ریبیز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Dog with rabies.jpg
لقوہ زدہ (پوسٹ پھيرس) مرحلے میں ریبيز والا ایک کتا
جماعت بندی اور بیرونی ذرائع
آئی سی ڈی-10A82.
بنیادی معلومات11148
میڈ لائین پلس001334
ای میڈیسنmed/1374 eerg/493 ped/1974
عنواناتD011818

ریبیز ایک وائرس سے پیدا ہونے والی بیماری ہے جس کی وجہ سے انتہائی تیز التہاب دماغ (Encephalitis) انسانوں اور دیگر گرم خون والے جانوروں میں ہوتی ہے۔[1] ابتدائی علامات میں بخار اور اکسپوزر کے مقام پر سنسناہٹ شامل ہو سکتی ہے[1] ان علامات کے بعد مندرجہ ذیل ایک یا کئی علامات ہوتی ہیں: پرتشدد سرگرمی، بے قابو اشتعال،آب تَرسیدگی (Hydrophobia) یا پانی کا خوف، جسم کے اعضاء کو ہلانے کی ناقابلیت، ذہنی انتشار اور ہوش کھونا۔[1] علامات ظاہر ہونے کے بعد، ریبیز کا نتیجہ تقریبا ہمیشہ موت ہے۔[1] مرض کی منتقلی اور علامات کے آغاز کے درمیان کی مدت عام طور پر ایک سے تین ماہ ہوتی ہے۔ تاہم، یہ وقت کی مدت ایک ہفتے سے کم سے لے کر ایک سال سے زیادہ تک میں بدل سکتی ہے۔[1] اس وقت کی مدت اس فاصلے پر منحصر ہے جسے وائرس کے لیے مرکزی اعصابی نظام تک پہنچنے کے لیے طے کرنا ضروری ہے۔[2]

وجہ اور بیماری کی تشخیص[ترمیم]

ریبیز انسانوں میں دیگر جانوروں سے منتقل ہوتا ہے۔ جب کوئی متاثرہ جانور کسی دوسرے جانور یا انسان کو كھرونچتا یا کاٹتا ہے تب ریبیز منتقل ہو سکتا ہے۔[1] کسی متاثرہ جانور کے لعاب سے بھی ریبیز منتقل ہو سکتا ہے اگر لعاب کسی دوسرے جانور یا انسان کے میوکس جھلی (Mucous Membrane) کے رابطے میں آتا ہے۔[1] انسانوں میں ریبیز کے زیادہ تر معاملے کتوں کے کاٹنے سے ہوتے ہیں۔[1] ان ممالک میں جہاں کتوں میں عام طور پر ریبیز ہوتے ہیں، ریبیز کے 99 فیصد سے زائد معاملے کتوں کے کاٹنے سے ہوتے ہیں۔[3] امریکا میں، انسانوں میں ریبیز انفیکشن کا سب سے عام ذریعہ چمگادڑ کا کاٹنا ہے اور 5 فیصد سے کم معاملے کتوں سے ہوتے ہیں۔[1][3] کترنے والے جانور (Rodents) بہت کم ہی ریبیز سے متاثر ہوتے ہیں۔[3] ریبیز وائرس محیطی اعصاب (peripheral nerves) کے ذریعے دماغ تک پہنچ جاتا ہے۔ بیماری کی شناخت صرف علامات کے آغاز کے بعد ہی کی جا سکتی ہے۔[1]

روک تھام اور علاج[ترمیم]

جانوروں پر قابو اور ٹیکہ کاری پروگرام سے دنیا کے بہت سے علاقوں میں کتوں سے ریبیز ہونے کا خطرہ کم ہوا ہے۔[1] جو لوگ زیادہ خطرے میں ہیں، انہیں بیماری کے رابطے میں آنے سے پہلے ٹیکے (Immunize) لینے کی سفارش کی جاتی ہے۔ زیادہ خطرے کے گروپ میں وہ لوگ شامل ہیں جو چمگادڑوں پر کام کرتے ہیں یا جو دنیا کے ان علاقوں میں طویل مدت گزارتے ہیں جہاں ریبیز عام ہے۔[1] ان لوگوں میں جو ریبیز کے رابطے میں آتے ہیں، ریبیز ٹیکہ اور کبھی کبھی ریبیز امينوگلوبلن مرض سے بچانے میں مؤثر ہیں اگر ریبیز کے علامات شروع ہونے سے پہلے شخص کا علاج ہوتا ہے۔[1] کاٹنے کی جگہ اور خروں چ کو 15 منٹ تک صابن اور پانی، پوويڈون آئوڈین یا ڈیٹرجنٹ سے دھونا، کیوں کہ یہ وائرس کو مار سکتے ہیں، بھی کچھ حد تک ریبیز کی روک تھام میں موثر ظاہر ہوتے ہیں۔[1] علامات کے ظہور کے بعد، صرف کچھ ہی شخص ریبیز انفیکشن سے بچے ہیں۔ ان کا جامع علاج ہوا تھا جسے ملووکی پروٹوکول کے نام سے جانا جاتا ہے۔[4]

ٹیکہ[ترمیم]

