رفیع اللہ شہاب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
رفیع اللہ شہاب
معلومات شخصیت
پیدائش 15 مئی 1931  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
میانوالی،  برطانوی پنجاب  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 5 جنوری 2003 (72 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لاہور،  پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
تعلیمی اسناد ماسٹر آف آرٹس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیمی اسناد (P512) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ مصنف،  مؤرخ،  عالم  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان اردو،  انگریزی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل تحریک پاکستان،  فقہ،  سیرت نبوی،  تاریخ پاکستان،  اسلامی معاشیات  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
ملازمت گورنمنٹ کالج لاہور  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں نوکری (P108) ویکی ڈیٹا پر
P literature.svg باب ادب

پروفیسر رفیع اللہ شہاب (پیدائش: 15 مئی، 1931ء - وفات: 5 جنوری، 2003ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے ماہر تعلیم، مؤرخ، دانشور، محقق، اسلامی علوم کے ماہر اور گورنمنٹ کالج لاہور کے سابق صدر شعبہ عربی و اسلامیات تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

رفیع اللہ شہاب 15 مئی، 1931ء کو میانوالی، صوبہ پنجاب (برطانوی ہند) میں پیدا ہوئے۔[1][2]۔ ابتدائی تعلیم میانوالی سے حاصل کی۔ میانوالی کے نزدیک خانقاہ سراجیہ میں کچھ عرصہ پڑھتے رہے۔ 1953ء میں بی اے پاس کیا۔ اس کے بعد ایم اے عربی اور اسلامیات کرنے کے بعد ریلوے پبلک اسکول (موجودہ ایبٹ آباد پبلک اسکول) میں پڑھایا۔ 1960ء میں پبلک سروس کمیشن کا امتحان پاس کر کے گورنمنٹ کالج گوجر خان میں تعیناتی ہوئی، وہاں 1979ء میں عربی ا ور اسلامیات پڑھاتے رہے۔ 1979ء میں پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور میں بطور ماہر مضمون عربی مقرر ہوئے اور 1985ء میں گورنمنٹ کالج لاہور میں شعبہ عربی کے سربراہ مقرر ہوئے جہاں سے مئی 1991ء میں ریٹائر ہوگئے۔[3]

فیع اللہ شہاب نے 1960ء سے اخبارات و رسائل میں لکھنا شروع کیا۔ ماہنامہ فکر و نظر، ماہنامہ طلوع اسلام، سہی ماہی معارف، روزنامہ امروز، فرنٹیر پوسٹ میں اور پاکستان ٹائمز میں ان کی تخلیقات شائع ہوئیں۔ اس کے بعد دی نیشن کا اجراء ہوا تو اس میں محمد شعیب عادل کے نام سے کافی عرصہ تک لکھتے رہے۔[3] انہوں نے اسلامی موضوعات خاص کر قرآن، فقہ، اسلامی مالیات، اسلام کا عدالتی نظام، اسلام میں عورت کے حقوق و فرائض اور تاریخ شامل ہیں پر بیس سے زائد کتب تحریرکیں۔[2]

تصانیف[ترمیم]

  • سیرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم
  • لسان القرآن
  • منصب حکومت اور مسلمان عورت
  • اسلامی ریاست کا مالیاتی نظام
  • احکام القرآن میں تحریف
  • اسلامی ریاست کا عدالتی نظام
  • شریعت اسلامی اور خاندانی منصوبہ بندی
  • اسلامی تہوار اور رسومات
  • اسلامی معاشرہ
  • اسلام کا ازدواجی نظام* کرایہ مکانات کی شرعی حیثیت
  • موسیقی کی شرعی حیثیت
  • اجتہادی اختلافات
  • طبِ نبوی
  • عورتوں کے بارے مین اسلامی احکامات
  • عورتون کے اسلامی حقوق
  • اسلامی مشاعرہ
  • Islamic Finance and Banking
  • History of Pakistan
  • Rights of women in Islamic Shariah
  • Allama Iqbal on Islamic Thought
  • Muslim women in Political Power
  • Islamic civilization
  • Fifty Years of Pakistan
  • Genesis of Pakistan

وفات[ترمیم]

رفیع اللہ شہاب 5 جنوری، 2003ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ لاہور میں فیروز پور روڈ اچھرہ پر واقع قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔[1][2][3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب رفیع اللہ شہاب، بائیو ببلوگرافی ڈاٹ کام، پاکستان
  2. ^ ا ب پ عقیل عباس جعفری: پاکستان کرونیکل، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء، ص 907
  3. ^ ا ب پ ایم آر شاہد، لاہور میں مدفون مشاہیر (جلد دوئم)، الفیصل ناشران و تاجرانِ کتب، لاہور، جون 2008ء، ص 231