راجندر سنگھ جی جڈیجا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
راجندر سنگھ جی جڈیجا
تفصیل=

پہلے چیف آف آرمی اسٹاف
مدت منصب
1 اپریل 1955 – 14 مئی 1955
صدر راجندر پرساد
وزیر اعظم جواہر لال نہرو
Fleche-defaut-droite-gris-32.png وہی خود پہلے چیف تھے
ایس ایم شری ناگیش Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
تیسرے چیف آف آرمی اسٹاف اور کمانڈر انچیف ، انڈین آرمی
مدت منصب
14 جنوری 1953 – 1 اپریل 1955
Fleche-defaut-droite-gris-32.png فیلڈ مارشل کے ایم کیریپا
چیف آف آرمی اسٹاف (بھارت) کے دفتر سے دفتر کی تبدیلی Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 15 جون 1899  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 1 جنوری 1964 (65 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ فوجی افسر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
عہدہ جرنیل  ویکی ڈیٹا پر (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لڑائیاں اور جنگیں دوسری جنگ عظیم  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

جنرل مہاراج شری راجندر سنگھ جی جڈیجا ، ڈی ایس او (15 جون 1899 - 1 جنوری 1964) جنھیں بطور کے ایس راجندر سنگھ جی سے بھی جانا جاتا ہے، فیلڈ مارشل کے ایم کیریپپا کے بعد؛ بھارتی فوج کے پہلے چیف آف آرمی اسٹاف اور دوسرے بھارتی تھے ، جو بھارتی فوج کے کمانڈر انچیف بن گئے تھے۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

راجیندر سنگھ جی 15 جون 1899ء کو سرودر ، کاٹھیاواڑ میں پیدا ہوئے تھے، جو مغربی بھارتی ریاست گجرات واقع ہے۔[1] اس خاندان کا تعلق نواں نگر ریاست (موجودہ جامنگر) کے حکمران یادو ونشی راجپوت خاندان سے تھا،[2] [3] کے ایس دلیپ سنگھ جی کے چچا، کے ایس رنجیت سنگھ جی ، اس کنبہ کے ذریعہ تیار کردہ دو کرکٹر ستارے تھے۔[4] 1928 میں راجندر سنگھ نے مایا کُنوَربہ سے شادی کی۔ یہ جوڑے تین بچوں کے والدین بن گئے۔ ان کے بیٹے ، سکھدیو سنگھ جی نے مسُودہ کے حکمران راجکماری وجیلکشمی مسُودہ کی بیٹی سے شادی کی۔ ان کی سب سے چھوٹی بیٹی کی شادی اس وقت کے مدھیہ پردیش (موجودہ چھتیس گڑھ) کے سابق ​​شاہی ریاست کھیرا گڑھ کے راجہ صاحب سے ہوئی تھی ، وہ لوک سبھا کی رکن پارلیمان اور اپنے حلقہ کی ایک مقبول رہنما تھیں۔[5]

کیریئر[ترمیم]

راجندر سنگھ جی نے راجکمار کالج، راجکوٹ ، پھر مالورن کالج میں تعلیم حاصل کی۔ فوجی کیریئر کے حصول کے بعد انھوں نے رائل ملٹری کالج، ساندھورسٹ میں شمولیت اختیار کی۔ 1921ء میں انھیں بھارتی فوج کے لیے غیر منتخب شدہ فہرست میں دوسرے لیفٹیننٹ کے طور پر مقرر کیا گیا۔ انھوں نے کنگز رائل رائفل کورپس کے ساتھ تیسری بٹالین کے ساتھ منسلک ہوکر ایک سال گزارا اور پھر بھارتی فوج میں شامل ہوئے اور سیکنڈ رائل لینسرز میں تعینات رہے۔ کنگز کمیشنڈ انڈین آفیسر کی حیثیت سے برٹش انڈین آرمی میں مختلف عہدوں اور دفاتر پر فائز رہے اور دوسری جنگ عظیم کے دوران انھوں نے بہت امتیازی خدمات انجام دیں۔[6]

جنرل راجندر سنگھ جی 1945–46 میں واشنگٹن ڈی سی میں ملٹری اٹیشی کی حیثیت سے خدمات انجام دینے والے پہلے بھارتی بن گئے۔

دوسری جنگ عظیم[ترمیم]

