سرگوجا ضلع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ضلع سرگوجا
سرگوجا ضلع
چھتیس گڑھ کا ضلع
چھتیس گڑھ میں محل وقوع
چھتیس گڑھ میں محل وقوع
ملک بھارت
ریاست چھتیس گڑھ
صدر دفتر امبیکاپور، بھارت
رقبہ
 • کل 16,359 کلو میٹر2 (6,316 مربع میل)
آبادی (2011)
 • کل 2,361,329
 • کثافت 140/کلو میٹر2 (370/مربع میل)
آبادیات
 • خواندگی 61.16
 • جنسی تناسب 991
ویب سائٹ سرکاری ویب سائٹ
فائل:Mahamaya temple ambikapur.jpg
مهامایا مندر، امبیکاپور

سرگوجا بھارتی صوبہ چھتیس گڑھ کا ایک ضلع ہے۔ ضلع کا صدر مقام امبیکاپور ہے۔ بھارت کے چھتیس گڑھ صوبہ کے شمال - مشرقی حصہ میں قبائلی ضلع سرگوجا واقع ہے۔ اس ضلع کے شمال میں شمالی صوبہ کی سرحد ہے، جبكہ مشرق میں جھارکھنڈ صوبہ ہے۔ ضلع کے جنوبی علاقے میں چھتیس گڑھ کا رائے گڑھ، کوربا اور جشپور ضلع ہے، جبكہ اس کے مغرب میں کوریا ضلع ہے۔

جغرافیائی مقام[ترمیم]

اس ضلع کا عرض البلد رقبہ 230 37 '25 "سے 240 6' 17" شمالی طول بلد اور طول البلد رقبہ 810 37 '25 "سے 840 4' 40" مشرقی عرض بلد تک ہے۔ یہ ضلع جغرافیائی ساخت کے اعتبار سے وندھیاچل - بگھیل كھنڈ اور چھوٹا ناگپور کا لازمی حصہ ہے۔ اس ضلع کی سمندر کی سطح سے اونچائی تقریبا 609 میٹر ہے۔

فائل:New surguja map (1).jpg
سرگوجا کا نقشہ

قیام[ترمیم]

فائل:Surguja throne.jpg
سرگوجا صوبہ کا پایہ تخت

اس ضلع کا قیام 1 جنوری 1948 کو ہوا تھا جو 1 نومبر 1956 کو مدھیہ پردیش صوبہ کے تعمیر کے تحت مدھیہ پردیش میں شامل کر دیا گیا۔ اس کے بعد 25 مئی 1998 کو اس ضلع کی پہلی انتظامی تقسیم کرکے کوریا ضلع بنایا گیا۔ جس کے بعد موجودہ سرگوجا ضلع کا رقبہ 16359 مربع کلومیٹر ہے۔ 1 نومبر 2000 کو جب چھتیس گڑھ صوبہ مدھیہ پردیش سے الگ ہوا تب سرگوجا ضلع کو چھتیس گڑھ صوبہ میں شامل کر دیا گیا۔ اس وقت سرگوجا ضلع دوبارہ دو اور حصوں میں تقسیم ہو گیا ہے جس سے دو نئے اضلاع ضلع سورج پور اور ضلع بلرام پور وجود میں آئے ہیں۔

نام[ترمیم]

سرگوجا کی تاریخ سے ہمیں یہ پتہ چلتا ہے کہ سرگوجا کئی ناموں سے مشہور رہا ہے۔ ایک طرف جہاں رامائن کے دور میں اسے دنڈكارنے کہتے تھے، وہیں دوسری جانب دسویں صدی میں اسے ڈناڈور کے نام سے جانا جاتا تھا۔ یہ کہنا مشکل ہے کہ اس خطہ کا نام سرگوجا کب اور کیوں پڑا۔ اصل میں سرگوجا کسی ایک خاص مقام کا نام نہیں ہے بلکہ ضلع کے کل زمینی رقبہ کو ہی سرگوجا کہا جاتا ہے۔

