رضا ہارون

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد رضا ہارون
معلومات شخصیت
پیدائش 4 اکتوبر 1965ء (عمر 54 سال)
کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
جماعت پاک سرزمین پارٹی (مارچ 2016)
زوجہ بشری رضا
والدین محمد ہارون (والد)
عملی زندگی
تعليم B.Com
BSc
مادر علمی جامعہ کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

محمد رضا ہارون (پیدائش 4 اکتوبر 1965) ایک پاکستانی سیاست دان ہیں جو پہلے متحدہ قومی موومنٹ (ایم کوی ایم) کے اہم رہنما تھے، مارچ 2016ء میں پاک سرزمین پارٹی میں شامل ہو گئے۔[1][2]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

رضا ہارون نے جامعہ کراچی سے بی کام کیا اور بی ایس سی کمپیوٹر سائنس میں کراچی میں قائم ایک غیر ملکی نجی جامعہ سے کیا۔[3]

سیاسی دور[ترمیم]

رضا ہارون نے 1987ء میں متحدہ قومی موومنٹ میں شمولیت اختیار کی اور لندن میں 1994ء آپریشن کلین-اپ کے بعد لندن چلے گئے۔ 2007ء میں، پاکستان واپس آئے۔[4] اور صوبائی اسمبلی کے رکن متحدہ قومی مومنٹ کے ٹکٹ پر حلقہ پی ایس۔115 (کراچی) 2008ء میں منتخب ہوئے۔[5] اور 2009ء میں سندھ کے صوبائی وزیر بطور انفارمیشن اینڈ ٹیکنالوجی کے خدمات انجام دیں۔[6]

مارچ 2016ء میں، متحدہ قومی موومنٹ چھوڑ کر سید مصطفیٰ کمال کی نئی سیاسی جماعت پاک سرزمین پارٹی میں شمولیت اختیار کر لی۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Government profile – Muhammad Raza Haroon"۔ مورخہ 6 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2012۔
  2. "MQM to welcome if polls postponed: Haroon"۔ The News Int۔ 28 اپریل 2013۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2015۔
  3. ^ ا ب "Major blow to MQM as Raza Haroon joins Kamal"۔ Dawn۔ 15 مارچ 2016۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 مارچ 2016۔
  4. "Raza Haroon — a profile"۔ Dawn۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2015۔
  5. "Profile"۔ Sindh Assembly۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2015۔
  6. "Profile"۔ Pakistan Herald۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2015۔