1941 میں راجندر سنگھ جی کو سیکنڈ لینسرز کے اسکواڈرن کمانڈر کے طور پر بحیرہ روم اور مشرق وسطی کے تھیٹر بھیج دیا گیا۔ اپریل 1941 میں ان کی بریگیڈ ، تھرڈ انڈین موٹر بریگیڈ کو عددی طور پر اعلی محور فورسز نے مخیلی کے گرد گھیر لیا۔ گھیرے میں آنے کے بعد اتحادی افواج کے پاس دشمنوں کی افواج کے ذریعہ صحرا میں گھس جانے والے خطرہ کے سوا کوئی چارہ نہیں بچا تھا۔ اس آپریشن کے دوران راجندر سنگھ جی کے اسکواڈرن نے ریئر گارڈ کی پوزیشن سنبھالی۔ اگرچہ جرمنی کے ٹینک پر حملہ کے نتیجہ میں ونگارڈ کو بہت زیادہ جانی نقصان اٹھانا پڑا ؛ لیکن رنجیت سنگھ جی کے اسکواڈرن پر کوئی خاص اثر نہیں ہوا۔ انھوں نے اپنے اسکواڈرن کو دشمنوں کی صفوں میں شامل کیا اور کچھ قریبی پہاڑیوں کی حفاظت میں انھیں مہلت ملی۔ اسکواڈرن نے رات کے بعد دشمن افواج پر مزید کارروائی کا مضمون لکھا اور کافی کامیابی حاصل کی۔ واقعی یہ جنگ کے ساٹھ قیدیوں کے ساتھ اڈے پر واپس آئے۔[7][8]

اپنی بہادر قیادت اور پرعزم اقدام کی وجہ سے راجندر سنگھ جی کو 1941ء میں ڈسٹنگوسڈ سروس آرڈر (DSO) سے نوازا گیا۔[9] وہ دوسری عالمی جنگ کے دوران اس سجاوٹ سے نوازے جانے والے پہلے بھارتی تھے۔

اکتوبر 1942 میں بھارت واپس آئے ، راجندر سنگھ جی 1943ء میں سیکنڈ رائل لینسرز کے کمانڈنٹ افسر مقرر ہوئے۔[10] مئی 1945 میں وہ فوج کے ڈپٹی ڈائریکٹر برائے تعلقات عامہ کے عہدے پر فائز ہوئے اور انھیں واشنگٹن میں تعینات کیا گیا اور اس کے بعد جون سے وہاں فوجی ملحق کے طور پر مزید تقرری کی گئی۔[10] ستمبر 1946 میں انھیں بریگیڈیئر میں ترقی دے کر پِسکا سب ایریا کی کمان سونپی گئی۔ اس کے بعد انھیں بھارتی بکتر بند کور کا پہلا بھارتی ڈائریکٹر مقرر کیا گیا اور آزادی سے کچھ ہی دیر قبل 30 جولائی 1947 کو ایکٹنگ میجر جنرل کی ترقی دی گئی۔[10]

بھارت میں[ترمیم]

تقسیم ہند نے سن 1947ء میں سیکیورٹی کی صورت حال اور بھارتی فوج کی حرکیات دونوں میں ہلچل مچا دی۔ اس تقسیم کا مطلب بھارتی فوج کی تقسیم ہے ، جس کے ساتھ ساتھ ملک کی تقسیم اور ریاستوں کے متوقع انضمام سے پیدا ہونے والے متعدد حفاظتی حالات سے نمٹنے کے لیے بیک وقت مطالبہ کیا گیا تھا۔ نیز اس عرصے میں برطانوی افسران؛ جو بھارتی فوج میں بیشتر سینئر عہدوں پر فائز رہے ، کو آہستہ آہستہ فارغ کردیا گیا اور ان کی جگہ بھارتی افسران کو لے آیا گیا۔ اس نازک دور کے دوران؛ راجندر سنگھ جی سے بہت ساری سخت ذمہ داریاں نبھانے کا مطالبہ کیا گیا تھا اور ان کے عہدہ میں تیزی سے ترقی ملی تھی۔ ایک نئے میجر جنرل کی حیثیت سے انھیں اگست 1947ء میں آزادی کے بعد دہلی کے ذیلی علاقوں کی کمان کرنے کے لیے مقرر کیا گیا تھا اور 1948ء تک دہلی و مشرقی پنجاب کمانڈ (1947–48) کے نئے آفیسر کمانڈنگ (جی او سی) کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔[10] انھیں 16 جنوری 1948ء کو اداکار لیفٹیننٹ جنرل کی حیثیت سے ترقی دی گئی اور جی او سی-ان-سی ایسٹرن کمانڈ مقرر کیا گیا۔[11] اس کے بعد لیفٹیننٹ جنرل ای این گوڈارڈ کی ریٹائرمنٹ کے بعد انھیں جی او سی-ان-سی ساؤتھرن کمانڈ (1948–53) مقرر کیا گیا۔ آپریشن پولو؛ جس کے نتیجہ میں ریاست حیدرآباد کا بھارت کے ساتھ اتحاد ہوا ، جی او سی ان سی (ساؤتھ) کی حیثیت سے ان کے عہدہ کے دوران انجام پایا۔[12]