قدیم روایتوں کے مطابق سابقہ دور میں سرگوجا کو مندرجه ذیل نام سے جانا جاتا تھا:

  • سورگوجا - سور + گوجا - یعنی دیوتاوں اور ہاتھیوں والی زمین۔
  • سورگجا - سورگ + جا - سورگ (جنت) کی جیسی زمین۔
  • سورگونجا - سور + گونجا - قبائلیوں کے لوک گیتوں کی شیریں موسیقی۔

موجودہ دور میں اس ضلع کو سرگوجا نام سے ہی جانا جاتا ہے۔ جس کا انگریزی زبان میں تلفظ آج بھی SURGUJA ہی ہے۔

آب و ہوا[ترمیم]

آب و ہوا وہ جغرافیائی حالت ہے جو تمام مقامی کیفیات کو متاثر کرتی ہے۔ سرگوجا ضلع بھارت کے مرکزی حصے میں واقع ہے جس کی وجہ سے یہاں کی آب و ہوا گرم اور موسمی ہے۔ سرگوجا ضلع میں موسم خزاں کے تین موسم ہوتے ہیں جو مندرجہ ذیل ہے۔

موسم گرما خزاں

یہ خزاں مارچ سے جون ماہ تک ہوتی ہے چونکہ خط سرطان ضلع کے وسط میں پرتاب پور سے ہو کر گزرتا ہے اس لیے گرمیوں میں سورج کی کرنیں یہاں براہ راست پڑتی ہیں۔ اس لیے یہاں کا درجہ حرارت گرمیوں میں بلند ہوتا ہے۔ اس خزاں میں ضلع کے پتھریلی علاقوں میں موسم گرما ٹھنڈ اور خوشگوار ہوتا ہے۔ اس دوران سرگوجا ضلع کے مین پاٹ جسے چھتیس گڈھ کے شملہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، اس کا درجہ حرارت نسبتا کم ہوتا ہے جس سے وہاں کا موسم بھی خوشگوار رہتا ہے۔

موسم باراں

یہ خزاں جولائی سے اکتوبر تک ہوتی ہے، اس ضلع میں جولائی اور اگست میں سب سے زیادہ بارش ہوتی ہے۔ ضلع کے مغربی علاقے میں بارش سب سے زیادہ ہوتی ہے۔ یہاں کی بارش موسمی ہوتی ہے۔

موسم سرما

یہ خزاں کی شروعات نومبر میں ہوتی ہے اور فروری تک رہتی ہے، جنوری یہاں کا سب سے زیادہ سرد مہینہ ہوتا ہے۔ ضلع کے کوہستانی علاقوں جیسے مین پاٹ، سامری پاٹ میں درجہ حرارت 5.0 سے کم چلا جاتا ہے۔ کبھی کبھی ان علاقوں میں زالہ باری بھی ہوتی ہے۔

ضلع انتظامیہ[ترمیم]

سرگوجا ضلع میں:

  • 19 تحصیل ہیں
  • 7 بلاک
  • 296 پٹواری حلقہ
  • 977 گرام پنچائت
  • 1772 آمدنی گرام
  • 27 پولیس ریزرو سینٹر
  • 27 آمدنی سرکل
  • 3 پولیس ضلع
  • 7 بلاکس
  • 8 اسمبلی علاقے
  • 2 محفوظات

سیاحتی مقامات[ترمیم]

یہاں متعدد آبشار ہیں: -

چندرا گرام[ترمیم]

امبیکاپور- رایگڈھ شاہراہ پر 15 کلومیٹر کی دوری پر چندرا گرام واقع ہے۔ اس گرام سے شمالی سمت میں تین کلومیٹر کی دوری پر پانی کا آبشار واقع ہے۔ اس جھرنے کے پاس ہی محکمہ جنگلات کی ایک نرسری ہے، جہاں مختلف قسم کے درخت - پودوں کی نمائش کا اہتمام کیا گیا ہے۔ سال بھر سیاح اس جھرنے کے قدرتی حسن سے لطف اندوز ہونے جاتے ہیں۔ یہاں پر ایک تتلی پارک بھی تیار کیا جا رہا ہے۔

