رفعت سروش

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ترقی پسند تحریک کے اردو شاعر۔ دو جنوری 1926ء کو ضلع بجنور کے نگینہ میں پیدا ہوئے۔ اس وقت کا ماحول ایک انقلابی ماحول تھا جس کا ان کی سوچ اور ان کے نظریے پر اثر پڑا۔ اس وقت متعدد انقلابی تحریکیں سماج پر اپنے اثرات مرتب کر رہی تھیں اور چونکہ رفعت سروش ایک حساس ذہن کے مالک تھے اس لیے انھوں نے ان تحریکوں کے اثرات قبول کیے۔ کسانوں اور مزدوروں کی تحریکوں نے بھی ان کو متاثر کیااور وہ تمام اثرات ان کی تخلیقی سوچ پر حاوی رہے ۔

انھوں نے جس وقت ادبی دنیا میں قدم رکھا ‘اس وقت ترقی پسند تحریک اپنے شباب پر تھی اور سجاد ظہیرعلی سردار جعفریجوش ملیح آبادی‘ اسرار الحق مجازفیض احمد فیضساحر لدھیانوی اورکیفی اعظمی وغیرہ کی مقبولیت عام تھی۔ انھوں نے ان ادیبوں اور شاعروں کے اثرات بھی قبول کیے۔

رفعت سروش نے اپنی ادبی زندگی کے آغاز میں سجاد ظہیر‘ سردار جعفری‘ کیفی اعظمی‘اختر الایمان‘ باقر مہدی‘ ساحر لدھیانوی‘ مجروح سلطانپوریرضیہ سجاد ظہیر اور عصمت چغتائی کے ساتھ ترقی پسند انجمن کی سرگرمیوں میں حصہ لیا اور بہت جلد ترقی پسند مصنفین کی صف اول میں شامل ہو گئے۔ انھوں نے اسی کی ساتھ اردو ادب میں کئی نئے تجربے کیے۔ انھوں نے آل انڈیا ریڈیو کی اردو مجلس میں جب ملازمت اختیار کی تو کسی کو یہ اندازہ نہیں تھا کہ وہ اردو مجلس سے نشر کی جانے والی تخلیقات کو اتنا بلند مرتبہ عطا کر دیں گے۔ انھوں نے ریڈیو میں منظوم ڈراموں کی ابتدا کی جس میں وہ بڑی حد تک کامیاب رہے۔ اردو ادب کو انہوں نے87 کتابیں دی ہیں، جن میں شاعریافسانہتنقیدڈراما اور تاریخ وغیرہ پر کتب شامل ہیں۔84 سال کی عمر میں 2008 میں ان کا انتقال ہوا۔

نمونہ کلام[ترمیم]

ایک چھپر کا گھر نیم کے سائے میں
اونگھتا ہے دھندلکے میں لپٹا ہوا
شام کا وقت ہے اور چولھا ہے سرد
صحن میں ایک بچہ برہنہ بدن
باسی روٹی کا ٹکڑا لیے ہاتھ میں
سر کھجاتا ہے‘ جانے ہے کس سوچ میں
اور اسارے میں آٹے کی چکی کے پاس
ایک عورت پریشان خاطر اداس
اپنے رخ پر لیے زندگی کی تھکن
سوچتی ہے کہ دن بھر کی محنت کے بعد
آج بھی روکھی روٹی ملے گی ہمیں
تم حقارت سے کیوں دیکھتے ہو اسے
دوست! یہ میرے بچپن کی تصویر ہے

خودنوشت[ترمیم]

بمبئی کی بزم آرائیاں، خودنوشت-رفعت سروش۔ نورنگ کتاب گھر دہلی-1986

http://www.scribd.com/doc/193810455/Bumbai-Ki-Bazam-Araiyan-Autobiography-Rifat-Saroosh-Dehli-1986