مندرجات کا رخ کریں

خلیج فارس کا سیلاب، 2024ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
خلیج فارس کا سیلاب 2024
منامہ، بحرین میں سیلاب
دورانیہاپریل 14 - تاحال
اموات33 کل
19
4
1
نقصاناتنامعلوم
متاثرہ علاقے
متحدہ عرب امارات، عمان، ایران، بحرین، قطر، سعودی عرب

اپریل 2024ء میں، کچھ خلیجی ممالک میں شدید بارش ہوئی، جس کی وجہ سے پورے خطے میں اچانک سیلاب آگیا۔ کئی ریاستوں میں ایک دن میں تقریباً ایک سال کی بارش ریکارڈ کی گئی۔ سیلاب کا پورے خطے میں خاصا اثر ہوا، عمان اور متحدہ عرب امارات خاص طور پر متاثر ہوئے، کم از کم 33 افراد ہلاک ہوئے، جن میں سے 19 عمان میں ہلاک ہوئے تھے۔[1] بحرین، قطر اور سعودی عرب کے مشرقی صوبے سمیت دیگر خلیجی ریاستوں نے بھی شدید بارشوں اور اس کے نتیجے میں سیلاب کا سامنا کیا۔

اثرات[ترمیم]

منامہ، بحرین میں سیلاب

عمان[ترمیم]

عمان میں حکام نے بتایا کہ سیلاب سے کم از کم 19 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔[2] اس میں کم از کم 10 اسکول کے بچے اور ان کا ڈرائیور شامل تھا جس کی گاڑی 14 اپریل کو صمد اشان میں سیلاب کے پانی میں بہہ گئی تھی۔[3][4] سب سے زیادہ متاثرہ علاقہ اش شرقیہ شمالی گورنری تھا جہاں بڑے پیمانے پر سیلاب کی اطلاع ملی ہے۔ مسقط انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے کچھ پروازیں منسوخ یا تاخیر کا شکار ہوئیں۔

متحدہ عرب امارات[ترمیم]

متحدہ عرب امارات میں ریکارڈ توڑ بارش ہوئی۔ جو گذشتہ 24 گھنٹوں میں اب تک کی سب سے زیادہ بارش ہے، جو 1949ء میں ڈیٹا اکٹھا کرنے کے آغاز کے بعد سے درج کردہ کسی بھی چیز کو پیچھے چھوڑ گئی ہے۔ نیشنل سینٹر آف میٹرولوجی کے مطابق سب سے زیادہ بارش العین کے علاقے خطم الشکلہ میں ریکارڈ کی گئی جو 24 گھنٹے سے بھی کم وقت میں 254 ملی میٹر تک پہنچ گئی۔[5] تمام سات امارات میں بڑے پیمانے پر سیلاب کی اطلاع ملی ہے۔ سیلاب سے پہلے، متحدہ عرب امارات کے کچھ حصوں میں 40 ملی میٹر (1.6 انچ)، 100 ملی میٹر (3.9 انچ) تک کی بارش کا تخمینہ لگایا گیا تھا۔

متحدہ عرب امارات کا ایک شہری راس الخیمہ کی ایک وادی میں سیلاب سے اپنی کار بہہ جانے سے ہلاک ہو گیا۔[6] تین سمندر پار فلپائنی کارکن بھی ہلاک ہوئے، دو سیلاب میں پھنسی گاڑی کے اندر پھنس جانے کے بعد اور تیسرا سیلاب کی وجہ سے ہونے والے ایک گاڑی کے حادثے سے۔ راس الخیمہ اور العین میں لینڈ سلائیڈنگ کی اطلاع ہے۔ رہائشیوں کو خبردار کیا گیا کہ وہ گھر پر رہیں اور جب تک بالکل ضروری نہ ہو گاڑی چلانے سے گریز کریں۔ انٹرنیٹ اور بجلی کی بندش بڑے پیمانے پر تھی کیونکہ مکین پانی سے محروم ہو گئے تھے۔ پورے ملک میں، اسکولوں اور نجی شعبے کو ہدایت کی گئی تھی کہ وہ ہفتے کا بقیہ حصہ (پیر کو چھوڑ کر) گھر سے دور کام کریں۔