ركسگنڈا آبشار[ترمیم]

اوڈگی ترقیاتی بلاک میں بہارپور کے قریب بلگی نامی مقام کے قریب واقع ریہڈ دریا پہاڑ شرركھلا کی اونچائی سے گر کر ركسگنڈا آبشار کی تعمیر کرتی ہے جس سے وہاں ایک سكرے کنڈ کی تعمیر کے ہیں یہ تالاب انتہائی گہرا ہے۔

بھے ڈیا پتھر آبشار[ترمیم]

كسمی چاندو راستے پر تیس کلومیٹر کی دری پر یدری گرام ہے۔ یدری گرام سے تین کلومیٹر جنگل کے درمیان بھے ڈیا پتھر نامی جلپرپات ہے۔

بے نگگا آبشار[ترمیم]

كسمی - سامری راستے پر سامریپاٹ کے جمیرا گرام کے سابق - جنوبی زاویہ پر پہاڑی سلسلہ کے درمیان بے نگگا دریا کا ادگم مقام ہے۔ یہاں سال وركشو کے گروپ میں شامل ایک شولگ بھی قائم ہے۔

سیدم آبشار[ترمیم]

امبیکاپور - رائے گڈھ راستے پر امبیکاپور سے 45 کلومیٹر کی دوری پر سیدم نام کا گاؤں ہے۔ اس کے جنوبی سمت میں دو کلومیٹر دور پہاڑیوں کے درمیان ایک خوبصورت آبشار بہتا ہے۔ اس آبشار کے گرنے والے مقام پر ایک پانی کا تالاب بنا ہوا ہے۔ یہاں پر ایک شیو مندر بھی ہے۔ شوراتری پر سے دم گاؤں میں میلہ لگتا ہے۔ اس آبشار کو رام آبشار کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ یہاں سیاحوں سال بھر جاتے ہیں۔

دیگر کئی دلچسپ مقامات بھی ہیں
-

مین پاٹ[ترمیم]

مین پاٹ امبیکاپور سے 75 کلومیٹر دوری پر ہے اسے چھتیس گڑھ کا شملہ کہا جاتا ہے۔ مین پاٹ وندھ پہاڑ مالا پر واقع ہے جس کی سمندر کی سطح سے اونچائی 3781 فٹ ہے اس کی لمبائی 28 کلومیٹر اور چوڈای 10 سے 13 کلو میٹر ہے امبیکاپور سے مین پاٹ جانے کے لیے دو راستے ہے پہلا راستہ امبیکاپور - سیتاپور روڈ سے ہو کر جاتا اور دوسرا گرام دریما ہوتے ہوئے مین پاٹ تک جاتا ہے۔ قدرتی وسائل سے بھرپور یہ ایک خوبصورت مقام ہے۔ یہاں سربھنجا تالاب، ٹایگر پواں ئیٹ اور مچھلی پواں ئیٹ اہم سیاحتی مقامات ہیں۔ مین پاٹ ہی رہند اور مانڈ دریا کا سنگم ہوا ہے۔

اسے چھتیس گڑھ کا تبت بھی کہا جاتا ہے۔ یہاں تبتی لوگوں کی زندگی اور بودھ مندر توجہ کا مرکز ہے۔ یہاں پر ایک فوجی اسکول کی تعمیر کا بھی منصوبہ ہے۔ یہ قالین اور پامیرین کتوں کے لیے مشہور ہے۔

ٹھنٹھنی پتھر[ترمیم]

امبیکاپور شہر سے 12 کلومیٹر۔ کی دری پر درما ہوائی اڈا ہے۔ درما ہوائی اڈے کے پاس بڑے - بڑے پتتھرو کا گروپ ہے۔ ان پتتھرو کو کسی ٹھوس چیز سے ٹھوكنے پر آواجے آتی ہے۔

کیلاش غار[ترمیم]

امبیکاپور شہر سے مشرقی سمت میں 60 کلومیٹر۔ پر واقع سامربار نامی مقام ہے، جہاں پر قدرتی جنگل کے درمیان کیلاش غار واقع ہے۔

