ذوالفقار احمد نقشبندی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
پیر، فقیر، مولانا

ذوالفقار احمد نقشبندی
ذاتی
پیدائش1 اپریل 1953ء (عمر 69 سال)
مذہباسلام
قومیتپاکستانی
اولادسیف اللّٰہ احمد نقشبندی
حبیب اللّٰہ احمد نقشبندی
فرقہسنی
بنیادی دلچسپیتصوف
طریقتنقشبندی
پیشہصوفی شیخ، اسلامی اسکالر
یوٹیوب کی معلومات
چینل
سالہائے فعالیت1994ء تاحال
سبسکرائب کنندہتہتر ہزار
کل دیکھے جانے کے اعداد و شمار5,457,760
(مارچ 2022ء)
بانئمعھد الفقیر الاسلامی، جھنگ
مرتبہ
شاگرد

ذوالفقار احمد نقشبندی (ولادت: 1 اپریل 1953ء) ایک پاکستانی اسلامی اسکالر اور سلسلہ نقشبندیہ کے ایک صوفی صاحب نسبت بزرگ ہیں۔[1] ان کے مشہور خلفاء میں شیخ خلیل الرحمن سجاد نعمانی اور شامل ہیں۔[2]

حالات زندگی[ترمیم]

ولادت[ترمیم]

ذوالفقار نقشبندی 1 اپریل 1953ء کو صوبہ پنجاب، پاکستان کے شہر جھنگ میں ایک کھرل خاندان میں پیدا ہوئے۔[3]

تعلیم[ترمیم]

ذوالفقار احمد نقشبندی کی تعلیم اسکولوں اور کالجوں میں ہوئی۔ انہوں نے کئی عصری کورس کئے 1972ء میں بی ایس سی الیکٹریکل انجینئر کی ڈگری حاصل کرکے اسی شعبے سے وابستہ ہوگئے، پہلے اپرنٹس الیکٹریکل انجینئر، پھر اسسٹنٹ الیکٹریکل انجینئر بنے، اس کے بعد چیف الیکٹریکل انجینئر بن گئے، جس زمانے میں وہ انجینئر بن رہے تھے اس زمانے میں جمناسٹک، فٹ بال، سوئمنگ کے کیپٹن اور چمپیئن بھی رہے، ابتدائی دینیات، فارسی اور عربی کی کتابیں بھی پڑھیں، قرآن کریم بھی حفظ کیا، یہاں تک کہ جب وہ لاہور یونیورسٹی میں زیر تعلیم تھے ان کا تعلق عمدۃ الفقہ کے مصنف سید زوار حسین شاہ سے ہوگیا، جو نقشبندیہ سلسلے کے ایک صاحب نسبت بزرگ تھے، شیخ ذوالفقار احمد نے ان سے مکتوبات مجدد الف ثانی سبقاً سبقاً پڑھی، ان کی وفات کے بعد وہ خواجہ غلام حبیب نقشبندی مجددی ؒ (معروف بہ: مرشدِ عالم) کے دامن سے وابستہ ہوگئے، یہ 1980ء کی بات ہے، 1983ء میں خلافت سے سرفراز کئے گئے، اس دوران میں انھوں نے جامعہ رحمانیہ جہانیاں منڈی اور جامعہ قاسم العلوم ملتان سے دورۂ حدیث کی اعزازی ڈگری بھی حاصل کی۔[3]

عملی زندگی[ترمیم]

اپنے مرشد کی وفات کے بعد وہ پوری طرح دین کے کاموں میں لگ گئے، کئی سال امریکا میں گزار کر اب مستقل طور پر جھنگ میں مقیم ہیں، لڑکوں اور لڑکیوں کے متعدد دینی ادارے ان کی سرپرستی اور اہتمام میں چل رہے ہیں، پچاس سے زائد ملکوں کے اصلاحی و تبلیغی دورے بھی کر چکے ہیں، دینی و عصری علوم کی جامعیت ان کی امتیازی خصوصیت ہے، انگریزی زبان پر عبور حاصل ہے، ہر سال رمضان المبارک کا مہینہ (صرف آخری عشرہ) افریقی ملک زیمبیا میں گزرتا ہے، جہاں وہ اپنے مریدین اور خلفاء کی ایک بڑی جماعت کے ساتھ اعتکاف فرماتے ہیں۔ ہر سال حج کے ایام میں مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں مجلسیں لگتی ہیں اور بے شمار عقیدت مند، ان مجلسوں میں ان سے استفادہ کرتے ہیں، گویا سال کے بارہ مہینے ان کا فیض جاری رہتا ہے۔[3] نیز وہ معھد الفقیر الاسلامی، جھنگ کے بانی ہیں۔[4]

ذوالفقار احمد نقشبندی علمائے دیوبند اور مبصرین کے نزدیک[ترمیم]

2011ء میں، ذوالفقار احمد نقشبندی نے ہندوستان کا سفر کیا اور حیدرآباد، دکن میں عیدگاہ بلالی منصب ٹینک اور چنچل گوڈا جونیئر کالج میں کئی منظم پروگراموں میں انھوں نے خطاب کیا۔[2] انھوں نے دار العلوم دیوبند کی مسجد رشید اور دار العلوم وقف دیوبند کے پروگراموں میں بھی خطاب کیا۔[5]

