خلیل کوت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خلیل کوت
Halil Kut.png
عرفکوت کا ہیرو
(ترکی:کوت الامارے کہرمانے)
پیدائش1881
ینی محلہ, استنبول, سلطنت عثمانیہ
وفات20 اگست 1957(1957-80-20) (عمر  75–76 سال)
استنبول, ترکی
وفاداریFlag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ
Flag of Turkey.svg ترکی
سالہائے فعالیت1905-1919
درجہمیجر جنرل
یونٹچھٹی فوج
اعزازاتتمغہ جنگ (سلطنت عثمانیہ)

خلیل کوت (1881 - 20 اگست 1957) [1] عثمانی نژاد ترک علاقائی گورنر اور فوجی کمانڈر تھا۔خلیل پاشا انور پاشا کے ماموں تھے جو پہلی جنگ عظیم کے دوران وزیر جنگ تھے۔ وہ کوت کے محاصرے میں برطانوی افواج کے خلاف اپنی فتح کے لئے مشہور ہے۔

ابتدائی کیریئر[ترمیم]

انہوں نے1905 میں فوجی اکیڈمی (اسٹاف کالج) قسطنطنیہ سےایک ممتاز کپتان(ترکی:ممتاز یوزباشی)کے طور پر گریجویشن کی۔ [2] [3]

فارغ التحصیل ہونے کے بعد تین سال تک اس نے مقدونیہ میں تیسری فوج میں خدمات سر انجام دیں۔ جب سن 1908 میں آئینی دور بحال ہوا تو حکومت نے اسے شاہ کے خلاف عدم اعتمادکو منظم کرنے کے لئے ایران بھیجا جسے فارس نے آئینی انقلاب کے دوران منتخب کیا تھا۔ 13 اپریل 1909 کی فوجی بغاوت (1909) کے بعد ، اسے واپس بلالیا گیا اور وہ شاہی محافظوںکا کماندار بن گیا۔

ابتدائی طور پر وہ اس علاقے میں متحرک پیادہ پولیس کی کمان کرنے کے لئے سالونیکا میں تھا اور بلقان جنگ سے قبل باغیوں اور ڈاکوؤں سے لڑنے میں مصروف تھا۔ انہوں نے بلقان جنگ کے دوران ایک دستے کی بھی کمان کی۔ وہ 1911 میں اٹلی - ترکی جنگ کے دوران اطالوی حملے کے خلاف دفاعی انتظام کرنے کے لئے لیبیا (طرابلس) بھیجے گئے نوجوان افسران کےگروپ میں شامل تھا۔ پہلی جنگ عظیم سے پہلے ، وہ وان میں پیادہ پولیس کے دستےکے کماندار کے طور پر خدمات انجام دے رہے تھے۔

جنگ عظیم اول[ترمیم]

جب ترکی عالمی جنگ میں داخل ہوا تھا ، تب وہ قسطنطنیہ میں ہائی کمان میں کام کر رہا تھا۔ بعد میں انہوں نے روسی سرحد پر تیسری عثمانی فوج میں ڈویژنل کماندار کی حیثیت سے خدمات انجام دیں ، اس طرح روسیوں سے وابستہ آرمینیائیوں کے خلاف بھی کارروائیوں میں ملوث رہے۔ بعد میں ، وہ پہلی جنگ عظیم کے دوران ،میسوپوٹیمیا ، اب عراق میں عثمانی افواج کے سینئر کمانداروں میں سے ایک تھا۔

1915 میں ، وہ جنوبی عراق میں کوت پر قبضہ کرنے،جنرل ٹاؤنشینڈ ، 481 افسران اور 13،300 فوجی قیدیوں کوگرفتارکرنے والی افواج کا کمانڈر تھا۔ اس کامیاب مہم کے بعد ، انھیں ترقی دے کر جنرل بنا دیا گیا۔ وہ بغداد صوبہ (موجودہ عراق اور کویت مشترکہ) کا گورنر مقرر ہوا تھا اور 19 اپریل 1916 میں جنگ کے خاتمے تک چھٹی فوج کے کماندار بھی رہے تھے۔

- 19 اپریل 1916 کے عراق میں آپریشنل -کمان کا گھیراؤ اور 143 دن کا محاصرہ، اور بالآخر 29 اپریل 1916 کو برطانوی مہم فوجوں کا ہتھیار ڈالنا۔ان کی حکمت عملی کی سب سے بڑی کامیابی تھی ۔ تاہم ، اس کامیابی کا سہرا اس کےسینیئر آفیسر اور پیشرو چھٹی عثمانی فوج کے کماندار ، جرمن فیلڈ مارشل کولمار فریئرر وان ڈیر گولٹز کو بھی دیا جاتا ہے ، جو 10 دن پہلے ہی فوت ہوچکا تھا۔

1917 میں ، خلیل پاشا کو وزیر دفاع انور پاشا نے حکم دیا تھا کہ وہ اپنی کچھ فوجیں فارس مہم کیلئے روانہ کریں [4] یہ وہاں کی برطانوی حمایت یافتہ حکومت کو غیر مستحکم کرنے کی ناکام کوشش تھی۔ اس کی وجہ سےان کی بغداد کا دفاع کرنے کی صلاحیت محدود ہو گئی اور یہ سقوط بغداد کا باعث بنا ۔ اور عراق کے محاذ پر تازہ برطانوی افواج نے قبضہ کر لیا ۔

بعد کے سال[ترمیم]

برطانوی قابض فوج نےانہیں قسطنطنیہ میں جیل بھیج دیا تھا ، لیکن وہ فرار ہوکر ماسکو فرار ہوگیا۔ انقرہ حکومت اور سوویت قیادت کے مابین طے شدہ معاہدہ ماسکو (1921) کی شرائط کے مطابق ، وہ روس کی طرف سےترکی کو باتومی شہر روس کے حوالے کرنے پرمعاوضے کے طور پرلینن کا بھیجا گیاخام سونالے کر انقرہ پہنچا۔ چونکہ اس وقت انہیں ترکی میں انہیں قیام کی اجازت نہیں تھی ، لہذا وہ پہلے ماسکو اور پھر برلن چلے گئے ۔

انہیں 1923 میں جمہوریہ ترکی کے اعلان کے بعد ترکی واپس آنےکی اجازت ملی ۔ ان کا انتقال 1957 میں استنبول میں ہوا ۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

  1. "Kutülamara kahramanı Halil Kut dün vefat etti", Milliyet, 21 August 1957.
  2. Simon، Rachel (1987). Libya between Ottomanism and nationalism: the Ottoman involvement in Libya during the War with Italy (1911-1919). K. Schwarz. صفحہ 140. 
  3. The Encyclopædia Britannica, Vol.7, Edited by Hugh Chisholm, (1911), 3; "Constantinople, the capital of the Turkish Empire...".
  4. M. Taylan Sorgun,"Bitmeyen Savaş",1972, p195.