دبئی میٹرو خدمات بری طرح متاثر ہوئیں۔ خدمات رک گئیں، جس سے تقریباً 200 مسافر کئی اسٹیشنوں پر پھنس گئے۔ دبئی بین الاقوامی ہوائی اڈا کی آپریشنز 25 منٹ کے لیے عارضی طور پر معطل کر دی گئی ہیں۔ دبئی سے روانگی کے لیے طے شدہ فلائی دبئی کی تمام پروازیں منسوخ کر دی گئیں۔ دبئی-ابوظہبی، دبئی-شارجہ اور دبئی-اجمان راستوں پر انٹرسٹی بس سروس معطل کردی گئی۔ دبئی ہوائی اڈے پر، کل 6.45 انچ (164 ملی میٹر) بارش ہوئی۔[7]

اماراتی العین اور سعودی الہلال فٹ بال کلبوں کے درمیان اے ایف سی ایشین چیمپئنز لیگ کا سیمی فائنل فٹ بال میچ، العین میں کھیلا جانا تھا، سیلاب کی وجہ سے ایک دن کے لیے ملتوی کر دیا گیا۔[8]

بحرین[ترمیم]

محرق، بحرین میں سیلاب زدہ گلی

15 اور 16 اپریل کو شدید بارش اور گرج چمک کے ساتھ طوفانی بارشیں ہوئیں جس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر سیلاب آ گیا، جس کے نتیجے میں کاریں سڑکوں پر چھوڑ دی گئیں۔ بحرین کے محکمہ موسمیات کے مطابق، 48 گھنٹوں کے دوران اوسطاً 67.6 ملی میٹر (2.66 انچ) بارش ہوئی، جو بحرین کی تاریخ میں ریکارڈ کی گئی دوسری سب سے زیادہ بارش ہے۔[9] بحرینی وزارت داخلہ نے رہائشیوں کو گھروں میں رہنے کے لیے عوامی تحفظ کا انتباہ جاری کیا۔ وزارت تعلیم نے سیلاب کے نتیجے میں اسکولوں اور اعلیٰ تعلیمی اداروں کو بند کرنے کا اعلان کیا۔ 70 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چلنے کا اندازہ لگایا گیا تھا۔ شہر سترہ میں ایک سپر مارکیٹ کی چھت بارش کے باعث گر گئی۔[10]

قطر[ترمیم]

موسلا دھار بارش اور تیز ہوائیں زیادہ تر ملک کے شمالی حصوں تک محدود تھیں جن کا مرکز مدینت راھ شامل اور ار-روئیس کے قصبوں کے آس پاس تھا۔ دوحہ میں بکھری بارش کی اطلاع ملی۔[11] موسم کی وجہ سے اسکول اور سرکاری عمارتیں بند تھیں، دن بھر خدمات آن لائن منتقل کر دی گئیں۔[12][11]

ایران[ترمیم]

جنوب مشرقی ایران میں بھی موسلا دھار بارش اور سیلاب کی اطلاع ملی ہے۔ سیستان بلوچستان، ہرمزگان اور کرمان صوبے سب سے زیادہ متاثر ہوئے، صوبہ کرمان میں 3 افراد لاپتہ ہیں۔[13]

سعودی عرب[ترمیم]

مشرقی صوبے میں بھاری بارش کی اطلاع ملی ہے۔[14] بڑے پیمانے پر سیلاب نے صوبہ، خاص طور پر دار الحکومت دمام کو متاثر کیا، جس کے نتیجے میں سڑکیں سرنگیں بند ہوگئیں اور اسکول بند ہو گئے۔[15]

یمن[ترمیم]

17 اپریل کو یمن کی حضرموت گورنری میں طوفانی بارش اور سیلاب آیا، جس میں ایک شخص کی موت اور املاک کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچا۔ مکلا کی بندرگاہ کے قریب پہاڑوں میں موسلادھار بارش سے لینڈ سلائیڈنگ کا خدشہ تھا۔[16]

