سرفراز نواز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سرفراز نواز ملک ٹیسٹ کیپ نمبر59
Sarfraz Nawaz jpeg.jpeg
ذاتی معلومات
مکمل نامسرفراز نواز ملک
پیدائشدسمبر 1948 (عمر  سال)
لاہور، پنجاب، پاکستان
قد6 فٹ 6 انچ (1.98 میٹر)
بلے بازیدائیں ہاتھ
گیند بازیدایاں بازو فاسٹ میڈیم
حیثیتگیند بازی
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 59)6 مارچ 1969  بمقابلہ  انگلستان
آخری ٹیسٹ19 مارچ 1984  بمقابلہ  انگلستان
پہلا ایک روزہ (کیپ 9)11 فروری 1973  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
آخری ایک روزہ12 نومبر 1984  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
قومی کرکٹ
سالٹیم
1980–1984لاہور
1969–1982نارتھ ہیمپٹن شائر
1976–1977یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ کرکٹ ٹیم
1975–1976پاکستان ریلویز
1975پنجاب اے
1968–1972پنجاب یونیورسٹی
1967–1968لاہور
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 55 45 299 228
رنز بنائے 1,045 221 5,709 1,721
بیٹنگ اوسط 17.71 9.60 19.35 15.36
100s/50s 0/4 0/0 0/17 0/3
ٹاپ اسکور 90 34* 90 92
گیندیں کرائیں 13,951 2,412 55,692 11,537
وکٹ 177 63 1,005 319
بالنگ اوسط 32.75 23.22 24.62 20.88
اننگز میں 5 وکٹ 4 0 46 3
میچ میں 10 وکٹ 1 0 4 0
بہترین بولنگ 9/86 4/27 9/86 5/15
کیچ/سٹمپ 26/– 8/– 163/– 43/–
ماخذ: CricketArchive، 10 May 2009

سرفراز نواز ملک انگریزی: Sarfraz Nawaz Malik(پیدائش:01 دسمبر 1948ءلاہور، پنجاب) پاکستان کی کرکٹ ٹیم سے وابستہ ایک معروف کھلاڑی رہے ہیں۔انہوں نے 55 ٹیسٹ میچز میں پاکستان کی نمائندگی کی جبکہ 45 ایک روزہ بین الاقوامی ایک روزہ میچز بھی کھیلے کرکٹ کے علاوہ انہوں نے ایک سیاستدان کے طور پر بھی قسمت آزمائی کی۔جنہوں نے ہندوستان اور انگلینڈ کے خلاف پاکستان کی پہلی ٹیسٹ سیریز کی فتوحات میں اہم کردار ادا کیا۔ 1969ء اور 1984ء کے درمیان وہ کرکٹ کے میدانوں پر وہ اپنی ریورس سوئنگ کے ذریعے مخالف بلے بازوں کو تگنی کا ناچ نچاتے رہے سرفراز نواز کو ریورس سوئنگ کے ابتدائی ایکسپرٹ میں سے ایک کے طور پر جانا جاتا ہے۔ان کا اصل خاندانی کاروبار تعمیرات کا تھا مگر وہ ابتدا ہی سے کرکٹ میں نام کمانا چاہتے تھے ،انہوں نے 1985ء میں پاکستانی فلم اداکارہ رانی سے دوسری شادی کی اس سے قبل انہوں نے سابق کرکٹر میاں سعید احمد کی بیٹی سے شادی کی تھی اداکار رانی سے شادی کے بعد انہیں خود بھی 70ء کی دہائی کے دوران کئی بااثر پاکستانی فلم ڈائریکٹرز کی جانب سے فلموں میں اداکاری کی پیشکشیں ہوئیں مگر انہوں یہ سمجھ کر انکار کر دیا کہ اداکاری ان کی طاقت نہیں ہے۔

ابتدائی کیریئر[ترمیم]

