دادا بھائی نوروجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دادا بھائی نوروجی
(انگریزی میں: Dadabhai Naoroji خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
تفصیل= دادا بھائی نوروجی، 1890

رکن پالیمان
برائے فینسبری سینٹرل
مدت منصب
1892 – 1895
Fleche-defaut-droite-gris-32.png Frederick Thomas Penton
William Frederick Barton Massey-Mainwaring Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
ووٹ 3
معلومات شخصیت
پیدائش 4 ستمبر 1825[1][2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
ممبئی[3][4]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 30 جون 1917 (92 سال)[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
ممبئی[5][4]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
رہائش لندن، مملکت متحدہ
شہریت Flag of the United Kingdom.svg متحدہ مملکت برطانیہ عظمی و آئر لینڈ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب زرتشتیت
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی الفنسٹن کالج  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان،  استاد جامعہ،  ماہر معاشیات  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان گجراتی[6]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
ملازمت یونیورسٹی کالج لندن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں نوکری (P108) ویکی ڈیٹا پر
دستخط
دادا بھائی نوروجی
دادا بھائی نوروجی کی 1892 کی ایک تصویر۔

دادا بھائی نوروجی پارسی مذہب سے تعلق رکھنے والے ایک ہندوستانی سیاست دان اور سماجی لیڈر تھے۔ انہوں نے سب سے پہلے اس حقیقت کی نشان دہی کی تھی کہ تجارت کی آڑ میں برطانیہ ہندوستان کی دولت لوٹ رہا ہے۔ ان کی کتاب Poverty and Un-British Rule in India میں بڑی تفصیل کے ساتھ ہندوستانی دولت کی برطانیہ منتقلی کی وضاحت درج ہے۔ انہوں نے بتایا کہ نو آبادیاتی نظام کے تحت ہندوستان کی ساری دولت کا برطانیہ پہنچ جانا اور بدلے میں کچھ بھی واپس نہ ملنا ہی ہندوستان میں غربت کا باعث ہے۔
1894ء میں مہاتما گاندھی نے نورو جی کو خط میں لکھا کہ "ہندوستانی آپ سے ایسی ہی امیدیں رکھتے ہیں جیسی بچے باپ سے رکھتے ہیں۔ یہاں واقعی ایسی توقعات ہیں۔"

ڈرین تھیوری اور غربت[ترمیم]

دادا بھائی نوروجی نے ہندوستان سے برطانیہ کی جانب دولت کے بہاو کی چند وجوہات کی نشان دہی کی تھی۔

  • ہندوستان کی حکومت غیر ملکی ہے۔
  • ہندوستان میں بسنے کے خواہش مند نئے لوگ نہیں آتے۔ ایسے نئے آنے والے لوگ معیشت کے لیے مزدوری اور سرمائیہ لاتے ہیں۔
  • سرکاری ملازمین اور فوج کے اخراجات ہندوستان کی آمدنی سے پورے کیے جاتے ہیں۔
  • ہندوستان کے اندر اور غیر ممالک میں برطانوی سلطنت کی توسیع کے اخراجات ہندوستان کو برداشت کرنے پڑتے ہیں۔
  • آزادانہ تجارت کے نام پر ہندوستان کا استحصال کیا جا رہا ہے۔ ہندوستانی مال سستا خریدا جاتا ہے اور برطانوی مال مہنگا بیچا جاتا ہے۔
  • اچھی تنخواہوں کی ملازمتیں صرف غیر ملکیوں کودی جاتی ہیں جو اس رقم کو ہندوستان میں خرچ نہیں کرتے اور آخر کار اپنے ساتھ واپس لے جاتے ہیں۔
  • ریلوے سے ہونے والی خطیر آمدنی پر ہندوستان کا کوئی حق نہیں ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی ربط[ترمیم]

  • http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12126488t — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  • ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: http://snaccooperative.org/ark:/99166/w61m4hdf — بنام: Dadabhai Naoroji — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  • اجازت نامہ: CC0
  • ^ ا ب http://www.britannica.com/EBchecked/media/120849/Dadabhai-Naoroji-statue-in-Mumbai
  • اجازت نامہ: CC0
  • http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12126488t — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