سدھیر چودھری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سدھیر چودھری
Sudhir Chaudhary
Chaudhary in 2016
Chaudhary in 2016

معلومات شخصیت
پیدائش 7 جون 1974 (45 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی دہلی یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ صحافی، خبروں کے اینکر، مدیر
دور فعالیت 1990—تاحال
اعزازات
رامناتھ گوئنکا ایوارڈ برائے اعلٰی صحافت 2013 کے لیے "ہندی نشریہ" کے زمرے کا اعزاز[1][2]

سدھیر چودھری (انگریزی: Sudhir Chaudhary) ایک بھارتی صحافی، خبروں کے اینکر اور مدیر ہیں۔ وہ ہندی خبروں کے چینل زی نیوز کے مدیر اعلٰی ہیں۔ اپریل 2017ء میں انگریزی خبروں کے چینل ورلڈ از ون اور کاروباری چینل زی بزنس کے کے مدیر اعلٰی منتخب ہوئے جو زی میڈیا کارپوریشن کے ما تحت آتا ہے۔ وہ ڈیلی نیوز اینڈ انالیسیس (ڈی این اے) کے میزبان ہیں جو زی نیوز پر نشر ہوتا ہے۔[3]

ہتک عزت کا مقدمہ[ترمیم]

سدھیر چودھری نے بھارت کے 2019ء کے پارلیمانی انتخاب میں پہلی بار منتخب مہوا موئترا کی اولین فسطائیت کی علامات کے خلاف تقریر کو ادبی سرقہ قرار دیا تھا۔[4] بار اینڈ بنچ کی خبر کے مطابق میٹروپولیٹن مجسٹریٹ پریتی پریوا نے اس معاملے پر از خود نوٹس لیتے ہوئے اس کی سماعت اُسی 20 جولائی کو طے کی ہوئی۔ مہوا موئترا کا بیان بھی اسی دن درج کیا جانا طے ہوا۔ مہوا موئترا نے 25 جون کو پارلیمنٹ میں فاشزم پر جو تقریر کی تھی، جس کے بعد پرائم ٹائم پر آنے والے اپنے پروگرام میں سدھیر چودھری نے کہا تھا کہ مہوا کی تقریر مارٹن لانگ مین کے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ پر لکھے گئے مضمون سے ‘ چرائی ہوئی’ تھی۔ اس کے بر عکس خود مارٹن لانگ مین نے ٹویٹر پر سدھیر چودھری کے اس دعوے کو خارج کرتے ہوئے کہا تھا کہ مہوا نے واضح بتایا تھا کہ ان کی تقریر ریاستہائے متحدہ امریکا کے مرگ انبوہ عجائب گھر میں دیکھے گئے ایک پوسٹر سے متاثر تھی، جو یہ فی الواقع تھی۔ انہوں نے چودھری کو دائیں محاذ کے عام شخص قرار دیا اور اس موقع پر ایک گالی کا بھی استعمال کیا جو امریکی غیر رسمی گفتگو میں عام ہے۔[5]

دھمکی آمیز رقمی مطالبہ اور تہاڑ جیل[ترمیم]

2012ء میں سدھیر چودھری پر الزام عائد ہوا کہ انہوں نے کانگریس قائد نوین جندل کو ان کی کمپنی کے کوئلہ اسکام میں ملوث ہونے کی خبر نشر نہ کرنے کے عوض سو کروڑ روپیوں کا مطالبہ کیا تھا۔ اس سلسلے میں ان پر اور چینل کے کاروباری مدیر سمیر اہلووالیا پر مقدمہ درج ہوا اور انہیں تہاڑ جیل بھیجا گیا جو بھارت کے مشہور اور تاریخی جیلوں میں سے ایک ہے۔[6]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Sudhir Chaudhary gets Ramnath Goenka Excellence"۔ The Indian Express۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-11-23۔
  2. "Sudhir Chaudhary gets Ramnath Goenka Excellence"۔ financial express۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-11-24۔
  3. "Sudhir Chaudhary now also editor in Chief of zee business"۔ مورخہ 15 جولائی 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولائی 2017۔
  4. "Moitra Files Criminal Defamation Suit Against Zee News' Chaudhary"۔ دی کوینٹ کی ویب سائٹ۔
  5. "ٹی ایم سی ایم پی مہوا موئترا نے صحافی سدھیر چودھری پر ہتک عزت کا مقدمہ دائر کیا"۔ دی وائر کی ویب سائٹ۔
  6. "Zee News editors sent to Tihar jail"۔ ہندوستان ٹائمز کی ویب سائٹ۔