سرفراز نواز نے پاکستان کے علاوہ لاہور' نوٹنگھم شائر' پاکستان ریلوے' پنجاب' پنجاب یونیورسٹی اور یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ کی طرف سے کرکٹ کھیلی۔1969ء میں کراچی میں انگلینڈ کے خلاف اپنے پہلے ٹیسٹ میں - بیس سالہ سرفراز نے کوئی وکٹ نہیں لی، بیٹنگ نہیں کی اور تین سال کے لیے ڈراپ کر دیا گیا۔ 1972-73ء میں SCG میں آسٹریلیا کے خلاف 4/53 اور 4/56 لے کر، ایان اور گریگ چیپل، کیتھ اسٹیک پول اور ایان ریڈپاتھ کا محاسبہ کیا، لیکن یہ میزبان ٹیم کو 56 رنز سے جیتنے سے نہیں روک سکا۔ ہیڈنگلے میں 1974ء میں سرفراز نے 74 گیندوں پر 53 رنز بنائے اور 209/8 کو 285 آل آؤٹ میں تبدیل کر دیا، کم اسکور والے میچ میں جیوف آرنلڈ، کرس اولڈ، مائیک ہینڈرک، ٹونی گریگ اور ڈیرک انڈر ووڈ کی گیند کو زبردست طریقے سے چلاتے ہوئے۔ 1974-75ء میں کلائیو لائیڈ کے ویسٹ انڈینز کے خلاف انہوں نے لاہور کے قذافی اسٹیڈیم میں 6/89 لے کر انہیں 214 پر آؤٹ کیا، لیکن ٹیسٹ اور سیریز دونوں ڈرا ہو گئے۔ سرفراز کو وسیم باری کی جگہ نائب کپتان بنایا گیا تھا، لیکن وہ 1977-78ء میں انگلینڈ کے خلاف دوسرے ٹیسٹ سے پہلے غائب ہو گئے۔ وہ لندن میں پائے گئے جہاں وہ کرسمس دیکھنے گئے تھے اور تیسرے ٹیسٹ کے لیے وقت پر پاکستان واپس آئے۔ جیسا کہ ورلڈ سیریز کرکٹ اس وقت کام کر رہی تھی یہ قیاس کیا گیا کہ وہ کیری پیکر کے ساتھ بات چیت کر رہے تھے۔ لارڈز میں 1978ء میں اس نے 5/39 لے کر انگلینڈ کو 119/7 تک پہنچا دیا، مائیک بریرلی، گراہم گوچ، ڈیوڈ گوور، ایان بوتھم اور باب ٹیلر کو آؤٹ کیا، لیکن بارش نے کھیل کو تباہ کر دیا اور میچ ڈرا ہو گیا۔ زیادہ فیصلہ کن طور پر 1978-79ء میں سرفراز کے کراچی میں بھارت کے خلاف 4/89 اور 5/70 کے اسکور نے پاکستان کو تیسرے اور آخری ٹیسٹ میں آٹھ وکٹوں سے فتح دلائی۔ اس نے سیریز میں 17 وکٹیں (25.00) حاصل کیں، جو کسی بھی کھلاڑی کی طرف سے سب سے زیادہ ہے اور پاکستان نے 1952 سے کھیلنے کے باوجود اپنے حریفوں کے خلاف پہلی ٹیسٹ سیریز جیتی۔ اور 32.75 کی اوسط سے 177 ٹیسٹ وکٹیں حاصل کیں۔ وہ ریورس سوئنگ کے ابتدائی ایکسپونٹس میں سے ایک کے طور پر جانا جاتا ہے۔

ٹیسٹ کیریئر[ترمیم]

