روبیل حسین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
روبیل حسین
Rubel Hossain (2) (cropped).jpg
ذاتی معلومات
مکمل ناممحمد روبیل حسین
پیدائش1 جنوری 1990ء (عمر 32 سال)
باگرہٹ ضلع, کھلنا ڈویژن, بنگلہ دیش
قد1.8 میٹر (5 فٹ 11 انچ)
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا تیز گیند باز
حیثیتگیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 56)9 جولائی 2009  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
آخری ٹیسٹ4 جولائی 2018  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
پہلا ایک روزہ (کیپ 94)14 جنوری 2009  بمقابلہ  سری لنکا
آخری ایک روزہ28 ستمبر 2018  بمقابلہ  بھارت
ایک روزہ شرٹ نمبر.34
پہلا ٹی206 جون 2009  بمقابلہ  بھارت
آخری ٹی205 اگست 2018  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
2007/08–تاحالچٹاگانگ ڈویژن
2012چٹاگانگ کنگز
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ ٹی 20 آئی فرسٹ کلاس
میچ 24 83 16 47
رنز بنائے 220 100 12 407
بیٹنگ اوسط 9.56 5.88 6.00 8.84
100s/50s 0/0 0/0 0/0 0/0
ٹاپ اسکور 45* 17 8* 45*
گیندیں کرائیں 3834 3290 272 6475
وکٹ 32 107 17 73
بالنگ اوسط 77.93 33.86 30.28 63.30
اننگز میں 5 وکٹ 1 1 0 3
میچ میں 10 وکٹ 0 n/a 0 0
بہترین بولنگ 5/166 6/26 3/31 5/22
کیچ/سٹمپ 11/– 11/– 1/– 17/–
ماخذ: ESPNCricinfo,، 28 ستمبر 2018

محمد روبیل حسین (بنگالی: মোহাম্মদ রুবেল হোসেন)‏ (پیدائش: 1 جنوری 1990ء) ایک بنگلہ دیشی کرکٹر ہے۔ اس نے جنوری 2009ء میں بنگلہ دیش کے لیے [1] سال کی عمر میں بین الاقوامی کرکٹ میں قدم رکھا۔ ان کے پاس کسی بھی تیز گیند باز کے مقابلے میں سب سے زیادہ بولنگ اوسط ہے جس نے ٹیسٹ کرکٹ میں کم از کم 2000 گیندیں کیں۔ وہ ایک تیز گیند باز ہے جس کا ایک اچھا ایکشن لاستھ ملنگا کی طرح ہے۔ حسین کے پاس بنگلہ دیشی کرکٹر کی طرف سے تیز ترین گیند بازی (149.5 کلومیٹر فی گھنٹہ) کا ریکارڈ ہے۔ [2]

ابتدائی اور ڈومیسٹک کیریئر[ترمیم]

حسین کا فرسٹ کلاس ڈیبیو 2007ء میں چٹاگانگ ڈویژن کے لیے آیا جہاں اس نے کھلنا ڈویژن کے خلاف 1/137 کے میچ کے اعداد و شمار حاصل کیے۔ نیشنل کرکٹ لیگ میں اچھی پرفارمنس کے بعد، اسے بنگلہ دیش کی انڈر 19 ٹیم اور اس کے فوراً بعد، بنگلہ دیش اے ٹیم کے لیے کھیلنے کے لیے منتخب کیا گیا۔ بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ نے 2012ء میں چھ ٹیموں پر مشتمل بنگلہ دیش پریمیئر لیگ کی بنیاد رکھی، ایک ٹوئنٹی 20 ٹورنامنٹ اسی سال فروری میں منعقد ہونا تھا۔ [3] کھلاڑیوں کو خریدنے کے لیے ٹیموں کی نیلامی ہوئی، [4] اور حسین کو سلہٹ رائلز نے $70,000 میں خریدا۔ [5] اکتوبر 2018ء میں بنگلہ دیش پریمیئر لیگ 2018-19 کے ڈرافٹ کے بعد، انہیں ڈھاکہ ڈائنامائٹس ٹیم کے اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔ [6] نومبر 2019 میں، اسے 2019-20 بنگلہ دیش پریمیئر لیگ میں چٹوگرام چیلنجرز کے لیے کھیلنے کے لیے منتخب کیا گیا۔ [7] حسین نے ڈیلیوری کی ایک تکنیک ایجاد کی جس کا نام 'بٹر فلائی' ہے۔

