دلائی لاما ہشتم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دلائی لاما ہشتم
Jamphel Gyatso, 8th Dalai Lama - AMNH - DSC06244.JPG 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1758[1][2][3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
تبت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 1804 (45–46 سال)[1][2][3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لہاسا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مناصب
دلائی لاما (8 )   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
Fleche-defaut-droite-gris-32.png دلائی لاما ہفتم 
دلائی لاما نہم  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

آٹھویں دلائی لامہ جمچھل گستاؤ 1758ء میں تبت کے شمالی مغربی علاقے میں پیداہوئے۔ جمپھل صرف 5سال کے تھے کہ اپنی ماں کے ہمراہ باغ میں چہل قدمی کر رہے تھے کہ اچانک ایک ست رنگی آسمانی شعاع جمپھل کی ماں کو نظر آئی جو اس کے بچے کوچھو رہی تھے اس ست رنگی شعاع نے جمپھل کی حال کو سوچنے پر مجبور کر دیا ماں نے جمپھل کی طرف دیکھا تو اس کے چہرے پر ایک نورانی اور دلربا سی مسکان تھی ،جیسے وہ ایک مقدس ہستی ہوں ،ماں نے بھانپ لیا کہ یہ بچہ خاص ہے اوراس میں مقدس ہستی کے آثا رہیں ماں کے منہ سے نکلے ہوئے یہ الفاظ تبت کے مرکزی روحانی مرکز تک پہنچ گئے اور حکام نے اعلان کر دیا کہ آٹھویں دلائی لامہ کا ظہورہوچکا ہے اوروہ بچہ ہی آٹھواں دلائی لامہ مان لیے گئے۔ تبت حکام بچہ کو محل میں لے آئی اوراس کی آٹھویں دلائی لامہ کی حیثیت سے تربیت کا آغازکر دیا 1762ء میں بچے نے پوٹلہ پیلس میں قدم رکھا اورسات سال کی عمرمیں بطور دلائی لامہ اپنے فرائض سنبھال لیے جس کے لیے ایک بڑی تقریب ہوئی 1777ء میں انہوں نے اپنی مکمل ذمہ داریاں نبھانا شروع کر دیں وہ 1804ء میں 47سال کی عمرمیں وفات پاگئے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب اجازت نامہ: CC0
  2. ^ ا ب او ایل آئی ڈی: https://openlibrary.org/works/OL306597A — بنام: 8th Dalai Lama — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — مصنف: آرون سوارٹز — اجازت نامہ: اے جی پی ایل-3.0
  3. ^ ا ب ایف اے ایس ٹی - آئی ڈی: http://id.worldcat.org/fast/178731 — بنام: Dalai Lama VIII ʼJam-dpal-rgya-mtsho — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017