راحیل شریف

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
راحیل شریف
 

مناصب
سربراہ پاک فوج   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
29 نومبر 2013  – 29 نومبر 2016 
اشفاق پرویز کیانی 
قمر جاوید باجوہ 
اسلامی فوجی اتحاد   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آغاز منصب
6 جنوری 2017 
معلومات شخصیت
پیدائش 16 جون 1956ء (68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کوئٹہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
عملی زندگی
مادر علمی گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور
پاکستان ملٹری اکیڈمی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ فوجی،  شریک بین الاقوامی فورم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
شاخ پاک فوج  ویکی ڈیٹا پر (P241) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عہدہ جرنیل  ویکی ڈیٹا پر (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کمانڈر اسلامی فوجی اتحاد
سربراہ پاک فوج
XXX کارپس
الیون انفنٹری ڈویژن
فرنٹيئر فورس رجمنٹ  ویکی ڈیٹا پر (P598) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لڑائیاں اور جنگیں شمال مغرب پاکستان میں جنگ،  آپریشن ضرب عضب  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

راحیل شریف افواج پاکستان کے 15ویں سربراہ تھے۔ 29 نومبر 2016ء پاک فوج کی کمان جنرل قمر جاوید باجوہ کو سونپ کر ریٹائرڈ ہوئے۔

خاندانی پس منظر[ترمیم]

راحیل شریف 16 جون 1956ء کو کوئٹہ کے ایک ممتاز فوجی گھرانے میں پیدا ہوئے۔[1][2] ان کے والد کا نام میجر محمد شریف بھٹی ہے۔ان کا تعلق گجرات کے نواحی گاؤں کنجاہ سے تھا ۔[1] ان کے بڑے بھائی میجر شبیر شریف شہید 1971 کی پاک بھارت جنگ میں شہید ہوئے اور انھیں نشان حیدر ملا۔[3] وہ تین بھائیوں اور دو بہنوں میں سب سے چھوٹے ہیں۔ ان کے دوسرے بھائی، ممتاز شریف بھٹی، فوج میں کیپٹن تھے۔[2] وہ میجر راجہ عزیز بھٹی، (گجرات. گاؤں لادیاں جنھوں نے 1965 ء کی بھارت پاکستان جنگ میں شہید ہو کر نشان حیدر وصول کیا ،کے بھانجے ہیں۔[4] راحیل شریف شادی شدہ ہیں اور ان کے دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے۔[1]

تعلیم اور فوجی سروس[ترمیم]

راحیل شریف نے گورنمنٹ کالج، لاہور سے باقاعدہ تعلیم حاصل کی اور اس کے بعد پاکستان ملٹری اکیڈمی میں داخل ہوئے۔ اکیڈمی کے 54ویں لانگ کورس کے فارغ التحصیل ہیں۔ 1976 ء میں گریجویشن کے بعد، انھوں نے فرنٹیئر فورس رجمنٹ، کی 6th بٹالین میں کمیشن حاصل کیا۔ نوجوان افسر کی حیثیت سے انھوں نے انفنٹری بریگیڈ میں گلگت میں فرائض سر انجام دیے۔ ایک بریگیڈیئر کے طور پر، انھوں نے دو انفنٹری بریگیڈز کی کمانڈ کی جن میں کشمیر میں چھ فرنٹیئر فورس رجمنٹ اور سیالکوٹ بارڈر پر 26 فرنٹیئر فورس رجمنٹ شامل ہیں۔[1][5]

9 دسمبر 2013، ریاست ہائے متحدہ امریکا کے سیکرٹری ڈیفنس چک ہیگل راحیل شریف سے اسلام آباد میں مصافحہ کرتے ہوئے

جنرل پرویز مشرف کے دور میں میجر جنرل راحیل شریف کو گیارہویں انفنٹری بریگیڈ کا کمانڈر مقرر کیا گیا۔ راحیل شریف ایک انفنٹری ڈویژن کے جنرل کمانڈنگ افسر اور پاکستان ملٹری اکیڈمی کے کمانڈنٹ رہنے کا اعزاز بھی رکھتے ہیں۔ راحیل شریف نے اکتوبر 2010 سے اکتوبر 2012 تک گوجرانوالہ کور کی قیادت کی۔ انھیں جنرل ہیڈ کوارٹرز میں انسپکٹر جنرل تربیت اور تشخیص رہنے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔[1]

چیف آف آرمی اسٹاف[ترمیم]

27 نومبر 2013 کو وزیر اعظم نواز شریف نے انھیں پاکستانی فوج کا سپاہ سالار مقرر کیا۔[3] ذرائع کے مطابق راحیل شریف سیاست میں عدم دلچسپی رکھتے ہیں۔ انھیں دو سینئر جرنیلوں، لیفٹیننٹ جنرل ہارون اسلم اور لیفٹیننٹ جنرل راشد محمود پر فوقیت دی گئی۔[6] ایک سینئر جنرل لیفٹیننٹ جنرل ہارون اسلم نے اسی وجہ سے فوج سے استعفی دیا۔[7] ایک اور سینئر جنرل، لیفٹیننٹ جنرل راشد محمود کو بعد ازاں چیئرمین جوائنٹ چیف آف سٹاف کمیٹی مقرر کر دیا گیا۔[8]
20 دسمبر 2013 کو راحیل شریف کو نشان امتیاز(ملٹری) سے نوازا گیا۔[9]

