زبرجد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
زبرجد
General
Category Silicate mineral variety
Chemical formula (Mg, Fe)2SiO4
Identification
Color Yellow, to yellow-green, olive-green, to brownish, sometimes a lime-green, to emerald-ish hue
Crystal system Orthorhombic
Cleavage Poor
Fracture Conchoidal
Mohs scale hardness 6.5–7
Luster vitreous (glassy)
Streak None
Specific gravity 3.2–4.3
Refractive index 1.64–1.70
Birefringence +0.036

زبرجد ایک زردی مائل سبز رنگ کا پتھر ہے جو زمرد کے مشابہ ہوتا ہے۔یہ مشہور جواہرات میں شمار کیا جاتا ہے۔

اقسام[ترمیم]

زبرجد کو جواہرات و نگینوں کے درجہ ٔ دؤم میں شمار کیا جاتا ہے، جس سے مراد ہے کہ اِس میں درجہ ٔ اُولیٰ کے جیسے جواہرات کی سی خصوصیات موجود نہیں ہوتیں۔ عموما ً زبرجد کا رنگ سبز ہوتا ہے اور اِس کے علاوہ زرد اور نیلے رنگ میں بھی پایا جاتا ہے۔ عمدہ ترین زبرجد کا رنگ زمرد کے رنگ جیسا ہوتا ہے یعنی سبز رنگ۔عرب ماہرین جواہرات اِسے زبرجد زیتونی بھی کہتے ہیں کیونکہ اِس کا رنگ زیتون سے مشابہ ہے۔ حکیم ارسطو نے لکھا ہے کہ زمرد اور زبرجد ایک ہی کان سے نکلتے ہیں اور یہ اُس وقت پیدا ہوتے ہیں جب فلکیاتی اعتبار سے سورج، چاند اور سیارہ زحل ایک ہی برج میں حالتِ قران یا حالتِ اجتماع میں ہوں۔

مصری زبرجد:[ترمیم]

یہ دیکھنے میں سرخی مائل ہوتا ہے۔

کبراسی زبرجد:[ترمیم]

یہ زردی مائل سبز رنگ کا ہوتا ہے اور عموما ً یہی قسم دستیاب ہوتی ہے۔

ہندی زبرجد:[ترمیم]

یہ زرد اور سرخ دونوں رنگوں میں ہوتا ہے اور برصغیر کے علاقوں میں یہی قسم پائی جاتی ہے۔

  • انگریز ماہرین جواہرات زبرجد کی دو اقسام بتاتے ہیں:

بیرل:[ترمیم]

یہ عام زبرجد ہے جو سبز رنگ کا ہوتا ہے۔

اکوامرائین:[ترمیم]

اِس میں رنگت سبز نیلگوں ہوتی ہے جبکہ عام زبرجد سبز زردی مائل ہوتا ہے۔

طبی خصوصیات[ترمیم]

حکمائے یونان کے مطابق زبرجد کی طبی خواص زمرد جیسے ہی ہیں۔ بطور منجن استعمال کیا جائے تو دانتوں کو صاف کرتا ہے۔ بدن کو تقویت بخش ہے۔ زیادتی ٔ و کمی ٔ بول کو مفید ہے۔ آنکھوں میں بطور سرمہ استعمال کیا جائے تو بصارت کو قوی کرتا ہے۔ اطبائے یونانی کا خیال ہے کہ اِس کے بنے پیالوں میں شراب نوشی سے نشہ نہیں ہوتا۔[1]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. کاش البرنی: پتھروں کے سحری خواص، صفحہ ، مطبوعہ بارِ دؤم، کراچی 1980ء۔