زہیر بن ابی سلمیٰ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(زہیر بن ابی سلمى سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
زہیر بن ابی سلمیٰ
(عربی میں: زهير بن أبي سلمى خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 520[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
نجد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
تاریخ وفات سنہ 609 (88–89 سال)[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
اولاد کعب بن زہیر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں اولاد (P40) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  ومصنف  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان عربی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
دستخط
Zuhayr calligraphie.JPG 

زہیر بن ابی سلمیٰ عہد جاہلیت کا ممتازاور صاحب دیوان شاعر تھا۔

حالات زندگی[ترمیم]

زہیر بن ابی سلمیٰ بن ربعیہ بن رباح مزنی 530ء میں پیدا ہوا اپنے باپ کے رشتہ داروں بنو غطفان میں پرورش پائی۔ ایک عرصہ تک اپنے ماموں کی صحبت میں رہا، اس کا ماموں عرصے سے صاحب فراش اور بے اولاد لیکن نہایت دانا شخص تھا، وہ حسن رائے، عمدہ شاعری اور کثرت مال کی وجہ سے شہرت رکھتا تھا۔ زہیر نے اس کی شاعری سے بہت کچھ حاصل کیا اور اس کے علم و حکمت سے بہت متاثر ہوا۔ یہ چیز اس کی حکمت کے موتیوں سے مرصع شاعری میں جگہ جگہ نمایاں نظر آتی ہے۔ جب مرہ قبیلہ کے دو دانشمند حارث بن عوف اور ہرم بن سنان نے بنو عبس و ذبیان کے درمیان میں صلح کروانے اور دشمنی کو ٹھنڈا کرنے کے لیے دونوں قبیلوں کے مقتولین کی دیت اپنے ذمہ لے لی جو تین ہزار اونٹ بنتی تھی اور جنگ کی آگ کو ختم کر دیا تو سرداروں کی اس عالی ظرفی نے شاعر کی طبعیت کو بے حد متاثر کیا اور اس نے اپنے مشہور معلقہ میں ان دونوں کی مدح کی۔

ہرم بن سنان کی مدح[ترمیم]

زہیر نے با رہا ہرم بن سنان کی مدح کی تو ہرم نے قسم کھالی کہ زہیر جب بھی اس کی مدح کرے گا یا اس سے کچھ سوال کرے گا یا اس کو سلام کرے گا تو وہ اس کے جواب میں غلام یا لونڈی یا گھوڑا دے گا۔ زہیر اس کے عطیات قبول کرتے کرتے شرما گیا اور یہ کرنے لگا کہ جب وہ ہرم کو لوگوں میں بیٹھے دیکھتا تو کہتا ہرم کے سوا تم سب خیریت سے رہو جب کہ وہ تم سب سے اچھا ہے جس کو میں نے شریک نہیں کیا۔

ایک دفعہ حضرت عمر بن خطاب نے ہرم کے لڑکے سے کہا کہ اپنے باپ کی مدح میں کہے ہوئے زہیر کے کچھ اشعار سناؤ۔ اس نے سنائے تو حضرت عمر کہنے لگے تمہارے والد زہیر نے کتنے اچھے اشعار کہے ہیں۔ لڑکا کہنے لگا خدا کی قسم ہم اس کو دیتے بھی خوب تھے، تو حضرت عمرؓ نے فرمایا جو کچھ تم نے دیا وہ تو ختم ہو گیا اور جو کچھ اس نے تمیں دیا وہ باقی ہے۔

زہیر دولت و ثروت کے باوجود نہایت خوش اخلاق، نرم مزاج، صاحب رائے، پرہیز گار، صلح جو اور اللہ تعالیٰ اور یوم آخرت پر ایمان رکھتا تھا۔ اس کا ثبوت اس کے کہے ہوئے اشعار ہیں۔ زہیر نے 90 سال سے زیادہ عمر پائی جیسا کہ اس کے ایک شعر سے ظاہر ہوتا ہے۔ اس کا انتقال ہجرت سے تیرہ سال قبل ہوا لیکن اس کے بیٹے کعب اور بحیر اسلام لے آئے تھے۔

شاعری[ترمیم]

زہیر کا گھرانہ شاعری میں ممتاز حثیت رکھتا تھا۔ اس ماموں، اس کی دو بہنیں سلمیٰ اور خنساء اور اس کے دو بیٹے کعب اور بجیر قابل شعرا میں سے تھے اور یہ امتیاز کسی دوسرے گھرانے کو نصیب نہیں ہوا۔ کچھ لوگ تو اسے امرؤ القیس اور نابغہ ذبیانی سے بھی افضل قرار دیتے ہیں۔ کیوں کہ اس کی شاعری صداقت لہجہ کی بنا پر ممتاز اور غریب الفاظ سے خالی اور بیہودہ خیالات اور فحش گوئی سے صاف ہے۔ اس کا کلام قلیل الفاظ مگر کثیر معافی پر مشتمل ہوتا ہے۔ یہ واحد شاعر ہے جسے مدح، ضرب الامثال اور حکیمانہ مقولے نظم کرنے میں کمال حاصل ہے۔

زہیر ان شاعروں میں ایک جو کلام کو لکھ کر پرکھتے اور کانٹ چھانٹ کرتے تھے۔ اس کے قصائد کو ’حوالیات‘ بھی کہا جاتا ہے۔ کیوں کہ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ چار مہینوں تک قصیدہ نظم کرتا تھا اور چار ماہ تک اس کی کانٹ چھانٹ کرتا تھا۔ اس طرح یہ قصیدہ لوگوں سال بھر کے بعد جاکر ملتا تھا۔

وفات[ترمیم]

زہیر کی تقریباً 90 سال کی عمر میں 627ء کو وفات ہوئی[3][4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. جی این ڈی- آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118906550 — اخذ شدہ بتاریخ: 16 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: CC0
  2. آئی ایس این آئی: http://www.isni.org/0000_0000_8163_1453
  3. احمد حسن زیات۔ تاریخ ادب عربی۔ ترجمہ، محمد نعیم صدیقی۔ شیخ محمد بشیر اینڈ سنز سرکلر روڈ چوک اردو بازار لاہور
  4. الشعر الطبیعہ فی الادب الاربیہ،ص87، طبع قاہرہ