سرفراز کی سب سے بڑی باؤلنگ کارکردگی 15 مارچ 1979ء کو میلبورن میں پہلے ٹیسٹ میں ہوئی جب آسٹریلیا نے ایلن بارڈر (105) اور کم ہیوز (84) کے ساتھ 305/3 رنز بنائے تھے اور اسے جیت کے لیے صرف 77 رنز درکار تھے۔ سرفراز نے 33 گیندوں میں 7/4 لیے (ان میں سے 3 رنز نو بالز میں آئے) اور آسٹریلیا کو 310 رنز پر آؤٹ کرکے پاکستان کو 71 رنز کی حیران کن فتح دلائی۔ اس وقت ان کا ایک اننگز میں 9/86 آسٹریلیا میں ٹیسٹ میچ کا بہترین تجزیہ تھا، پاکستانی باؤلر کا بہترین اور ٹیسٹ کرکٹ میں پانچواں بہترین۔ سرفراز نے بھی پہلی اننگز میں 99/6 پر 35 رنز بنائے تھے اور میچ میں 11/125 لئے تھے۔ وہ پرتھ میں ڈبلیو اے سی اے میں دوسرے ٹیسٹ میں گیند کو سنبھالنے پر اینڈریو ہلڈچ کو متنازعہ آؤٹ کرنے میں بھی ملوث تھے۔ بلے باز نان اسٹرائیکر کے اختتام پر تھا جب گیند ایک فیلڈر کی طرف سے پھینکنے سے کریز پر لوٹی تھی۔ ہلڈچ نے گیند اٹھا کر شائستگی سے سرفراز کو دی، سرفراز نے اپیل کی اور ہلڈچ کو آؤٹ کر دیا گیا۔ ٹیسٹ کرکٹ کے سو سال میں یہ دوسرا موقع تھا کہ کسی بلے باز کو اس انداز میں آؤٹ دیا گیا اور سختی سے درست ہونے کے باوجود اسے کھیل کی روح کے خلاف سمجھا گیا۔ اس سے قبل میچ میں آسٹریلوی ٹیلنڈر روڈنی ہوگ 'باغبانی' کرتے ہوئے رن آؤٹ ہوئے تھے اور ایلن ہرسٹ نے متنازعہ طور پر سکندر بخت کو بیک اپ کرتے ہوئے رن آؤٹ کیا، گیم مین شپ کے دو ٹکڑے جس کی وجہ سے ٹیموں کے درمیان برا احساس پیدا ہوا۔ آسٹریلیا نے ٹیسٹ جیتنے کے لیے 236/3 بنائے۔ اور سیریز برابر، باقی دو بلے باز رن آؤٹ ہوئے اور کوئی بولر وکٹ نہیں لے سکا۔ سرفراز نے نارتھمپٹن ​​شائر کے لیے دو الگ الگ اسپیل کھیلے اور 1980ء کے بینسن اینڈ ہیجز کپ کے فائنل میں اس نے 11 اوورز میں 3/23 لے کر ایسیکس کو 203/ تک محدود کیا۔ نارتھنٹ کی چھ رنز سے جیت۔ 1983-84ء میں اس نے کراچی میں انگلینڈ کے خلاف پہلے ٹیسٹ میں 4/42 اور 2/27 لیا اور جیتنے والے رنز بنائے جب پاکستان نے جیت کے لیے 66/7 بنائے۔ کئی 'ریٹائرمنٹ' کے بعد لاہور کے قذافی اسٹیڈیم میں تیسرا ٹیسٹ ان کا آخری ثابت ہوا اور پہلی اننگز میں ان کے 4/49 رنز نے انگلینڈ کو 241 رنز پر آؤٹ کرنے میں مدد دی۔ فرسٹ کلاس سکور، اپنے کپتان ظہیر عباس (82 ناٹ آؤٹ) کے ساتھ نویں وکٹ کے لیے 161 رنز جوڑ کر اپنی ٹیم کو 102 رنز کی برتری دلائی۔ ڈیوڈ گوور نے ناٹ آؤٹ 173 رنز بنائے اور سرفراز دوسری اننگز میں 1/112 پر آؤٹ ہوئے، لیکن 199/5 پر آئے اور 10 ناٹ آؤٹ کے ساتھ میچ کو آؤٹ کیا۔ اس سے پاکستان نے انگلینڈ کے خلاف اپنی پہلی ٹیسٹ سیریز جیتنے کے لیے 1-0 کی برتری کو یقینی بنایا۔

سرفراز نواز کا انداز[ترمیم]

6'6' لمبا ہونے کی وجہ سے، سرفراز کو "گاڑی کے گھوڑے کی طرح مضبوط" قرار دیا گیا تھا اور اس کے طاقتور اوپری جسم اور اچھے ایکشن نے انہیں تیز درمیانی رفتار سے گیند کرنے کی اجازت دی۔ وہ گیند کو کسی بھی سمت میں سیون کر سکتا تھا اور کنونشن کے باوجود اس نے جیف تھامسن اور جوئل گارنر جیسے دوسرے تیز گیند بازوں کو بار بار باؤنس کیا۔ پاکستان میں پائی جانے والی فلیٹ وکٹیں اس کی تیز رفتار گیند باز کے لیے مثالی نہیں تھیں، لیکن بعض اوقات وہ گیند کو سیون، سوئنگ یا عجیب طریقے سے اچھالنے کی صلاحیت سے بلے بازوں کو حیران کر دیتے ہیں۔ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ سکندر بخت سرفراز نے ریورس سوئنگ تیار کی۔ تبصرہ نگاروں کو اس وقت یہ احساس نہیں تھا کہ یہ ریورس سوئنگ ہے، حالانکہ انہوں نے محسوس کیا کہ اس میں پرانی گیند کو ہوا میں منتقل کرنے کی غیر معمولی صلاحیت ہے۔ اس نے اپنا علم عمران خان، وسیم اکرم اور وقار یونس تک پہنچایا، جنہوں نے 1980ء اور 1990ء کی دہائی کے آخر میں اس نئی قسم کی باؤلنگ کو مشہور کیا۔ایک بلے باز کے طور پر وہ گیند کے نچلے آرڈر کے اچھے اسٹرائیکر تھے خاص طور پر جب ڈرائیونگ کرتے تھے اور تین مواقع پر سیریز میں اس کی اوسط 40 سے زیادہ تھی۔

