زین شکیل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

}}

زین شکیل نوجوان نسل میں ابھرتی ہوئی ایک نمایاں آواز ہے۔ کم عمری سے شہر کہنے والا نوجوان شاعر جس کی شاعری میں احساسات، جذبات اور موضوعات ہر طرح کی ذرخیزی پائی جاتی ہے۔ زین شکیل اس عہد میں ایک نمایاں نام پیدا کرنے والا نوجوان شاعر ہے۔ زین کی شاعری رومانویت سے بھرپور ہے اور درد، ہجر، اداسی ، اضطراب، غم و الم کے رنگوں سے گھلی ہوئی ہے۔ آسان اور سادہ الفاظ میں دل میں اتر جانے والا کلام جسے پڑھ کر ہر قاری یوں محسوس کرتا ہے جیسے یہ کلام اسی کے لیے لکھا گیا ہو۔

پیدائش اور ابتدائی تعلیم

زین شکیل 23 فروری 1992  کو گجرات کے ایک قصبے جلالپورجٹاں میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم جلالپور جٹاں، گجرات سے حاصل کی۔

پانچوی جماعت تک میونسپل ماڈل ہائی سکول جلالپورجٹاں میں زیر تعلیم رہے اور میٹرک تک کی تعلیم گورنمنٹ اسلامیہ ہائی سکول نمبر1، جلالپورجٹاں سے حاصل کی۔

میٹرک کرنے بعد تعلیم مزید جاری رکھنے کے سلسلے میں لاہور آگئے اور گورنمٹ کالج لاہور سے انٹرمیڈیٹ تک تعلیم حاصل کی۔

انٹرمیڈیٹ کے بعد Comsats Institute of Information Technlogy Lahore سے کمپیوٹر سائنسز میں بی ایس آنرز مکمل کیا۔

  شعبہِ روزگار

پیشے کے اعتبار سے زین شکیل کمپیوٹر سافٹ وئیر کے شعبے میں کام کر رہے ہیں۔

مشاغل

ادب سے گہرا لگاؤ ہے۔ ہر قسم کے فنونِ لطیفہ میں دلچسپی رکھتے ہیں اور فارغ وقت مطالعہ کی نذر ہوتا ہے۔ موسیقی سے خاص لگاؤ ہے ہر قسم کا میوزک پسند کرتے ہیں خاص طور پر کلاسیکل میوزک، قوالی اور غزل وغیرہ۔

بحیثیت شاعر و ادیب

زین شکیل کو بچپن سے ہی شعر و ادب سے لگاؤ رہا اسکول کے زمانے سے ہی وہ شاعری کا مطالعہ کیا کرتے تھے۔ ابتدائی عمر میں فرحت عباس شاہ کا کلام پڑھنے کو ملا جس سے شاعری کی طرف رجحان بڑھنے لگا۔ ساتھ ساتھ کلاسیکل شعرا کا مطالعہ بھی جاری رہا۔ اور زین شکیل نے فرحت عباس شاہ کو اپنا روحانی استاد مانا۔ اور کچھ مزید برس گزرنے کے بعد زین شکیل نے باقاعدہ فرحت عباس شاہ کی شاگردی اختیار کر لی۔

پہلی غزل آٹھویں جماعت میں کہی۔ اس کے بعد مطالعہ جاری رہا۔ کالج کے دور میں لکھنا شروع کیا۔ جبکہ 2012 کے بعد باقاعدہ لکھنے کا آغاز کر لیا۔ 2015 میں پہلی کتاب  "چلو اداسی کے پار جائیں" زمانہِ طالب علمی میں ہی شائع ہوئی۔ جسے علم و عرفان پبلشر، اردو بازار لاہور کی جانب سے شائع کیا گیا۔

شعری مجموعے اور تصانیف

زین شکیل کے شعری مجموعے جو مکمل آن لائن موجود ہیں ان کے نام درج ذیل ہیں۔               

1.اب کون کہے تم سے - نظمیں

2.بول اُداسی بول - طویل نظم

3.تم خاموش نہیں رہنا

4.تمہارا کس سے پوچھتے

5.تیرے نام محبت ہے

6.جھَلّی - نظم

7.چلو اُداسی کے پار جائیں

8.سُن سانسوں کے سلطان پیا

9.سیداؐ اِک نظر

10.سانول اَکھ توں دور - پنجابی

11.صندل تیری پریت - طویل نظم

12.صندل - طویل نظم

13.کہا بھی تھا زمانہ دیکھتا ہے

14.ماہم - طویل نظم

15.مِرا محور اُداسی ہے

16.مصائب - نثر

17.میرے لہجے میں بولتا ہوا تُو

18.میں بولا

19.وہ آنکھوں سے بول رہا تھا

20.یہ صدی بھی اُداس ہے تم بن - طویل نظم

21. تم کیوں چلے گئے

22. میں تم کو یاد آتا ہوں؟

23. ساحرہ (طویل نظم)

24. ماہیے تیرے نام

25. سانول اکھ توں دور

زین شکیل {{{مضمون کا متن}}}

حوالہ جات[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