تاتاپانی[ترمیم]

امبیکاپور - رامانجگج راستے پر امبیکاپور سے تقریبا 80 کلومیٹر۔ در ہائی وے سے دو پھلاگ مغربی سمت میں ایک گرم پانی ذریعہ ہے۔ اس مقام سے آٹھ سے دس گرم پانی کے كنڈ ہے۔

ساراسور[ترمیم]

امبیکاپور - بنارس روڈ پر 40 کلومیٹر۔ پر بھے سامڈا مقام ہیں۔ بھے سامڈا سے بھے یاتھان روڈ پر 15 کلومیٹر۔ کی دوری پر عظیم دریا کے کنارے پر ساراسور نامی مقام ہیں۔

بانك تالاب[ترمیم]

براہ امبیکاپور اسی کلومیٹر کی دوری پر اوڈگی ترقیاتی بلاک ہے، یہاں سے 15 کلومیٹر کی دوری پر پہاڑیوں کے دامن میں بانك گرام بسا ہے۔ اسی گرام کے پاس رهند دریا محکمہ جنگلات کے مہمان خانہ کے پاس نیم چندراكار بہتی ہوئی ایک بہت بڑا پانی کا تالاب بناتا ہے۔ اسے ہی بانك پانی تالاب کہا جاتا ہے۔ یہ پانی کا تالاب انتہائی گہرا ہے، جس میں مچھلیاں پائی جاتی ہے۔ یہاں سال بھر سیاحوں کی مچھلیوں کا شکار کرنے اور گھومنے آتے ہیں۔

آثار قدیمہ[ترمیم]

رام گڑھ[ترمیم]

یہ سرگوجا کے تاریخی مقامات میں سب سے قدیم ہے۔ یہ امبیکاپور - بلاسپور راستے میں واقع ہے۔ اسے رام گڑھ بھی کہا جاتا ہے۔

لكشمن گڈھ[ترمیم]

امبیکاپور سے 40 کلومیٹر۔ دور لكشمن گڈھ واقع ہے۔ یہ مقام امبیکاپور - بلاسپور راستے پر مهے شپر سے 03 کلومیٹر۔ کی دوری پر ہے۔

كدری قدیم مندر[ترمیم]

امبیکاپور - كسمی - سامری راستے پر 140 کلومیٹر۔ دور كدری گرام واقع ہے۔ یہاں آثار قدیمہ اہمیت کی ایک بڑی قدیم مندر ہے۔ کئی پروو پر یہاں میلے کا انعقاد ہوتا رہتا ہے۔

ارجنگڈھ[ترمیم]

ارجنگڈھ مقام شكرگڈھ ترقیاتی بلاک کے جوكاپاٹ کے بیهڈ جنگل میں واقع ہے۔ یہاں قدیم کے لیے کا بھگناوے ش دکھائی پڈتا ہے۔ ایک مقام پر قدیم لمبی یٹو کا گھیراؤ ہے۔

سیتا قلم[ترمیم]

سرجپر تحصیل کے گرام مهلی کے پاس ایک پهاڈی پر شیل تصاویر کے ساتھ ہی ساتھ غیر واضح شكھ رسم الخط کی بھی اطلاع ملی ہے۔ دیہی عوام اس قدیم رسم الخط کو "سیتا تحریر" کہتی ہے۔

ڈپاڈیه[ترمیم]

ڈپاڈیه كنهر، سوریہ اور موٹے دریاؤں کے سنگم کے کنارے بسا ہوا ہے۔ اس کے ارد گرد پہاڑیوں سے گھرا منورم مقام ہے۔ یہاں چار پانچ کلومیٹر کے رقبہ میں کئی مندروں کے ٹلے ہے۔

مهے شپر[ترمیم]

