خدا بخش خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مولوی خدابخش خان
Maulvi Khuda Bakhsh.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 2 اگست 1842(1842-08-02)
چھاپرا،  وحیدرآباد، دکن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 3 اگست 1908(1908-80-03) (عمر  66 سال)
جککسونویل، فلوریڈا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی پیرس یونیورسٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ وکیل

مولوی خدابخش خان پٹنہ کے مشہور خدا بخش اورئینٹل پبلک لائبریری کے بانی تھے جسے استنبول عوامی کتب خانہ (ترکی) کے بعد دنیا کے دوسرے سب سے بڑے کتب خانے کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ آج یہ قومی اہمیت کے ادارے کے طور پر مان لیا گیا ہے کیونکہ 1969ء میں بھارت کے پارلیمنٹ کے ایک ایکٹ کی رو سے اس کتب خانے کی نگرانی حکومت اپنے ہاتھ میں لے چکی ہے۔ یہاں پر اردو، فارسی اور عربی کے ہزاروں دستاویزات موجود ہیں۔[1]

مختصر حالات زندگی[ترمیم]

خدابخش کی پیدائش 2 اگست 1842ء کو سیوان کے قریب "اُكھائی" گاؤں میں ہوئی تھی۔ ان کے آباواجداد مغل بادشاہ اورنگزیب عالمگیر کی خدمت میں تھے۔ ان کے والد پٹنہ میں ایک مشہور وکیل تھے، لیکن وہ کمائی کا بڑا حصہ کتابیں خریدنے میں لگاتے تھے۔ انہوں نے ہی پٹنہ میں خدابخش کولایا تھا۔ خدابخش نے 1859ء میں پٹنہ ہائی اسکول سے بہت اچھے نشانات کے ساتھ میٹرک پاس کیا تھا۔ ان کے والد نے انہیں اعلی تعلیم کے لیے کولکتہ بھیج دیا، لیکن وہ نئے ماحول میں خود کو ہم آہنگ نہیں کر سکے اور وہ اکثر صحت کے مسائل سے پریشان رہے، بعد میں انہوں نے 1868ء میں اپنی قانون کی تعلیم مکمل کی اور پٹنہ میں پریکٹس شروع کر دیا، کم وقت میں ہی وہ ایک مشہور وکیل بن گئے۔

والد کا انتقال اور وصیت[ترمیم]

1876 ​ء میں خدابخش کے والد کا انتقال ہو گیا۔ مگر والد نے وصیت کی کہ ان کا بیٹا ان کے گراں قدر مجموعے میں شامل 1700 کے آس پاس کتابوں کو بڑھائے اور اسے ایک عوامی کتب خانہ کی شکل دینے کی کوشش کرے۔

اعزازات[ترمیم]

1877ء میں خدابخش پٹنہ میونسپل کارپوریشن کے نائب صدر بن گئے۔ انہیں 1891ء میں خان بہادر کے خطاب سے نوازا گیا۔ تعلیم اور ادب کے میدان میں ان کی شراکت کے لیے 1903ء میں انہیں اس وقت "سي آئ بی" کے خطاب کے ساتھ نوازا گیا۔

خدابخش کتب خانہ اور اس کا افتتاح[ترمیم]

خدابخش کتب خانے کا افتتاح 1891ء میں بنگال کے نائب گورنر سر چارلس ایلیٹ نے کیا۔ اس وقت اس لائبریری میں تقریباً 4000 قلمی مخطوطات تھے۔

حیدرآباد کے نظام کی ملازمت[ترمیم]

1895ء میں وہ ریاست حیدرآباد کے نظام کے ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کے طور پر مقرر ہوئے۔ تین سال کے لیے یہاں رہنے کے بعد وہ پھر پٹنہ لوٹ آئے اور پٹنہ میں وکالت شروع کر دی، لیکن جلد ہی وہ فالج سے متاثر ہو گئے اور انہوں نے صرف کتب خانے تک ہی اپنی سرگرمیوں کو محدود کر دیا۔ 3 اگست 1908 کو ان کا انتقال ہو گیا۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]