دسمبر 2018ء میں، ذوالفقار احمد نقشبندی نے کہا کہ عقیدۂ ختم نبوت کے خلاف سازشیں امت مسلمہ کے لیے لمحۂ فکریہ ہیں، قادیانیوں کو ملکی آئین اور قانون کا پابند بنایا جائے اور تمام کلیدی عہدوں سے الگ کیاجائے۔[6]

ذوالفقار احمد نقشبندی کی معتبریت کے بارے میں دار العلوم دیوبند کے دارالافتاء میں پوچھے گئے ایک سوال کا جواب یہ دیا گیا:

پیر فقیر حضرت ذوالفقار احمد صاحب دامت فیوضہم، نقشبندی سلسلے کے صاحب نسبت بزرگ ہیں، اہل سنت والجماعت میں سے ہیں، دارالعلوم دیوبند اور اکابر دارالعلوم سے گہری اور سچی عقیدت رکھتے ہیں، دارالعلوم کے ہم مشرب ہیں۔[7]

اگرچہ جدید دور میں صوفیت کے رجحان میں کمی آئی ہے، لیکن نقشبندی سلسلہ اس سے مستثنیٰ ہے اور وہ عالمی اور بڑے پیمانے پر عام و شائع ہے۔[8]

خلفاء[ترمیم]

پیر ذوالفقار احمد نقشبندی کے بعض خلفاء کے نام مندرجۂ ذیل ہیں:[9]

  1. مولانا محمد سیف اللہ، جھنگ (فرزند)
  2. مولانا محمد حبیب اللہ، جھنگ (فرزند)
  3. مفتی ابو لبابہ شاہ منصور، کراچی
  4. مولانا احمد جان، روس
  5. مولانا خلیل الرحمن سجاد نعمانی، بھارت
  6. مولانا مفتی انعام الحق، بھارت
  7. مولانا اسلم پوریؒ، لاہور
  8. مولانا محمد امجد مدظلہ، لاہور
  9. مولانا حافظ محمد ابراہیم، لاہور
  10. مولانا شیخ اظہر اقبال، کراچی
  11. مفتی محمد منصور ، ایران

(تفصیلی طور پر خلفاء کے بارے میں پڑھیں، نیز یہ بھی پڑھ سکتے ہیں)

افادات و قلمی خدمات[ترمیم]

ذوالفقار احمد نقشبندی کی بعض کتابیں مندرجۂ ذیل ہیں، جن میں سے بہت سی کتابیں ان کی افادات و ارشادات کا مجموعہ ہیں، جو ان کے منتسبین نے جمع و مرتب کیا ہے:[10]

  • فقہ کے بنیادی اصول
  • زادِ حرم
  • اولاد کی تربیت کے سنہرے اصول
  • خواتینِ اسلام کے کارنامے
  • حیا اور پاکدامنی
  • مغفرت کی شرطیں
  • علم نافع
  • اسیر برما
  • عشق الہی
  • دوائے دل
  • عشق رسول
  • خطبات فقیر
  • خطبات ذوالفقار
  • عمل سے زندگی بنتی ہے
  • اہل دل کے تڑپا دینے والے واقعات

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Maulana Pir Zulfiqar Ahmed Naqshbandi arrives in the city". سیاست (اخبار). archive.siasat.com. 16 April 2011. اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2020. 
  2. ^ ا ب پ الواجدی، مولانا ندیم (20 دسمبر 2018ء). "پیر ذوالفقار احمد نقشبندی: مختصر و جامع سوانح حیات". www.sadaewaqt.com. اخذ شدہ بتاریخ 4 مارچ 2022ء. 
  3. "WELCOME TO EMAHAD". emahad.com. اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2020. 
  4. "Pir Zulfiqar Naqshbandi Visits Darul Uloom Deoband". deoband.net. 9 اپریل 2011ء. اخذ شدہ بتاریخ 4 مارچ 2022ء. 
  5. "عقیدہ ختم نبوت کیخلاف سازشیں امت کیلئے لمحہ فکریہ ہیں،مولانا ذوالفقار نقشبندی" [Conspiracies against Finality a matter of concern for Muslims: Zulfiqar Ahmad Naqshbandi]. روزنامہ جنگ. 23 دسمبر 2018ء. اخذ شدہ بتاریخ 4 مارچ 2022ء. 
  6. "پیر ذوالفقار احمد نقشبندی کی معتبریت". darulifta-deoband.com. دار العلوم دیوبند. اخذ شدہ بتاریخ 25 اگست 2020. 
  7. Muhammad Qasim Zaman. Islam in Pakistan: A History. مطبع جامعہ پرنسٹن. صفحہ 340. 
  8. http://sheikhzulfiqarahmednaqshbandi.blogspot.com/2016/03/blog-post.html?m=1
  9. "Books authored by Zulfiqār Aḥmad Naqshbandī". worldcat.org. ورلڈ کیٹ. اخذ شدہ بتاریخ 4 مارچ 2022ء.