مندرجات کا رخ کریں

خلف بن ہشام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
محدث
خلف بن ہشام
معلومات شخصیت
تاریخ وفات سنہ 844ء   ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات طبعی موت
رہائش کوفہ
شہریت خلافت عباسیہ
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
عملی زندگی
ابن حجر کی رائے ثقہ
ذہبی کی رائے ثقہ
نمایاں شاگرد ابو حاتم رازی ، ابو زرعہ رازی ، ابویعلیٰ موصلی ، ابو قاسم بغوی
پیشہ محدث
شعبۂ عمل روایت حدیث

خلف بن ہشام یہ صرف خلف کے نام سے پہچانے جاتے ہیں پورا نام خلف بن ہشام بن ثعلب ابو محمد البزار البغدادی ولادت 150ھ (وفات 229ھ) کوفی۔ یہ قراء عشرہ میں شامل ہیں آپ نے سلیم بن عیسیٰ الزیات سے استفادہ کیا تھا۔ اسحاق الوراق اور ادریس بن عبدالکریم ان کے راوی ہیں۔ ان کی وفات بغداد میں ہوئی۔[1]

نام و نسب[ترمیم]

خلف بن ہشام خلف بن ہشام بن ثلب بن خلف بن ثلاب بن ہشام بن ثعلب بن داؤد بن مقاسم بن غالب الاسدی البغدادی البزار ہے اور ان کی کنیت ابو محمد ہے وہ سنہ 150 ہجری میں پیدا ہوئے۔ .[2]

روایت حدیث[ترمیم]

احمد بن یزید حلوانی، سلمہ بن عاصم، محمد بن جہم سمری، احمد بن ابی خیثمہ، محمد بن یحییٰ کساعی، احمد بن ابراہیم الوراق، ادریس حداد اور دیگر۔ ان سے روایت ہے: مسلم نے اپنی صحیح میں، ابوداؤد نے اپنی سنن میں، ابو زرعہ رازی، ابو حاتم رازی، موسیٰ بن ہارون، ابو یعلی موصلی، ابو قاسم بغوی، محمد بن ابراہیم بن ابان۔ السراج، اس کا بیٹا محمد بن خلف، اور بہت سے دوسرے۔ [3]

جراح اور تعدیل[ترمیم]

امام یحییٰ بن معین، امام نسائی وغیرہ نے کہا: ثقہ ہے ۔ دارقطنی نے کہا: وہ نیک عبادت گزار ، ثقہ تھے۔حافظ ذہبی نے کہا ثقہ ہے ۔ ابن حجر عسقلانی نے ثقہ ہے۔

وفات[ترمیم]

آپ نے 239ھ میں کوفہ میں وفات پائی ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. النشر فی القراءات العشر ،مؤلف :شمس الدين ابو الخير ابن الجزری
  2. الخطيب البغدادي۔ تاريخ بغداد۔ الثامن۔ دار الكتب العلمية۔ صفحہ: 322 
  3. سیر اعلام النبلاء ، حافظ شمس الدین ذہبی