دودھ سے الرجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اونٹ کا دودھ پینے والا ایک آدمی

بعض افراد کو دودھ سے الرجی (انگریزی: Milk allergy) ہوتی ہے۔ ایسی صورت میں دودھ پینا شدید تکلیف میں مبتلا کرسکتا ہے۔ دودھ سے الرجی زدہ شخص اگر دودھ پی لے تو اسے جلد کے پھٹ جانے، گلے، زبان اور منہ کے سوج جانے کی شکایت ہوسکتی ہے جبکہ شدید کھانسی کا دورہ پڑسکتا ہے۔ ایسے افراد جن کا جسم دودھ کو قبول نہیں کرتا، دودھ پینے سے گردوں یا جگر کے کینسر میں بھی مبتلا ہوسکتے ہیں۔بعض افراد کو دودھ سے الرجی بھی ہوتی ہے۔ ایسی صورت میں دودھ پینا شدید تکلیف میں مبتلا کرسکتا ہے۔ دودھ سے الرجک شخص اگر دودھ پی لے تو اسے جلد کے پھٹ جانے، گلے، زبان اور منہ کے سوج جانے کی شکایت ہوسکتی ہے جبکہ شدید کھانسی کا دورہ پڑسکتا ہے۔ ایسے افراد جن کا جسم دودھ کو قبول نہیں کرتا، دودھ پینے سے گردوں یا جگر کے کینسر میں بھی مبتلا ہوسکتے ہیں۔[1]

یہ بات قابل غور ہے کہ جانوروں کی اصل کا دودھ دو عوامل کی وجہ سے انسانوں کے ذریعہ مسترد ہوسکتا ہے۔ پہلا لییکٹیس کی کمی ہے۔ آبادی کا ایک خاص تناسب اس بیماری کا شکار ہے ، یعنی دودھ کی شکر کی مکمل یا جزوی عدم برداشت۔ اگر جسم میں ایک خاص انزائم ، لییکٹیس کی کمی ہوتی ہے ، جو آنتوں میں تیار ہوتا ہے ، تو جب دودھ کی کھجلی ہوتی ہے تو مدافعتی نظام اس پر منفی ردعمل دیتا ہے۔[2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]