ساتویں صلیبی جنگ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ساتویں صلیبی جنگ کا قائد لوئی نہم شاہ فرانس کی تصویر
مصر اور ارض مقدس پر چڑھائی کرنے کے لیے لوئی نہم شاہ فرانس کی سپاہ کا فرانس سے روانگی اور بحیرۂ روم کو عبور کرنے کا راستہ
چڑھائی ناکام ہونے کے بعد فرانس کا بادشاہ لوئی نہم شاہ فرانس مصر میں مسلمانوں کا اسیر بنا۔ یس خاکے میں بادشاہ پر ہتھکڑیاں اور زنجیر باندھے ہوئے ہیں۔

ساتویں صلیبی جنگ ایک صلیبی جنگ ہے، جس کا آغاز 1249ء میں فرانس کے بادشاہ لوئی نہم شاہ فرانس کی قیادت میں ہوا تھا اور نجم الدین ایوب کے عہد میں انھوں نے مصر پر حملہ کیا تھا جس کے دوران دمیاط میں سلطان کی وفات ہو گئی تھی۔ صلیبیوں نے مصر کی شمالی سرحد دمیاط پر قبضہ کر لیا تھا، پھر قاہرہ پر چڑھائی کے لیے بڑھے، لیکن مملوک فوجوں نے ان کا مقابلہ کیا اور منصورہ، مصر میں پھر فارسکور میں جنگ ہوئی جس میں صلیبیوں کو شکست ہوئی، ان کا شاہِ فرانس لوئی نہم شاہ فرانس کو گرفتار کر لیا گیا اور اس طرح اس جنگ میں صلیبی جنگجؤوں کا ناکام ہو گئے۔

مزید دیکھے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]