فوج میں سب سے زیادہ خدمت کرنے والے افسر کی حیثیت سے ، جنرل راجندر سنگھ جی 14 جنوری 1953ء کو جنرل (بعد کے فیلڈ مارشل) کے ایم کیریپا کی ریٹائرمنٹ کے بعد؛ انڈین آرمڈ فورسز کے کمانڈر ان چیف مقرر ہوئے۔ راجندر سنگھ جی نے اسی دن جنرل کا درجہ حاصل کیا۔ یکم اپریل 1955ء سے بھارت کے صدر کو آئینی طور پر بھارتی مسلح افواج کا کمانڈر انچیف نامزد کیا گیا۔ اس کے بعد راجندر سنگھ جی نامزد کیے جانے والے بھارتی فوج کے پہلے سربراہ بن گئے، جنھیں چیف آف آرمی اسٹاف نامزد کیا گیا تھا۔ وہ 14 مئی 1955ء کو ملازمت سے سبکدوشی ہونے تک اس عہدہ پر فائز رہے اور ان کے بعد جنرل جنرل سی ایم سری ناگیش نے کامیابی حاصل کی۔[13]

وفات[ترمیم]

جنرل مہاراج شری راجندر سنگھ جی کی وفات؛ 1 جنوری 1964ء کو 65 سال کی عمر میں ہوئی۔[14]

ایوارڈز و سجاوٹیں[ترمیم]

سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt
سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt
سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt سانچہ:Ribbon devices/alt
سانچہ:Ribbon devices/alt
ڈسٹنگوسڈ سروس آرڈر (1941)
(WW2 میں اعزاز حاصل کرنے والے پہلے بھارتی)
انڈیا جنرل سروس میڈل (1936-39)
1939-1945 اسٹار
افریقا اسٹار
برما اسٹار
جنگی تمغہ 1939-1945 (MID 1941 کے لیے بلوط کے پتے کے ساتھ)
ڈیفینس میڈل (1945)
انڈین انڈیپیڈینس میڈل (1947)
کنگ جارج پنجم سلور جبلی میڈل (1935)
کنگ جارج ششم تاجپوشی میڈل (1937)
کوئین ایلیزیبتھ دوم تاجپوشی میڈل (1953)
لیجن آف میرٹ (1948)
(ایک آفیسر کی ڈگری)

دیگر[ترمیم]

  • آرڈر آف یوگوسلاویہ آرمی کلاس I

درجہ کی تاریخیں[ترمیم]

