سرائے گھاٹ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سرائے گھاٹ
سرائے گھاٹ پل پر شام کا منظر
سرائے گھاٹ پل پر شام کا منظر
سرائے گھاٹ is located in آسام
سرائے گھاٹ
سرائے گھاٹ
سرائے گھاٹ is located in بھارت
سرائے گھاٹ
سرائے گھاٹ
آسام، بھارت میں پل کا مقام
متناسقات: 26°10′33″N 91°40′20″E / 26.17583°N 91.67222°E / 26.17583; 91.67222متناسقات: 26°10′33″N 91°40′20″E / 26.17583°N 91.67222°E / 26.17583; 91.67222
ملکFlag of India.svg بھارت
ریاستآسام
ضلعکامروپ
تعمیراتی کمپنیبریتھویٹ برن اینڈ جیسپ کنسٹرکشن کمپنی
زبانیں
 • سرکاریآسامی
منطقۂ وقتآئی ایس ٹی (UTC+5:30)
آیزو 3166 رمزآیزو 3166-2:IN
گاڑی کی نمبر پلیٹAS
بندرگاہ0 کلومیٹر (0 میل)

سرائے گھاٹ (: ˌʃəraɪgɑ: Pron T) بھارتی شہر گوہاٹی کا ایک پڑوس ہے جو دریائے برہم پتر کے شمالی کنارے پر واقع ہے۔سرائے ایک چھوٹا سا گاؤں تھا جہاں آمن گاؤں کا پرانا ترک کردہ این ایف ریلوے اسٹیشن واقع تھا۔ سرائے گھاٹ کی مشہور جنگ 1671 میں دریا پر اس جگہ کے قریب لڑی گئی تھی۔

سرائے گھاٹ پر دریائے برہم پتر کے شمال اور جنوبی کنارے میں شامل ہونے والے راستے پر ایک ریل اور سڑک کا پل ہے۔ آسام میں دریائے برہم پتر پر بنایا گیا یہ پہلا پل تھا۔

سرائے گھاٹ پل[ترمیم]

سرائے گھاٹ پل آسام میں دریائے برہم پتر پر تعمیر کیا جانے والا پہلا ریل اور سٹرک کا پل ہے۔

برہم پتر پر پل کی تعمیر کا خیال سب سے پہلے 1910 میں آیا تھا اور دوسری جنگ عظیم کے دوران اس سوچ نے زور پکڑ لیا تھا۔ ابتدائی طور پر 1942-43 میں سیلاب کے تباہ کن نتائج کی وجہ سے بونگائی گاؤں اور آمن گاؤں کے درمیان ریلوے لائن کے استحکام پر شکوک و شبہات تھے، تاہم جب لائن اطمینان بخش طور پر مستحکم ہوچکی تھی ، تب وزیر ریلوے نے 1958 میں پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس میں پل کی تعمیر کے فیصلے کا اعلان کیا تھا۔

پل کو شمال مشرقی سرحدی ریلوے نے چیف انجینئر بنکیم چندرا گنگولی کی ہدایت پر بنایا تھا۔ ہندوستان کنسٹرکشن کمپنی نے اس پل کے لیے بنیادیں اور گودام بنائے اور بریتھویٹ برن اور جیسپوپ کمپنی نے گھاٹ اور ساحل کے مابین ڈبل وارین ٹرسے تعمیر کیے۔ سرائے گھاٹ پل کی تعمیر کا آغاز 1958-59 کے خشک سیزن میں ہوا تھا۔ یہ پل ستمبر 1962 میں مکمل ہوا تھا اور پہلا انجن 23 ستمبر 1962 کو اس پر چلایا گیا تھا، اس کے بعد اس سال 31 اکتوبر سے گڈز ٹرین سروس شروع کی گئی۔ [1] سڑک کا راستہ مارچ 1963 میں کھولا گیا۔ وزیر اعظم جواہر لال نہرو نے اس پل کو وقف کیا تھا اور باقاعدہ طور پر اس کا نام 7 جون 1963 کو سرائے گھاٹ کی لڑائی کے نام پر رکھا تھا۔

تاریخی پل کی تعمیر کی تفصیلات دیتے ہوئے ریلوے ذرائع نے بتایا کہ اس تعمیر پر کل لاگت 10.65 کروڑ روپے خرچ ہوئے۔ [2] اس کی کل لمبائی 4258 فٹ ہے۔ سڑک 24 فٹ چوڑی ہے جس کے دونوں اطراف میں چھ فٹ چوڑائی ہے۔

ذرائع[حوالہ درکار] سے معلوم پڑتا ہے کہ اس پل میں 12 اسپین اور 14،000 ٹن اسٹیل ، 4.2 مکعب فٹ کنکریٹ اور 40،000 ٹن سیمنٹ لگا ہے۔ اس پل کی تعمیر کے لیے 100 ملین مکعب فٹ مٹی استعمال کی گئی۔ پل کے نیچے فری نیویگیشن کو یقینی بنانے کے لیے عام طور پر بلند سیلاب کی سطح سے 40 فٹ کی کلیئرنس رکھی گئی ہے۔

اپریل 2012 میں ریلوے نے پل کی عمر کے اثر کا مطالعہ کرنے کی ذمہ داری آئی آئی ٹی گوہاٹی کو سونپی تھی۔ ماہرین نے رائے دی کہ پل کے ڈھانچے اور تمام ستون مستحکم حالت میں ہیں اور یہ پُل آنے والے برسوں تک ملک کے شمال مشرقی خطے کی خدمت میں کامیاب ہوگا۔[حوالہ درکار] [ حوالہ کی ضرورت ] ایک متوازی تین لین کنکریٹ روڈ پل کا افتتاح 2017 میں کیا گیا۔

لاچٹ بورفوقان پارک پل کے شمالی سرے پر جنوب کنارے اور چیلارئی پارک پر واقع ہے۔

سرائے گھاٹ کا 6 نومبر 2012 کا ایک منظر جب اس پل کہ پچاسویں سالگرہ منائی گئی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Nov 7، Kangkan Kalita | TNN | Updated:؛ 2012؛ Ist، 1:09. "50 years of Saraighat bridge | Guwahati News - Times of India". The Times of India (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 17 اگست 2019. 
  2. Nov 7، Kangkan Kalita | TNN | Updated:؛ 2012؛ Ist، 1:09. "50 years of Saraighat bridge | Guwahati News - Times of India". The Times of India (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 17 اگست 2019.