مهے شپر، ادے پور سے شمالی سمت میں 08 کلومیٹر۔ کی دوری پر واقع ہے۔ ادے پور سے كے دما راستے پر جانا پڈتا ہے۔ اس کے ظاہر سائٹ قدیم شو مندر (دسویں صدی عیسوی)، چھ ركا دے ر کے وشنو مندر (10 ویں صدی)، تیرتھكر ورشب ناتھ پرتیما (8 ویں صدی عیسوی)، تخت پر وراجمن تپسوی، بھگوان وشنو - لکشمی مورتی، نرسمہا اوتار، هریكشیپ کو چیرنا، مں ڈ ٹیلا (پرہلاد کو گود میں شامل لیے)، سكدھماتا، گنگا - جمنا کی مورتیا، عکس دیکھتی نایکا اور 18 واكیو کا شلالیھ ہیں۔

ستمهلا[ترمیم]

امبیکاپور کے جنوب میں لكھنپر سے تقریبا دس کہ۔ میٹر۔ دور كلچا گرام واقع ہے، یہیں پر ستمهلا نامی مقام ہے۔ یہاں سات مقامات پر بھگناوشے ش ہے۔

مذہبی مقام[ترمیم]

مہامایا مندر[ترمیم]

سرگوجا ضلع کے دار الحکومت امبیکاپور کی مشرقی پہاڑی پر قدیم مہامایا دیوی کا مندر واقع ہے۔ انہی مہامایا یا امبیکا دیوی کے نام پر ضلع کے دار الحکومت کا نام امبیکاپور رکھا گیا۔ ایک قول کے مطابق امبیکاپور میں واقع مہامایا مندر میں مہامایا دیوی کا جسم موجود ہے اور ان کا سر بلاسپور ضلع کے رتن پور کے مہامایا مندر میں ہے۔ اس مندر کی تعمیر مہامایا رگھوناتھ شرن سنگھ دیو نے کرایا تھا۔ چیتر (پہلا ہندی مہینہ) اور شردی نوراتری (مخصوص نو راتوں) میں خصوصا بے شمار معتقدین اس مندر میں جا کر پوجا کرتے ہے۔

مہامایا مندر سرگوجا کا سب سے مشہور مندر ہے۔

تکیا، سرگوجا[ترمیم]

امبیکاپور شہر کے اتر - سابق سرے پر تکیہ گرام واقع ہے اسی گرام میں بابا مراد شاہ، بابا محمد شاہ اور انہی کے پاؤں کی طرف ایک چھوٹی مزار ان کے طوطے کی ہے۔ ہر سال مئی - جون میں یہاں ارس منعقد ہوتا ہے، جس ملک بھر کے جانے مانے كووال بلائے جاتے ہیں۔ یہاں پر تمام مذہب کے اور فرقہ کے لوگ ایک جٹ ہوتے ہیں مزار پر چادر چڈھاتے ہیں۔

كدرگڈھ[ترمیم]

كدرگڈھ سرگوجا ضلع کے بھے یاتھان کے قریب ایک پهاڈی کے سربراہی پر واقع ہے۔ یہاں پر بھگوتی دیوی کا ایک مشہور مندر ہے، اس مندر کے قریب تالاب اور ایک قلعہ کھنڈر ہے

پاردے شور شیو مندر، سرگوجا[ترمیم]

پاردے شور شیو مندر پرتاپپر ترقی كھڈ سے ڈیڑھ کلومیٹر۔ جنوبی کی طرف بنكھے تا میں مشن اسکول کے قریب دریا کنارے قائم ہے۔ اس شو مندر میں تقریبا 21 کلو خالص پارے کی واحد منفرد "پارد شولگ" قائم ہے۔

شیوپور، سرگوجا[ترمیم]

امبیکاپور سے پرتاپپر کی دوری 45 کلومیٹر۔ ہے۔ پرتاپپر سے 04 کلومیٹر۔ فاصلے پر شیوپور گرام کے پاس ایک پهاڈی کی تلہٹی میں انتہائی منورم قدرتی ماحول میں ایک قدیم شو مندر ہے۔

بلدوار غار، سرگوجا[ترمیم]