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

حسین کو سری لنکا اور زمبابوے کے ساتھ سہ فریقی سیریز کے لیے ایک روزہ بین الاقوامی سکواڈ میں شامل کیا گیا تھا اور اس نے راؤنڈ رابن مرحلے کے تیسرے کھیل میں اپنا آغاز کیا تھا، یہ کھیل بنگلہ دیش کو فائنل میں جانے کے لیے جیتنا تھا۔ اس نے 5.3 اوورز میں 4 وکٹیں لے کر مڈل آرڈر اور ٹیل اینڈرز کو صاف کیا۔ اس نے سہ فریقی سیریز کا فائنل بھی کھیلا، جہاں اس کا کھیل کا انجام خراب رہا، لیکن اس کے فوراً بعد زمبابوے کے خلاف تین ون ڈے سیریز کے لیے اپنی جگہ برقرار رکھی۔ مزید اچھی کارکردگی کے باعث ان کا نام پہلی بار ویسٹ انڈیز کا سامنا کرنے والے ٹیسٹ اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔ اس نے اپنا ڈیبیو آرنوس ویل میں کیا، اور ویسٹ انڈیز کی پہلی اننگز میں تین وکٹیں حاصل کیں، اور بنگلہ دیش کی پہلی اننگز میں شہادت حسین کے ساتھ 10ویں وکٹ کی اچھی شراکت داری بھی کی۔ حسین نے دو ٹوئنٹی 20 میچوں میں بھی حصہ لیا ہے، دونوں 2009 کے آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں آئے تھے۔ انہوں نے 149.5 کی گیند کی۔ 2009 کے آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے وارم اپ گیم میں کلومیٹر فی گھنٹہ۔میرپور میں نیوزی لینڈ کے خلاف 6/26 کی ان کی بہترین ون ڈے شخصیت، جہاں انہوں نے ہیٹ ٹرک بھی کی، ESPNcricinfo کی طرف سے سال 2013 کی بہترین ون ڈے بولنگ کارکردگی میں سے ایک کے لیے نامزد کیا گیا۔ [8] اپریل 2018 میں، حسین ان دس کرکٹرز میں سے ایک تھے جنہیں بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ نے 2018 کے سیزن سے قبل سینٹرل کنٹریکٹ سے نوازا تھا۔ [9] اپریل 2019 میں، انہیں 2019 کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے بنگلہ دیش کی ٹیم میں شامل کیا گیا۔ [10] [11] ستمبر 2021 میں، انہیں 2021 کے آئی سی سی مینز ٹی 20 ورلڈ کپ کے لیے بنگلہ دیش کے سکواڈ میں دو ریزرو کھلاڑیوں میں سے ایک کے طور پر نامزد کیا گیا۔ [12] 26 اکتوبر 2021 کو، محمد سیف الدین کے کمر کی انجری کی وجہ سے باہر ہونے کے بعد، انہیں ٹورنامنٹ کے لیے بنگلہ دیش کے مرکزی اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔ [13]

تنازعات[ترمیم]

بنگلہ دیشی اداکارہ نازنین اختر ہیپی کی جانب سے عصمت دری کے الزامات کے بعد بنگلہ دیشی پولیس نے حسین کو گرفتار کر لیا۔ وہ تین دن تک حراست میں رہے، بعد ازاں عدالت نے انہیں 2015 کے کرکٹ ورلڈ کپ میں شرکت کے لیے ضمانت دے دی۔ انگلینڈ کے خلاف بنگلہ دیش کی فتح پر، جس میں حسین نے مرکزی کردار ادا کیا، نازنین نے الزامات واپس لے لیے۔ [14] انگلینڈ کے خلاف روبیل کی کارکردگی کی وجہ سے ہیپی کے وکیل ڈیبل ڈے نے کیس میں یہ کہتے ہوئے اپنی شرکت ختم کردی کہ ’’بنگلہ دیش کو کامیاب ہوتے دیکھ کر اب میں روبیل کے خلاف لڑنا نہیں چاہتا۔ روبیل کو کوئی دباؤ محسوس نہیں کرنا چاہیے۔"

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Rubel Hossain". ای ایس پی این کرک انفو (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 12 اگست 2021. 
  2. "Rubel fastest bowler of Bangladesh". Cricbuzz. 
  3. Engineer، Tariq (28 December 2011). "Bangladesh Premier League to begin on February 9". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 20 جنوری 2012. 
  4. Isam، Mohammad (19 January 2012). "Afridi and Gayle fetch highest BPL prices". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 20 جنوری 2012. 
  5. "Bangladesh Premier League: players standing after auction" (PDF). ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 20 جنوری 2012. 
  6. "Full players list of the teams following Players Draft of BPL T20 2018-19". Bangladesh Cricket Board. 28 مارچ 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 اکتوبر 2018. 
  7. "BPL draft: Tamim Iqbal to team up with coach Mohammad Salahuddin for Dhaka". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2019. 
  8. "Saeed strikes, Mitch monsters". ای ایس پی این کرک انفو. اخذ شدہ بتاریخ 12 اگست 2021. 
  9. "BCB cuts contracts list for 2018 to ten". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2018. 
  10. "Bangladesh pick ODI newbie Abu Jayed for World Cup". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2019. 
  11. "Shakib, Jayed, Hossain in Bangladesh squad for World Cup". International Cricket Council. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2019. 
  12. "No surprises as Bangladesh name Mahmudullah-led squad for T20 World Cup". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2021. 
  13. "Injured Bangladesh star ruled out of World Cup". International Cricket Council. اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2021. 
  14. "Naznin Akter Happy drops rape charges against Rubel Hossain". news.com.au. اخذ شدہ بتاریخ 20 جون 2016.