خضر نوشاہی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خضر نوشاہی
معلومات شخصیت
پیدائش 30 مارچ 1952 (68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ضلع شیخوپورہ،  پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعۂ ہمدرد  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد پی ایچ ڈی  ویکی ڈیٹا پر (P512) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ محقق،  شاعر،  مصنف،  صوفی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو،  فارسی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل مخطوطات،  ترجمہ  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت بیت الحکمہ،  اقبال اکادمی پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

خضر حیات عباسی نوشاہی المعروف ڈاکٹر خضر نوشاہی پاکستان کے ممتاز محقق، ادیب، شاعر اور سلسلہ نوشاہیہ کے صوفی ہیں۔ وہ فارسی اور عربی مخطوطات کے ماہر مانے جاتے ہیں۔

حالات زندگی[ترمیم]

خضر نوشاہی 30 مارچ 1952ء کو چنبھل، ضلع شیخوپورہ، پاکستان میں عبد الکریم عباسی نوشاہی کے گھر پیدا ہوئے۔ ان کے والد خانوادہ نوشاہیہ کے ممتاز صوفی اور پنجابی زبان کے شاعر تھے۔ خضر نوشاہی نے ہائی اسکول اجنیانوالہ سے 1969ء میں میٹرک کا امتحان پاس کیا۔ اسی دوران والد کی وفات کی وجہ سے تعلیم کا سلسلہ منقطع کرنا پڑا اور سجادہ نشینی کی ذمہ داریاں سنبھالیں۔ اپنی کوششوں سے نجی حیثیت سے امتحانات پاس کیے اور بعد ازاں ہمدرد یونیورسٹی کراچی سے پی ایچ ڈی کی سند حاصل کی۔ ہمدرد یونیورسٹی کی بیت الحکمہ لائبریری میں شعبہ مخطوطات کے انچارج رہے۔ مرکزِ تحقیقاتِ فارسی ایران و پاکستان اسلام آباد اور اقبال اکادمی پاکستان سے بطور محقق وابستہ رہے۔ ان کی کتب میں فہرست نسخہ ہائے خطی فارسی کتب خانہ ہمدرد کراچی، فہرست ہائے خطی فارسی کتاب خانہ دکتر نبی بخش بلوچ، گنجینہ آذر (فہرست مخطوطات ذخیرہ پروفیسر سراج الدین آذر، پنجاب یونیورسٹی لائبریری لاہور)، گنجینہ شوق (فہرست مخطوطاتِ فارسی ذخیرہ پروفیسر ڈاکٹر نواز علی شوق، کراچی یونیورسٹی لائبریری)، فہرست مخطوطات عربی و فارسی جھنڈیر لائبریری، اردو ترجمہ لطائفِ اشرفی (از اشرف جہانگیر سمنانی)، اردو ترجمہ تاریخ بلوچی (از عبد المجید جوکھیہ)، اردو ترجمہ مثنوی گوہر منظوم، ترتیب جمع الجواہر از پیر محمد راشد روضہ دھنی، ترتیب دیوان میاں محمد سرفراز خان کلہوڑو، مکاتیب راشدی بنام ڈاکٹر محمد باقر، ترجمہ معیارِ سالکانِ طریقت (از میر علی شیر قانع ٹھٹوی: مقالہ پی ایچ ڈی) شامل ہیں۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ڈاکٹر محمد منیر احمد سلیچ،ادبی مشاہیر کے خطوط، قلم فاؤنڈیشن انٹرنیشنل لاہور، 2019ء، ص 117