عوامی مقبولیت اور پزیرائی[ترمیم]

راحیل شریف نے جس وقت پاکستانی آرمی کی کمانڈ سنبھالی تو ملک میں امن و امان کی صورت حال انتہائی ابتر تھی۔ انھوں نے دہشت گردوں کے خلاف سخت موقف اختیار کیا اور سانحہ پشاور کے بعد پاکستان آرمی نے تمام تر ملک دشمن قوتوں کے خلاف بلا تفریق کارروائیاں کی۔ اس سے امن و امان کی صورت حال میں بہتری ہونے لگی اور راحیل شریف ملک میں ایک مقبول آرمی چیف کی حثیت سے ابھرے۔

راحیل شریف ایک آرمی چیف کی حیثیت سے 29 نومبر 2016ء تک خدمات انجام دے کر پاک فوج کی کمان جنرل قمر جاوید باجوہ کے حوالے کر دی۔

اسلامی ملٹری کاؤنٹر ٹیررازم کولیشن[ترمیم]

اپریل 2017ء میں راحیل شریف کو حکومت پاکستان کی طرف سے اسلامی ملٹری کاؤنٹر ٹیررازم کولیشن کے سربراہ کے طور پر کام کرنے کی منظوری ملی جس کا ہیڈ کوارٹر سعودی عرب میں ہے۔ [10][11]

اعزازات[ترمیم]

اعزازات برائے خدمت
سانچہ:Ribbon devices/alt اعزاز برائے 10 سال خدمت[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt اعزاز برائے 20 سال خدمت[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt اعزاز برائے 30 سال خدمت[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt کمانڈ اینڈ اسٹاف کالج سنچری اعزاز[12]
غیر آپریشنل اعزازات
سانچہ:Ribbon devices/alt نشان امتیاز[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt ہلال امتیاز[12]
یادگاری اعزازات
سانچہ:Ribbon devices/alt قرارداد پاکستان تمغا[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt تمغا استقلال[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt ہجری تمغا[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt تمغا جمہوریت[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt یوم آزادی جبیلی سنہرہ اعزاز[12]
سانچہ:Ribbon devices/alt تمغا بقا[12]
خارجہ اعزازات
سانچہ:Ribbon devices/alt آرڈر آف عبد العزیز آل سعود [13]
سانچہ:Ribbon devices/alt اعزاز برائے فوج میں میرٹ (ریاستہائے متحدہ امریکا)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ "Profile: Lt General Raheel Sharif"۔ Dawn۔ 27 نومبر 2013۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 نومبر 2013 
  2. ^ ا ب "Luck plays role in Gen Sharif's promotion"۔ The News۔ 28 نومبر 2013۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 دسمبر 2013 
  3. ^ ا ب Reuters (23 فروری 2011)۔ "Lt Gen Raheel Sharif appointed new army chief – دی ایکسپریس ٹریبیون"۔ Tribune.com.pk۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 نومبر 2013 
  4. "Lt. General Raheel Sharif Appointed as Chief of Army Staff"۔ Pakistan Tribune۔ 27 نومبر 2013۔ 28 نومبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 نومبر 2013 
  5. روزنامہ نواے وقت، 28 نومبر 2٠13
  6. Omar Waraich (2013-11-27)۔ "Gen. Raheel Sharif: Pakistan's New Army Chief Assumes Pivotal Job | TIME.com"۔ World.time.com۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 دسمبر 2013 
  7. "Haroon Aslam resigns following Gen Sharif's promotion to army chief"۔ Tribune۔ 28 نومبر 2013۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 دسمبر 2013 
  8. "Gen Raheel Sharif new COAS, Gen Rashad Mahmood CJCSC"۔ The News International۔ 28 نومبر 2013۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 دسمبر 2013 
  9. "President honours army chief, JCSC head with Nishan-e-Imtiaz"۔ Tribune۔ 20 دسمبر 2013۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 دسمبر 2013 
  10. "Retired Pakistani General in Riyadh to Lead Saudi Coalition"۔ 22 April 2017۔ 24 اپریل 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مئی 2017 
  11. Staff Writer (4 April 2017)۔ "Iran Regime Not OK With Islamic NATO"۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مئی 2017 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ "Raheel Sharif meets Chuck Hagel"۔ 9 دسمبر 2013۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 جولائی 2015 
  13. "Gen Raheel meets with Saudi political, military leadership"۔ Dawn۔ 5 فروری 2014۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 فروری 2014 
فوجی دفاتر
ماقبل  چیف آف آرمی سٹاف
2013 –29 نومبر 2016ء
مابعد