یہ غار شیوپور کے قریب امبیکاپور سے 30 min کے فاصلے پر ہے | اس کئی قدیم مجسمے ہیں | اس عظیم نامی ایک دریا کا پانی نکلتا رہتا ہے، وہیں اس دریا کا آغاز بھی ہے | اس غار کا دوسرا سرے مهامایا مندر کے قریب نکلتا ہے |

دیوگڈھ، سرگوجا[ترمیم]

امبیکاپور سے لكھنپر 28 کلومیٹر۔ کی دوری پر ہے اور لكھنپر سے 10 کلومیٹر۔ دور دے وگڈھ واقع ہے۔ دے وگڈھ قدیم دور میں بابا یمدگن کی سادھنا ستھل رہی ہے۔

ابیارنی[ترمیم]

سے مرسوت ابیارنی[ترمیم]

1978 میں قائم سے مرسوت ابھیاری سرگوجا جلے کے مشرقی ونمڈل میں واقع ہے۔ اس کا رقبہ 430.361 مربع کہ۔ میٹر۔ ہے۔ ضلع ہیڈکوارٹر امبیکاپور سے 58 کہ۔ میٹر۔ کی دوری پر یہ بلرام پور، راجپر، پرتاپپر ترقی جلدوں میں وسیع ہے۔ ابھیاری میں سیندور، سے مرسوت، شعور اور ساسو دریاؤں کا پانی بہہ ہوتا ہے۔ ابھیاری کے زیادہ تر علاقے میں سے مر سوت دریا بہتی ہے اس لیے اس کا نام سے مرسوت پڑا۔ اس توسیع مشرق سے مغرب 115 کہ۔ میٹر۔ اور شمال سے جنوب میں 20 کہ۔ میٹر۔ ہے۔ یہاں پر شیر، تے ندا، سانبھر، چیتل، نیل، واركگڈیر، چوسها، چكرا، كوٹری جنگلی کتا، جنگلی سور، ریچھ، مور، بندر، بھے ڈیا وغیرہ پائے جاتے ہیں۔

تمور پگلا ابیارنی[ترمیم]

1978 میں قائم امبیکاپور - وارانسی ہائی وے کے 72 کہ۔ میٹر۔ پر تمور پگلا ابھیاری ہے جہاں پر ڈاڈكروا بس سٹاپ ہے۔ 22 کہ۔ میٹر۔ مغرب میں رمكولا ابھیاری پركشے تر کا ہیڈ کوارٹر ہے۔ یہ ابھیاری 608.52 مربع کہ۔ میٹر۔ رقبہ پر بنایا گیا ہے جو واڈرپھنگر علاقے شمالی سرگوجا ونمڈل میں واقع ہے۔ اس کے قیام 1978 میں کی گئی۔ اس میں خاص طور شیر تے ندا، سانبھر، چیتل، نیل، وركڈیر، چكارا، غور، جنگلی سور، ریچھ، سونكتتا، بندر، خرگوش، گلهری، سیار، نے ولا، لومڈی، تیتر، بٹیر، چمگادڈ، وغیرہ ملتے ہیں۔

مشہور شخصیات[ترمیم]

خود 0 راجموهنی دیوی (سماجی مصلح)

ان کا جنم سرگوجا جلے کے پرتاپپر وكاسكھڈ کے شارداپر گرام میں سن 1914 کو ہوا تھا۔ ان کی زندگی سگھرشمی تھا۔ ان کا اصلی نام رجمن بائی تھا۔ مہاتما گاندھی سے متاثر انهونے سرگوجا جلے اور دوسرے صوبہوں جیسے بہار اور اترپردیش کے سرحدی گرامو میں سماجی اصلاح کے لیے اپنا پیغام علامت تک پہنچایا۔ ان کا پیغام تھا - "مخلوق تشدد مت ٹیکس، شراب پینا چھوڑ دو، گوشت بکشن مت ٹیکس، سنمارگ پر چلو، اسی میں زندگی کا نچوڑ ہے۔" انہیں سن 1986 میں اندرا گاندھی قومی سماجی خدمات پرسكار اور 1989 میں شامل صدر کی طرف سے "پدم شری" پرسكار سے نوازا گیا تھا۔ 6 جنوری 1994 کو راجموهنی دیوی نے دنیا کو الوداع کہا۔