میچ فکسنگ کے خلاف جنگ[ترمیم]

جب باب وولمر جمیکا میں مردہ پائے گئے تو سرفراز نے پوسٹ مارٹم سے پہلے ہی اسے کرکٹ میں بدعنوانی سے جوڑتے ہوئے فوری طور پر مشورہ دیا کہ انہیں قتل کیا گیا ہے۔ اس کے بعد انہوں نے ویسٹ انڈیز میں پاکستانی کرکٹرز کی حفاظت کے بارے میں تشویش کا اظہار کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ وولمر اور انضمام الحق کو اپنے ذرائع کا نام لیے بغیر بکیز سے دھمکیاں مل رہی تھیں۔ انہوں نے جمیکا پولیس کی ساکھ پر سوال اٹھاتے ہوئے تحقیقات میں سکاٹ لینڈ یارڈ کو شامل کرنے کی درخواست کی۔ انہوں نے یہ الزام بھی لگایا کہ 2007ء کے کرکٹ ورلڈ کپ میں پاکستان کا ویسٹ انڈیز کے خلاف جو میچ ہارا وہ فکس تھا۔

سیاسی کیریئر[ترمیم]

1985ء میں سرفراز نے کرکٹ چھوڑ دی اور سیاست میں آ گئے۔ وہ 1985 کے پاکستانی عام انتخابات میں آزاد امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے۔

صحت کے مسائل[ترمیم]

73 سالہ سرفراز نواز اپنے خاندان کے ساتھ لندن کے علاقے ٹوٹنگ میں کئی سالوں سے مقیم ہیں۔ 2019ء میں انہیں دل کی تکلیف کے باعث لندن کے ایک اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ سرفراز نواز پاکستان کے اب تک کے بہترین پیسروں میں سے ایک ہیں۔ انہوں نے 55 ٹیسٹ میچوں میں 177 اور 45 ون ڈے میچوں میں 63 وکٹیں حاصل کیں[1]

اعداد و شمار[ترمیم]

انہوں نے اپنے ٹیسٹ کیریئر میں 55 ٹیسٹ میچوں کی 72 اننگز میں 13 دفعہ ناٹ آئوٹ رہ کر 1045 رنز 17.71 کی اوسط سے بنائے جس میں ان کا سب سے زیادہ سکور 90 رہا۔ انہوں نے 4 نصف سنچریاں سکور کیں جبکہ 45 ایک روزہ بین الاقوامی میچز کی 31 اننگز میں 8 دفعہ ناٹ آئوٹ رہ کر انہوں نے 221 رنز بنائے جس میں 34 ناقابل شکست رنز ان کے کسی ایک اننگ کا بہترین مجموعہ تھا۔ ان کی اوسط 9.60 رہی۔ سرفراز نواز نے 299 فرسٹ کلاس میچوں کی 367 اننگز میں 72 دفعہ ناٹ آئوٹ رہ کر 5709 رنز سکور کئے تھے' 90 ان کا سب سے زیادہ سکور تھا اور انہیں 17 نصف سنچریوں کے ساتھ 19.35 کی اوسط حاصل ہوئی تھی۔ ٹیسٹ میں 25' ون ڈے میں 8 اور فرسٹ کلاس میں 163 کیچز ان کی شاندار فیلڈنگ کو ثابت کررہے تھے جبکہ بائولنگ میں انہوں نے 5798 رنز دے کر 171 ٹیسٹ وکٹ حاصل کئے۔ 9/86 ان کی کسی ایک اننگ میں بہترین بائولنگ جبکہ 11/125 کسی ایک ٹیسٹ میں بہترین بائولنگ کا ریکارڈ تھا۔ ان کی بائولنگ اوسط 32.74 تھی۔ انہوں نے 14 مرتبہ کسی ایک اننگ میں 4 وکٹ حاصل کئے جبکہ ایک اننگ میں 5 یا اس سے زائد وکٹ کا واقعہ 4 دفعہ رونما ہوا۔ ایک دفعہ انہوں نے ٹیسٹ میں 10 وکٹ کا کارنامہ بھی انجام دیا جبکہ ایک روزہ میچوں میں انہوں نے 1463 رنز دے کر 63 کھلاڑیوں کو کعریز چھوڑنے پر مجبور کیا۔ 4/27 ان کی بہترین بائولنگ تھی جبکہ ان کی بائولنگ اوسط فی وکٹ 23.82 رہی۔ اسی طرح فرسٹ کلاس میچوں میں انہوں نے 24750 رنز دے کر 1005 وکٹیں حاصل کیں۔ ان کی کسی ایک اننگ میں بہترین کارکردگی 86 رنز کے عوض 9 وکٹوں کا حصول تھا جبکہ ان کی اوسط 24.62 رہی۔ انہوں نے 46 مرتبہ ایک اننگ میں 5 یا اس سے زیادہ وکٹ حاصل کئے جبکہ 4 مرتبہ انہیں ایک میچ میں 10 وکٹ حاصل ہوئے[2]