مابعد[ترمیم]

17 اپریل کو، بحرین کے ولی عہد اور وزیر اعظم سلمان بن حمد آل خلیفہ نے بارشوں سے ان کے گھروں کو پہنچنے والے نقصانات کا اندازہ لگانے اور ان کی تلافی کے منصوبے کا اعلان کیا۔[17] شدید بارش کے پیش نظر، وزارت تعمیرات اور بحرین کی چار میونسپلٹی کونسلوں کے درمیان ایک ملک گیر ہنگامی مشترکہ ٹاسک فورس قائم کی گئی تھی تاکہ سیلاب سے متاثرہ گلیوں سے بارش کے پانی کو نکالنے اور اسے اللوزی جھیل تک پہنچانے سمیت سیلاب سے بچاؤ کی کوششوں کو مربوط کیا جاسکے۔

رائل عمان پولیس نے 152 آپریشن کیے، ملک بھر میں سیلاب سے پھنسے 1,630 افراد کو بچایا۔[18]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Heavy Rain and Floods Kill 19 in Oman and Disrupt Dubai Airport"۔ The New York Times (بزبان انگریزی)۔ 17 April 2024۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  2. "Dubai airport chaos as UAE and Oman reel from deadly storms"۔ بی بی سی نیوز۔ 16 April 2024۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  3. "Fierce storm lashes United Arab Emirates as Dubai diverts flights" (بزبان انگریزی)۔ 16 April 2024۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  4. Badr al Dhafri (15 April 2024)۔ "The tragedy which took the lives of 10 students"۔ Oman Observer (بزبان انگریزی)۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  5. Web Desk۔ "UAE witnesses record-breaking rains, highest in 75 years"۔ Khaleej Times (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  6. Web Desk (2024-04-17)۔ "UAE citizen dies after being swept away by flooded wadi amid heavy rains"۔ Khaleej Times (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  7. Dubai flooded by extreme rain as deadly storms sweep through UAE, Oman آرکائیو شدہ 17 اپریل 2024 بذریعہ وے بیک مشین, AccuWeather, 17 April 2024
  8. "UAE witnesses largest amount of rainfall in 75 years"۔ Al Arabiya English۔ 17 April 2024۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  9. Nader Adnan۔ "Second Heaviest Downpour"۔ Gulf Daily News۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  10. "Heavy rains kill 18 in Oman as flash floods lash UAE"۔ Al Jazeera (بزبان انگریزی)۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  11. ^ ا ب Joseph Varghese (16 April 2024)۔ "Qatar experiences moderate to heavy rains, strong winds"۔ Gulf Times (بزبان انگریزی)۔ 16 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  12. Fatemeh Salari (16 April 2024)۔ "Qatar announces closure of schools, public bodies over severe weather conditions"۔ Doha News (بزبان انگریزی)۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  13. "Heavy downpour and flash floods hit southeast Iran"۔ Mehr News Agency (بزبان انگریزی)۔ 17 April 2024۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  14. Brandon Miller, Nadeen Ebrahim (17 April 2024)۔ "Chaos in Dubai as UAE records heaviest rainfall in 75 years"۔ CNN (بزبان انگریزی)۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  15. "Heavy rain lashes in Eastern Province while near zero-visibility in Qassim and Riyadh"۔ www.zawya.com (بزبان انگریزی)۔ 18 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  16. "Death reported in Yemen as weather continues to worsen | Al Bawaba"۔ www.albawaba.com (بزبان انگریزی)۔ 18 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024 
  17. "THE BIG SPLASH: HRH Prince Salman orders compensation for rain-affected"۔ Gulf Daily News۔ 17 April 2024۔ 17 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2024 
  18. "Over 1,600 Individuals Rescued in Oman After Flash Floods"۔ Oman Moments (بزبان انگریزی)۔ 18 اپریل 2024 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2024