زینب سلطان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
زینب سلطان
(عثمانی ترک میں: زینب سلطان‎ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 8 اپریل 1714  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 25 مارچ 1774 (60 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن زینب سلطان مسجد  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد محمود پاشا الدراملی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد احمد ثالث  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ ارستقراطی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عثمانی ترکی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

زینب سلطان عثمانی ترکی زبان: زینب سلطان زینب سلطان ; ت 1715–25 مارچ 1774ء) ایک عثمانی شہزادی تھی، جو سلطان احمد ثالث کی بیٹی تھی۔

پیدائش[ترمیم]

زینب سلطان 1715ء میں توپ کاپی محل میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد سلطان احمد ثالث تھے۔ [1]

پہلی شادی[ترمیم]

1728ء میں، زینب سلطان نے مصطفٰی پاشا سے شادی کی، [2] جو عظیم وزیر نیویہرلی داماد ابراہیم پاشا کے بھتیجے اور اس وقت شاہی اصطبل کے دوسرے سربراہ تھے۔ شادی کی تقریب توپ کاپی محل میں ہوئی۔ 8 دسمبر کو زینب کے جہیز کو اس کے محل میں بھیجا گیا جسے کبلی محل کہا جاتا ہے اور اگلے دن شادی کا جلوس نکلا۔ [3] [4]

دوسری شادی[ترمیم]

1764ء میں مصطفٰی پاشا کی موت کے بعد، زینب سلطان نے 1765ء میں میلک محمد پاشا سے شادی کی، جو اس سے پہلے اپنے سوتیلے بھائی مصطفٰی ثالث کے دور میں عثمانی بیڑے کے عظیم ایڈمرل کے طور پر خدمات انجام دے چکے تھے۔ میلک محمد پاشا نے دو بار بحری بیڑے کے ایڈمرل کے طور پر خدمات انجام دیں اور 1792ء میں انہیں وزیر اعظم بنایا گیا۔ [2] [4]

خیراتی ادارے[ترمیم]

1769ء میں، زینب سلطان نے ایمینو میں ایک مسجد تعمیر کرائی جسے "روحِ سلطانی مسجد" کہا جاتا ہے۔ مسجد کے قریب ایکاسکول اور فوارےکی تعمیر بھی بنیاد کا حصہ ہے۔ [2] [4] آج اسے زینب سلطان مسجد کہا جاتا ہے۔ [5][6]

موت[ترمیم]

زینب سلطان کا انتقال 25 مارچ 1774ء کو ہوا [4] اور اسے ایمینو میں واقع اپنی ہی مسجد میں دفن کیا گیا۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Kurşun، Zekeriya (2005). Üsküdar Sempozyumu II, 12-13 Mart 2004: bildiriler, Volume 1. Üsküdar Belediyesi. صفحہ 198. ISBN 978-9-759-20195-1. 
  2. ^ ا ب پ ت Uluçay 2011.
  3. Duindam، Jeroen؛ Artan، Tülay؛ Kunt، Metin (اگست 11, 2011). Royal Courts in Dynastic States and Empires: A Global Perspective. BRILL. صفحات 362، 363 n. 49. ISBN 978-9-004-20622-9. 
  4. ^ ا ب پ ت Sakaoğlu 2008.
  5. Sumner-Boyd، Hilary؛ Freely، John (نومبر 30, 2009). Strolling Through Istanbul: The Classic Guide to the City. Tauris Parke Paperbacks. ISBN 978-0-85773-005-3. 
  6. "ZEYNEB SULTAN KÜLLİYESİ İstanbul Eminönü'nde XVIII. yüzyılın ikinci yarısında inşa edilen külliye.". İslam Ansiklopedisi. اخذ شدہ بتاریخ 12 اپریل 2020. 

ذرائع[ترمیم]

  • Sakaoğlu، Necdet (2008). Bu mülkün kadın sultanları: Vâlide sultanlar, hâtunlar, hasekiler, kadınefendiler, sultanefendiler. Oğlak Yayıncılık. ISBN 978-9-753-29623-6. 
  • Uluçay، Mustafa Çağatay (2011). Padişahların kadınları ve kızları. Ankara: Ötüken. ISBN 978-9-754-37840-5.