دینا الجہنی عبدالعزیز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دینا الجہنی عبدالعزیز
دينا الجهني
شریک حیاتشہزادہ سلطان بن فہد بن ناصر بن عبدالعزیز(شادی 1998)
خاندانآل سعود
والدعلی الجہنی
پیدائش26 دسمبر 1975ء (عمر 45 سال)
کیلیفورنیا، ریاستہائے متحدہ امریکہ
پیشہکاروباری خاتون، ایڈیٹر

شہزادی دینا علی الجہنی عبدالعزیز ( عربی: دينا الجهني ؛ پیدائش 26 دسمبر 1975) ایک سعودی امریکی کاروباری خاتون اور ایڈیٹر ہیں۔وہ ریاض میں ڈی این اے اسٹور کی بانی اور مالک ہیں۔ اس نے سعودی شاہی خاندان میں شادی کی اور ووگ عربیہ میگزین کی سابقہ ایڈیٹر انچیف ہیں ، جہاں سے انہیں اپنی نگرانی میں دو رسائل کے اجراء کے بعد جلد ہی 13 اپریل 2017 کو اس عہدے سے برخاست کردیا گیا۔ [1]

پیدائش اور ذاتی زندگی[ترمیم]

دینا کیلیفورنیا میں پیدا ہوئیں ، وہ سابق سعودی مواصلات وزیر علی الجوہانی کی بیٹی ہیں۔ وہ مشرق وسطی اور امریکہ کے مابین زندگی بسر کرتے کرتے بڑی ہوئی کیونکہ اس کے والد ایک ماہر معاشیات تھے ، متعدد امریکی یونیورسٹیوں میں پڑھاتے تھے۔ 1998 میں شہزادہ سلطان بن فہد بن ناصر بن عبد العزیز سے شادی کے بعد وہ آل سعود کی رکن بن گئیں۔ [2] ان کے تین بچے ، ایک بیٹی اور جڑواں لڑکے ہیں۔ [3]

کیریئر[ترمیم]

چھ سال کی عمر میں برطانوی میگزین ٹیٹلر کی ایک کاپی دیکھ کر وہ فیشن میں دلچسپی لینے لگی ۔ وہ کہتی ہیں ، "میں پہلے صفحے سے آخری صفحے تک ہر میگزین کا مطالعہ کر رہی تھی ، میں فیشن سے متعلق ہر چیز کے لئے بے چین تھی۔ [4] متعدد بین الاقوامی فیشن شوز میں شرکت کے بعد ، اس نے 2006 میں ریاض میں اپنا اسٹور "ڈی این اے" کھولنے کا فیصلہ کیا ، جسے دینا کی رکنیت یا ذاتی دعوت نامے سے ہی خریدا جاسکتا ہے۔ 2013 میں اس نے اس سٹور کی دوحہ ، قطر میں ایک شاخ کھولی۔ [5] خلیج فارس کے خطے میں ایک دہائی کے کامیاب کاروبار کے بعد ، دینا نے DNACHIC.com کے نام سے ایک ای شاپنگ ویب سائٹ کا آغاز کیا۔ یہ سٹور مشرق وسطی کے صارفین کے فیشن ڈیزائنرز کا تعاون کرتا ہے۔ ستمبر 2016 میں ، دینا کو اپنی پہلی رسالے ووگ عربیہ کا ایڈیٹر ان چیف مقرر کیا گیا تھا اور میگزین کے نظم و نسق کے تنازعہ کی وجہ سے ملک سے نکالے جانے سے پہلے ملازمت پر تھوڑی مدت تک کام جاری رہا۔ [3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Ward، Mary (April 14, 2017). "Saudi princess Deena Aljuhani Abdulaziz fired from Vogue editor role after two issues". The Sydney Morning Herald. اخذ شدہ بتاریخ August 28, 2017. 
  2. "Meet Deena Aljuhani Abdulaziz: the Saudi princess launching Vogue Arabia". The Telegraph. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2017. 
  3. ^ ا ب Larocca، Amy (6 February 2017). "Vogue Arabia's First Editor Is Literally a Princess". The Cut. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2017. 
  4. Larocca، Amy (November 8, 2004). "Deena Abdulaziz, Mother". New York Magazine. اخذ شدہ بتاریخ August 28, 2017. 
  5. "5 Things to Know About Vogue Arabia's First Editor-in-Chief". observer.com. July 5, 2016. اخذ شدہ بتاریخ August 28, 2017.