رکمنی دیوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
رکمنی دیوی
Rukmini Devi.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 29 فروری 1904[1][2][3]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدورائے  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 24 فروری 1986 (82 سال)[1][4][2]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
چنائے[5]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)[6]
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
رکن راجیہ سبھا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
1956  – 1986 
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان[7]،  رقاصہ[8]  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
سنگیت ناٹک اکادمی ایوارڈ  (1957)[9]
IND Padma Bhushan BAR.png پدم بھوشن  (1956)[10]  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

رکمنی دیوی اروندلے 29 فروری 1904) - 24 فروری 1986) [11] ایک ہندوستانی رقاصہ اور کلاسیکی رقص فارم بھرتانایم کی کوریوگرافر ہیں۔وہ ہندوستانی تاریخ کی پہلی خاتون تھیں جنھیں راجیہ سبھا کی ممبر نامزد کیا گیا تھا۔رکمنی دیوی کو اپنی خصوصیات کی وجہ سے بھارت کی سو خواتین کی فہرست میں شامل کیا گیا جنھوں نے بھارت کے لیے کام کیا ۔ [12] انہیں 1956 میں پدم بھوشن ، [13] اور 1967 میں سنگت ناٹک اکیڈمی فیلوشپ سے نوازا گیا تھا۔

سیرت[ترمیم]

ابتدائی زندگی اور شادی[ترمیم]

رکمنی دیوی فروری 1904 کو پیدا ہوئیں۔ان کے والد نیلکانتہ شاستری محکمہ تعمیرات عامہ میں انجینئر اور اسکالر تھے اور ششمال میوزک کے شوقین تھے۔انھیں 1901 میں تھیوسوفیکل سوسائٹی میں متعارف کرایا گیا تھا۔ڈاکٹر اینی بسنت کے پیروکار کی حیثیت سے تھیوسوفیکل موومنٹ سے شدید متاثر ہوئے نیلکانتہ شاستری ریٹائرمنٹ کے بعد اڈیئر چنئی چلے گئے جہاں انہوں نے تیوسوفیکل سوسائٹی اڈیئر کے صدر دفتر کے قریب اپنا گھر تعمیر کیا۔ یہیں پر نوجوان رکمینی کو صرف نظریاتی فکر ہی نہیں بلکہ ثقافت ، تھیٹر ، موسیقی اور رقص سے متعلق نئے آئیڈیاز سے بھی روشناس کیا گیا تھا۔ اینی بسنت کے قریبی ساتھی اور بعد میں وارانسی میں سنٹرل ہندو کالج کے پرنسپل کے ساتھ ممتاز برطانوی تھیوسوفسٹ ڈاکٹر جارج ارونڈیل سے ان کی ملاقات نے ان کے ساتھ پائیدار رشتہ قائم کرنے پر زور دیا۔ [14] انھوں نے 1920 میں شادی کی۔ اس شادی سے قدامت پسند معاشرے کو صدمہ پہنچا تھا۔ [15] شادی کے بعد ، اس نے دنیا بھر کا سفر کیا ساتھی تھیسوفسٹس سے ملاقات کی اور ماریہ مونٹیسوری اور شاعر جیمز کزنز سے ان کی دوستی بھی ہوئی۔ [11] 1923 میں وہ آل انڈیا فیڈریشن آف ینگ تھیسوفسٹس کی صدر اور 1925 میں ورلڈ فیڈریشن آف ینگ تھیوسوفسٹس کی صدر بن گئیں۔[16]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6tc1g3k — بنام: Rukmini Devi Arundale — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Rukmini-Devi-Arundale — بنام: Rukmini Devi Arundale — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  3. بنام: Rukmini Devi Arundale — PLWABN ID: http://mak.bn.org.pl/cgi-bin/KHW/makwww.exe?BM=1&NU=1&IM=4&WI=9810947264805606
  4. https://www.thehindu.com/entertainment/dance/a-performance-that-became-the-turning-point-for-performing-arts/article22296707.ece — اخذ شدہ بتاریخ: 29 جولا‎ئی 2018
  5. https://www.livemint.com/Leisure/1y3EA1cpOU9eOW5TAMCtTJ/The-reinvention-of-Bharatanatyam.html — اخذ شدہ بتاریخ: 29 جولا‎ئی 2018
  6. https://www.thehindu.com/thehindu/mag/2003/03/16/stories/2003031600400500.htm — اخذ شدہ بتاریخ: 29 جولا‎ئی 2018
  7. http://theosophy.wiki/w-en/index.php?title=Rukmini_Devi_Arundale — اخذ شدہ بتاریخ: 3 مارچ 2018
  8. https://www.britannica.com/biography/Rukmini-Devi-Arundale — اخذ شدہ بتاریخ: 3 مارچ 2018
  9. http://sangeetnatak.gov.in/sna/citation_popup.php?id=297&at=1 — اخذ شدہ بتاریخ: 3 مارچ 2018
  10. https://www.thebetterindia.com/90623/rukmini-devi-arundale-bharatnatyam-kalakshetra-president/ — اخذ شدہ بتاریخ: 3 مارچ 2018
  11. ^ ا ب Sharma, Shoba and Gangadean, Ashok (January 31, 2004) Rukmini Devi Arundale Centenary Celebration at Haverford College, February 28, 2004 آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ naatya.org [Error: unknown archive URL]. Naatya.org. Retrieved on 10 December 2018.
  12. Raman, N. Pattabhi. Rukmini Devi. India Today
  13. "Padma Awards" (PDF). Ministry of Home Affairs, Government of India. 2015. 15 اکتوبر 2015 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2015. 
  14. "Rukmini Devi Arundale: A life dedicated to Art". ریڈف ڈاٹ کوم. March 2004. 
  15. "A tribute to Rukmini Devi Arundale". specials.rediff.com. 2004-03-08. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020. Though Rukmini Devi's mother was supportive of her decision (her father had passed away by then), there were strong protests from relatives and the community. The public protest was so bad that the couple was forced to marry in Mumbai. Dr. Besant stood by them. At her instance, the governor of Madras hosted a reception for the Arundales when they returned. It amused Rukmini Devi to see all those people who opposed her marriage at the reception 
  16. Meduri, Avanthi (2 March 2001) Rukmini Devi, the visionary. The Hindu.