راہل سانکرتیاین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
راہل سانکرتیاین
Rahul Sankrityayan
دارجلنگ میں راہل کی مورتی
مقامی نامराहुल सांकृत्यायन
پیدائش9 اپریل 1893(1893-04-09)
بھارت ،اتر پردیش ،عظم گڑھ
وفات14 اپریل 1963(1963-40-14) (عمر  70 سال)
بھارت ،مغربی بنگال ،دارجلنگ
پیشہمصنف، مضمون نگار، اسکالر، سوشیالوجی، ہندوستانی قوم پرست، تاریخ، انڈولاجی، فلسفہ ، بدھ مت :، تبتولوجی ، لییکسگرافی ، گرائمر ، متنی ترمیم، لوک داستان]] ، سائنس ، ڈرامہ ، سیاست ، پولی میٹھ ، پولی گلوٹ
قومیتبھارتی
اہم اعزازات1958: ساہتیہ اکیڈمی اعزاز
1963: پدم بھوشن

راہل سانکرتیاین (ہندی: राहुल सांकृत्यायन؛ 9 اپریل 1893 – 14 اپریل 1963) کو ہندوستانی سفری سفر کا باپ کہا جاتا ہے۔ وہ وہی شخص ہے جنہوں نے نے سفر نامے کو ’ادب کی شکل‘ دینے کے لئے ایک اہم کردار ادا کیا، ہندوستان کے سب سے زیادہ سفر کرنے والے اسکالرز میں سے ایک تھے، جنہوں نے اپنی زندگی کے پینتالیس سال اپنے گھر سے دور سفر پر صرف کیے۔[1]

انہوں نے بہت سی جگہوں پر سفر کیا اور اسی سفر میں تقریبا اسی تناسب سے کئی سفر نامے لکھے۔ وہ اپنے سفری تجربات کے بارے میں مستند وضاحت کے لئے بھی مشہور ہے ، مثال کے طور پر اپنے سفر نامہ "میری لداخ یاترا" میں وہ اس خطے کی مجموعی علاقائی، تاریخی اور ثقافتی خصوصیات کو عدل و انصاف کے ساتھ پیش کرتے ہیں۔ وہ بدھ بھکشو بن گئے اور آخر کار انہوں نے مارکسی سوشلزم کو قبول کر لیا۔[1] سانکرتیاین ایک ہندوستانی قوم پرست بھی تھے، جنہیں برطانوی مخالف تحریریں اور تقاریر تخلیق کرنے کے الزام میں تین سال قید اور جیل میں بند کیا گیا تھا۔[1] ان کو اپنے وظیفے کے لئے ’مہاپنڈت‘ (عظیم ترین اسکالر) کہا جاتا ہے۔[1] وہ ایک کثیر الجہت کے ساتھ ساتھ ایک کثیر الجماعت دونوں ہی تھے۔[1] حکومت ہند نے انھیں 1963ء میں پدم بھوشن کا سویلین اعزاز سے نوازا۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ Sharma، R.S. (2009). Rethinking India's Past. Oxford University Press. ISBN 978-0-19-569787-2. 
  2. "Padma Awards" (PDF). Ministry of Home Affairs, Government of India. 2015. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2015.