بولنگ اوسط[ترمیم]

سرفراز نواز کی بہترین بولنگ اوسط بلحاظ سیریز (ماخذ)
سیزن مہمان ملک بالمقابل ٹیسٹ گیندیں اوور میڈن رنز وکٹیں بہترین بولنگ اوسط 5 وکٹ 10 وکٹ
1968–69ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  انگلستان 1 204 34 6 78 0 0/78
1972–73ء Flag of Australia.svg آسٹریلیا  آسٹریلیا 2 677 84.5 (8 گیند) 16 (8 گیند) 308 12 4/53 25.66
1972–73ء Flag of New Zealand.svg نیوزی لینڈ  نیوزی لینڈ 3 504 84 7 275 5 4/126 55.00
1972–73ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  انگلستان 2 444 73 25 156 1 1/51 156.00
1974ء Flag of England.svg انگلستان  انگلستان 3 726 121 34 259 9 4/56 28.77
1974–75ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویسٹ انڈیز 2 544 90.4 5 266 8 6/89 33.25 1
1976–77ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  نیوزی لینڈ 3 635 105.5 13 284 13 3/53 21.84
1976–77ء Flag of Australia.svg آسٹریلیا  آسٹریلیا 2 504 63 (8 گیند) 11 (8 گیند) 218 8 3/42 27.25
1976–77ء  ویسٹ انڈیز  ویسٹ انڈیز 4 1,185 197.3 54 579 16 4/79 36.18
1977–78ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  انگلستان 2 616 102.4 24 152 5 4/68 30.40
1978ء Flag of England.svg انگلستان  انگلستان 2 156 26 7 51 5 5/39 10.20 1
1978–79ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  بھارت 3 890 148.2 27 425 17 5/70 25.00 1
1978–79ء Flag of New Zealand.svg نیوزی لینڈ  نیوزی لینڈ 3 810 135 27 296 8 4/61 37.00
1978–79ء Flag of Australia.svg آسٹریلیا  آسٹریلیا 2 891 111.3 (8 گیند) 21 (8 گیند) 322 13 9/86 24.76 1 1
1979–80ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  آسٹریلیا 3 666 111 30 255 2 2/119 127.50
1980–81ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویسٹ انڈیز 2 200 33.2 10 79 2 1/24 39.50
1981–82ء Flag of Australia.svg آسٹریلیا  آسٹریلیا 3 708 168 22 306 9 3/11 34.00
1982ء Flag of England.svg انگلستان  انگلستان 1 222 35.2 9 78 3 3/56 26.00
1982–83ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  بھارت 6 1,447 241.1 61 633 19 4/63 33.31
1983–84ء Flag of Australia.svg آسٹریلیا  آسٹریلیا 3 1,074 179 41 419 8 3/105 52.37
1983–84ء Flag of Pakistan.svg پاکستان  انگلستان 3 848 141.2 26 359 14 4/42 25.64
1968–84ء کل 55 13,951 1979.5
259.2 (8 گیند)
438
48 (8 گیند)
5,798 177 9/86 32.75 4 1

حوالہ جات[ترمیم]