ستیہ وادی راجا ہریش چندر (فلم)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ستیہ وادی راجا ہریش چندر
ہدایت کار
اداکار ڈی ڈی ڈابکے
انا سالنکے  ویکی ڈیٹا پر (P161) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
صنف خاموش فلم  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلم نویس
دورانیہ 16 منٹ  ویکی ڈیٹا پر (P2047) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملک British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P495) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سنیما گرافر دادا صاحب پھالکے  ویکی ڈیٹا پر (P344) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ نمائش 1917  ویکی ڈیٹا پر (P577) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مزید معلومات۔۔۔
IMDb logo.svg
tt0253532  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ستیہ وادی راجا ہری چندر ( (مراٹھی: सत्यवादी राजा हरिश्चंद्र)‏ ؛ انگریزی: Truthful King Harishchandra ) 1917ء کی ایک خاموش سیاہ اور سفید بھارتی شارٹ فلم ہے جس کی ہدایت کاری اور پروڈیوس دھوندی راج گووند پھالکے نے کی۔ [1] یہ فلم پہلی ہندوستانی فیچر فلم، راجہ ہریش چندرا (1913) [2] [3] جس کی ہدایت کاری اور پروڈکشن بھی پھالکے نے کی۔ [4] فلم میں استعمال ہونے والے انٹر ٹائٹل مراٹھی زبان میں تھے کیونکہ یہ فلم ایک خاموش فلم تھی۔ یہ فلم شمسی خاندان کے 36 ویں بادشاہ ہندو بادشاہ ہریش چندر کی افسانوی کہانی پر مبنی ہے، جس نے اپنی پوری سلطنت عطیہ کی اور خواب میں بابا وشوامتر سے دیئے گئے وعدے کو پورا کرنے کے لیے اپنے آپ کو اور اپنے خاندان کو بیچ دیا۔ [5]

پلاٹ[ترمیم]

اس فلم میں شمسی خاندان کے 36 ویں بادشاہ ہندو بادشاہ ہریش چندر کی کہانی دکھائی گئی ہے۔ ہندو بابا وشوامتر نے ہری چندر کو اپنی بادشاہت عطیہ کرنے کے اپنے وعدے کی یاد دلائی، جو خواب میں بابا کو دیا گیا تھا۔ہریش چندر اپنے وعدوں کی پاسداری کے لیے جانا جاتا ہے، ہریش چندرا بابا کی مرضی کے مطابق بادشاہت عطیہ کر دیتا ہے۔ وشوامتر کا مطالبہ ہے کہ عطیہ کے عمل کو مکمل کرنے کے لیے ایک اضافی رقم بطور ’’ جنوبی ‘‘ (اعزازی) ادا کی جائے۔ اب خالی ہاتھ ہونے کی وجہ سے، ہریش چندرا مطلوبہ رقم حاصل کرنے کے لیے اپنی بیوی ترامتی، بیٹے روہتشوا اور خود کو فروخت کرتا ہے۔ پھر بادشاہ وارانسی کے لیے روانہ ہوتا ہے کیوں کہ اپنی بادشاہت عطیہ کرنے کے بعد، یہ بابا کےزیر اثر سے باہر کی واحد جگہ بن جاتا ہے۔

بادشاہ، جو اب ایک عام فرد کی شکل اختیار کر چکا ہوتا ہے، کئی واقعات میں اپنے اخلاق کا امتحان دیتا ہے لیکنوشوامتر اس کی خوبی سے خوش ہوتا ہے۔ دیوتا اور بابا بادشاہ کی سابقہ عظمت کو بحال کرتے ہیں، اور بادشاہ، ملکہ اور ان کی تمام رعایا کو مزید آسمانی رہائش فراہم کرتے ہیں۔

کردار[ترمیم]

ایک مراٹھی اسٹیج اداکار ڈی ڈی ڈبکے نے ہریش چندرکا مرکزی کردار ادا کیا۔ ہریش چندرکی بیوی ترامتی کا مرکزی کردار ایک مرد اداکارہ انا سالونکے نے ادا کیا۔ پھالکے کا بیٹا بھالاچندر چائلڈ آرٹسٹ تھا جس نے ہریش چندر کے بیٹے روتش کا کردار ادا کیا۔ بابا وشوامتر کا کردار جی وی سائیں نے ادا کیا۔ یہ کہانی ہندو اساطیری داستان پر مبنی تھی اور اسے رنچھوڈ بائی ادیرام اور دادا صاحب پھالکے نے اسکرپٹ کیا تھا۔ فلم میں دیگر فنکار تھے: [1] [6]

  • دتاتریہ کشیرساگر
  • دتاتریہ تلنگ
  • گنپت جی شنڈے
  • وشنو ہری آندھکر
  • ناتھ ٹی تلنگ

پیشکش[ترمیم]

دھنڈی راج گووند پھالکے، جو دادا صاحب پھالکے کے طور پر مشہور ہیں، جو بالآخر "انڈین سنیما کے باپ" کے لقب سے نوازے گئے، [7] فلم کے ہدایت کار، اسکرپٹ رائٹر اور پروڈیوسر تھے۔ انھوں نے دادر مین روڈ میں ایک اسٹوڈیو شروع کیا۔ اس نے اسکرین پلے لکھا، اور فلم کے سیٹ بنائے اور خود فلم کی شوٹنگ شروع کی۔ یہ فلم دادا کی پہلی فیچر فلم تھی جس کی لمبائی 3700 فٹ (چار ریلوں میں)تھی اور فلم کو مکمل کرنے میں سات ماہ 21 دن لگے۔ [5] فلم کو پریس کے نمائندوں اور مہمانوں کے مدعو سامعین سے پہلے 1917ء میں کورونشن سنیما میں دکھایا گیا تھا۔ اس فلم نے وسیع پیمانے پر پذیرائی حاصل کی اور تجارتی کامیابی حاصل کی۔ پھالکے نے ستیہون ساوتھری، لنکا دھان (1917ء)، سری کرشنا جنم (1918ء)، اور کالیا مردان (1919ء) جیسی فلمیں بنا کر اس فلم کی پیروی کی۔ [7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Vasudev 1995.
  2. Rao 2006.
  3. Banker 2002.
  4. Gulzar, Nihalani & Chatterjee 2003.
  5. ^ ا ب Dawar 2006.
  6. Ramesh Dawar (1 جنوری 2006). Bollywood Yesterday Today and Tomorrow. Star Publications. صفحات 1987–. ISBN 978-1-905863-01-3. اخذ شدہ بتاریخ 5 اپریل 2013. 
  7. ^ ا ب Kirpal Sigh Annie Mathew. Middle School Social Sciences. Frank Brothers. صفحات 8–. ISBN 978-81-8409-103-8. اخذ شدہ بتاریخ 7 اپریل 2013. 

کتابیات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]