ریبیز کا ٹیکہ ایک ٹیکہ ہے جو ریبیز کی روک تھام میں استعمال کیا جاتا ہے۔[5] یہ بڑی تعداد میں دستیاب ہیں جو محفوظ اور مؤثر دونوں ہیں۔ وائرس کے تعلق میں آنے کے پہلے اور تعلق، جیسے کتا یا چمگادڑ کے کاٹنے، کے بعد ایک مدت کے لیے ریبیز کی روک تھام میں ان کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔ تین خوراک کے بعد جو قوت مدافعت پیدا ہوتی ہے وہ طویل وقت تک رہتی ہے۔ انہیں عام طور پر جلد یا پٹھوں میں انجکشن کے ذریعہ دیا جاتا ہے۔ تعلق میں آنے کے بعد ٹیکہ عام طور پر ریبیز امينوگلوبیولن کے ساتھ استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ سفارش کی جاتی ہے کہ جو تعلق میں آنے کے زیادہ جوكھم پر ہیں وہ تعلق میں آنے سے پہلے ٹیکہ لگوا لیں۔ انسانوں اور دوسرے جانوروں میں ٹیکہ کاری مؤثر ہے۔ کتوں کا ٹیکہ کاری کرنا بیماری کو انسانوں میں روکنے میں بہت مؤثر ہے۔[5]

تحفظ[ترمیم]

عالمی سطح پر لاکھوں لوگوں کو ٹیکہ لگایا گیا ہے اور یہ اندازہ کیا گیا ہے کہ اس سے ایک سال میں 250،000 سے زیادہ لوگوں کی جان بچی ہے۔[5] ان کا استعمال محفوظ طریقے سے عمر کے سبھی گروپوں میں کیا جا سکتا ہے۔ تقریبا 35 سے 45 فیصد لوگوں میں مختصر مدت تک سوئی کے مقام پر لالی اور درد ہوتا ہے۔ تقریبا 5 سے 15 فیصد لوگوں کو بخار، سردرد یا متلی ہو سکتی ہے۔ ریبیز کے تعلق میں آنے کے بعد اس کے استعمال میں کوئی تضاد نہیں ہے۔ زیادہ تر ٹیکوں میں Thimerosal شامل نہیں ہوتا ہے۔ کچھ ممالک میں، خاص طور پر ایشیا اور لاطینی امریکا میں، اعصابی بافت (Nerve Tissue) سے بنے ٹیکوں کا استعمال ہوتا ہے، لیکن یہ کم مؤثر اور زیادہ ضمنی اثرات والے ہوتے ہیں۔ لہذا عالمی ادارہ صحت کی طرف سے ان کے استعمال کی سفارش نہیں کی جاتی ہے۔[5]

2014 کے مطابق علاج کے ایک کورس کے لیے تھوک قیمت 44 اور 78 امریکی ڈالر کے درمیان ہے۔[6] ریاست ہائے متحدہ امریکا میں ریبیز ویکسین کے ایک کورس کی قیمت 750 امریکی ڈالر سے زیادہ ہے۔[7]

علم امراض وبائی (Epidemiology)[ترمیم]

ریبیز کی وجہ سے عالمی سطح پر ہر سال تقریبا 26،000 سے 55،000 اموات ہو جاتی ہے۔[1][8] ان میں سے 95 فیصد سے زائد اموات ایشیا اور افریقا میں ہوتی ہیں۔[1] ریبیز 150 سے زائد ممالک میں اور انٹارکٹیکا کے علاوہ تمام براعظموں پر موجود ہے۔[1] 3 ارب سے زیادہ لوگ دنیا کے ان علاقوں میں رہتے ہیں جہاں ریبیز ہوتا ہے۔[1] یورپ اور آسٹریلیا کے زیادہ تر علاقوں میں، ریبیز صرف چمگادڑوں میں ہی موجود ہوتا ہے۔[9] بہت سے چھوٹے جزائر میں ریبیز ہیں ہی نہیں۔[10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ ڑ​ ز ژ س "Rabies Fact Sheet N°99". World Health Organization. July 2013. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2014. 
  2. Cotran RS؛ Kumar V؛ Fausto N (2005). Robbins and Cotran Pathologic Basis of Disease (اشاعت 7th۔). Elsevier/Saunders. صفحہ 1375. ISBN 0-7216-0187-1. 
  3. ^ ا ب پ Tintinalli, Judith E. (2010). Emergency Medicine: A Comprehensive Study Guide (Emergency Medicine (Tintinalli)). McGraw-Hill. صفحات Chapter 152. ISBN 0-07-148480-9. 
  4. Hemachudha T, Ugolini G, Wacharapluesadee S, Sungkarat W, Shuangshoti S, Laothamatas J (May 2013). "Human rabies: neuropathogenesis, diagnosis, and management.". Lancet neurology 12 (5): 498–513. doi:10.1016/s1474-4422(13)70038-3. PMID 23602163. 
  5. ^ ا ب پ ت "Rabies vaccines: WHO position paper". Weekly epidemiological record 32 (85): 309-320. Aug 6, 2010. http://www.who.int/wer/2010/wer8532.pdf?ua=1. 
  6. "Vaccine, Rabies". International Drug Price Indicator Guide. 25 دسمبر 2018 میں
    اصل
    سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2015.
     
  7. Shlim، David (June 30, 2015). "Perspectives: Intradermal Rabies Preexposure Immunization". 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2015. 
  8. Lozano R, Naghavi M, Foreman K, Lim S, Shibuya K, Aboyans V, Abraham J, Adair T, Aggarwal R (Dec 15, 2012). "Global and regional mortality from 235 causes of death for 20 age groups in 1990 and 2010: a systematic analysis for the Global Burden of Disease Study 2010.". Lancet 380 (9859): 2095–128. doi:10.1016/S0140-6736(12)61728-0. PMID 23245604. 
  9. "Presence / absence of rabies in 2007". World Health Organization. 2007. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2014. 
  10. "Rabies-Free Countries and Political Units". CDC. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2014.