اشارہ رینک جز درجہ کی تاریخ
British Army (1920-1953) OF-1a.svg سیکنڈ لیفٹیننٹ برٹش انڈین آرمی 14 جولائی 1921[15]
British Army (1920-1953) OF-1b.svg لیفٹیننٹ برٹش انڈین آرمی 14 اکتوبر 1923[16]
British Army (1920-1953) OF-2.svg کیپٹن برٹش انڈین آرمی 14 جولائی 1929[17]
British Army (1920-1953) OF-3.svg میجر برٹش انڈین آرمی 1 جنوری 1937 (پیٹنٹ)[18]
1 اگست 1938 (بنیادی)[19]
British Army (1920-1953) OF-4.svg لیفٹیننٹ کرنل برٹش انڈین آرمی 29 نومبر 1943 (حسن کارکردگی)
29 فروری 1944 (عارضی)[20]
14 جولائی 1947 (بنیادی)[21]
British Army (1920-1953) OF-5.svg کرنل برٹش انڈین آرمی 11 مئی 1945 (حسن کارکردگی)[20]
British Army (1928-1953) OF-6.svg برگیڈئیر برطانوی ہندی فوج 1946
British Army (1920-1953) OF-4.svg لیفٹیننٹ کرنل بھارتی فوج 15 اگست 1947[note 1][22]
British Army (1920-1953) OF-7.svg میجر جنرل بھارتی فوج 30 جولائی 1947[note 1][10]
British Army (1920-1953) OF-8.svg لیفٹیننٹ جنرل بھارتی فوج 16 جنوری 1948 (حسن کارکردگی)[11][note 1]
Lieutenant General of the Indian Army.svg لیفٹیننٹ جنرل بھارتی فوج 26 جنوری 1950 (اداکاری ، دوبارہ تفویض اور سگنل میں تبدیلی)[22][23][24]
General of the Indian Army.svg جنرل
(C-in-C, IA)
بھارتی فوج 15 جنوری 1953[25]
General of the Indian Army.svg جنرل
(COAS)
بھارتی فوج 3 مئی 1955[25]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. نواں نگر
  2. "Kutch Rulers with their Coinage details". chiefacoins.com. اخذ شدہ بتاریخ 02 نومبر 2020. 
  3. Gazette of India. 1953. صفحہ 1475. Major General M. S. Pratapsinhji; 2. Major General M. S. Himatsinhji; 3. Maharaj Shri Duleepsinhji; and 4. Lieutenant General M. S. Rajendrasinhji; members of the family of the Ruler of Nawanagar for the purposes... 
  4. India at a glance: a comprehensive reference book on India 1954 - Page 1725
  5. Sen، Satadru (2012). Disciplined Natives: Race, Freedom and Confinement in Colonial India. Primus Books. ISBN 978-93-80607-31-3. 
  6. Board 2014, صفحہ۔ 21.
  7. "DR. RAJENDRASINH JADEJA". Marwadi University. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020. 
  8. "Who was the first Indian Chief of Army Staff of the". examveda.com. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020. 
  9. London Gazette 9 September 1941
  10. ^ ا ب پ ت ٹ "Press Communique" (PDF). Press Information Bureau of بھارت – Archive. اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2019. 
  11. ^ ا ب "Changes in Army Commands" (PDF). Press Information Bureau of India - Archive. 20 January 1948. اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2020. 
  12. "Who was Field Marshal KM Cariappa?". The Indian Express. 2020-01-20. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020. 
  13. Grewal، Kairvy (2020-05-15). "Field Marshal KM Cariappa, the man who told Pakistan not to release his captured son". ThePrint. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020. 
  14. "Pin by Examlover on Today In History June 2018 | Indian army, Army, Indian". Pinterest. اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020. 
  15. The London Gazette: no. 32804. p. . 9 مارچ 1923.
  16. The London Gazette: no. 32999. p. . 5 دسمبر 1924.
  17. The London Gazette: no. 33530. p. . 30 اگست 1929.
  18. The London Gazette: no. 34356. p. . 1 جنوری 1937.
  19. The London Gazette: no. 34608. p. . 17 مارچ 1939.
  20. ^ ا ب Indian Army List for اکتوبر 1945 (Part I). Government of بھارت Press. 1945. صفحہ 131. 
  21. The London Gazette: no. 38118. p. . 7 نومبر 1947.
  22. ^ ا ب "New Designs of Crests and Badges in the Services" (PDF). Press Information Bureau of بھارت – Archive. 8 اگست 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  23. "Part I-Section 4: Ministry of Defence (Army Branch)". The Gazette of India. 11 فروری 1950. صفحہ 227. 
  24. "Part I-Section 4: Ministry of Defence (Army Branch)". The Gazette of India. 27 مئی 1950. صفحہ 41. 
  25. ^ ا ب "Part I-Section 4: Ministry of Defence (Army Branch)". The Gazette of India. 11 جون 1955. صفحہ 113. 

نوٹ[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Upon independence in 1947, بھارت became a بھارت ڈومینین within the British دولت مشترکہ ممالک۔ As a result, the rank insignia of the برطانوی فوج، incorporating the Tudor Crown and four-pointed Bath Star ("pip")، was retained, as جارج ششم remained Commander-in-Chief of the بھارتی مسلح افواج۔ After 26 جنوری 1950, when بھارت became a بھارت، the صدر بھارت became Commander-in-Chief, and the Ashoka Lion replaced the crown, with a five-pointed star being substituted for the "pip."

کتابیات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]