
  • خاندیشاتل مہانی (2010) آئی ایس بی این 978-81-920256-2-9 ، ابھیاسیکا ، کناڈ۔ ڈسٹرکٹ اورنگ آباد جون۔2010 صفحات 224
  • بولی آنی پرامان بھاشا (2010) خاندیشی میں۔ آئی ایس بی این 978-81-920256-0-5 آئی ایس بی این   978-81-920256-0-5 ، ابھیاسیکا ، کناڈ۔ ڈسٹرکٹ اورنگ آباد (ماہ) 431103
  • خاندیشی میں لوک ساہتیا آنی ابھیاس ویشے (2010)۔ آئی ایس بی این 978-81-920256-1-2 آئی ایس بی این   978-81-920256-1-2 ، ابھیاسیکا ، کناڈ۔ ڈسٹرکٹ اورنگ آباد (ماہ) 431103
  • آدیواسی ٹھاکر ڈاٹ کام (2016) صفحات 248 ، آئی ایس بی این 978-81-920256-7-4 ، ابھیاسیکا ، کناڈ، ضلع۔ اورنگ آباد (ماہ) 431103

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Statement 1: Abstract of speakers' strength of languages and mother tongues – 2011". www.censusindia.gov.in. Office of the Registrar General & Census Commissioner, India. اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2018. 
  2. Ernst Kausen, 2006. Die Klassifikation der indogermanischen Sprachen (Microsoft Word، 133 KB)
  3. ہیمر اسٹورم، ہرالڈ؛ فورکل، رابرٹ؛ ہاسپلمتھ، مارٹن، ویکی نویس (2017ء). "Khandesi". گلوٹولاگ 3.0. یئنا، جرمنی: میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ فار دی سائنس آف ہیومین ہسٹری. 
  4. Robert Vane Russell (1916). pt. II. Descriptive articles on the principal castes and tribes of the Central Provinces. Macmillan and Company, limited. صفحات 19–.