محترمہ سونابای رجوار (سددھهستھ شلپی)

سرگوجا جلے کے ہیڈکوارٹر امبیکاپور سے تقریبا 28 کلومیٹر کی دری پر امبیکاپور - بلاسپور راستے پر لكھنپر واقع ہے۔ اس کے پاس گرام پهپٹرا میں بین الاقوامی شہرت حاصل سددھهستھ شلپی محترمہ سونابای رجوار کا گھر ہے۔ مٹی کرافٹ کے لیے انہیں صدر پرسكار، م 0 سوال 0 حکومت کا تلسی احترام اور کرافٹ گرو ایوارڈ سے نوازا گیا ہے۔ ان کی طرف سے بنائی گئی مٹی کی کئی نمونے کا مظاہرہ ملک اور بیرون ملک میں منعقد کئی نمائشوں میں کیا جا چکا ہے۔

شری رام کمار ورما جی (مشہور ادیب ویگیكار اور مزاحیہ شاعر)

سرگوجا ضلع کے امبیکاپور نامی شہر کے رہائشی ادب رتن شری رام کمار ورما جی نے 19 اپریل 1998 کو بہترین مخلوق کے تحت دوردرشن بھوپال کی طرف سے پہلا انعام شکل گولڈ میڈل اور سرٹیفکیٹ، ہز ایکسی لینسی صدر صاحب مسٹر کے آر نارائنن جی، ہز ایکسی لینسی صدر صاحب ڈاکٹر اے پی جے عبد الکلام جی، وزیر اعظم صاحب مسٹر اٹل بہاری واجپئی جی، وزیر اعظم صاحب مسٹر منموہن سنگھ جی سمیت بھارت سال کے چاروں دشاو کے ایکسی لینسی گورنر صاحب اور مكھیمتریجی سے تحریری میں شامل سلام اور تعریف خط حاصل کر ضلع کا مان بڑھایا ہے۔ آپ نے سرگوجا کے ادب کو عالمی سطح پر imprinted کرنے میں شامل مهتتوپر تعاون دیا ہے۔ آپ ملک خارجہ کی نامی اور مائشٹھیت سستھاو نے قدر کرتے ہوئے مختلف زیبائش اور سممانوپادھ سے نوازا ہے۔

مسٹر سمعی شرما (پینٹر)

سرگوجا جلے کے ہیڈکوارٹر امبیکاپور کے رہائشی پینٹر مسٹر سمعی شرما نے اپنی منموہک مصوری سے اس جلے کو گورواوت کیا ہیں۔ ان کی طرف سے سرگوجا جلے کے قدرتی حسن، دیہاتیوں کی زندگی وغیرہ موضوعات پر کئی تصاویر پیدا کیا ہے۔ اب تک ان کی طرف سے ہزاروں پے ٹگس اور رےكھاچترو کا استحصال کیا جا چکا ہے۔ "قحط اور روٹی" تصاویر کے لیے انہیں حکومت سے نوازا بھی کیا جا چکا ہے۔

سرگوجا جلے کو گورواوت کرنے والے اور بھی کئی شخص ہیں جنھوں نے اپنی پرتیبھا سے کچھ ایسا کام کیا جس سے اس ضلع کا نام روشن ہوا۔

ذرائع آمد ورفت[ترمیم]

فطرت نے سرگوجا جلے کو مختلف قسم کے جنگلوں، سروورو، دریاؤں، پهاڈ وغیرہ سے اس طرح کامل کیا ہے کہ آپ اس مقدس زمین پر ضرور آنا چاہیں گے۔ اسی زمین پر جہاں ایک طرف مهاكو كالیداس نیں اپنے سپرسدھ مہاکاوی 'مےگھدت' کی تخلیق کی تھی، وہیں ہے طرف بھگوان رام، سیتا ماں اور بھائی لکشمن سمیت یہاں بن باس کے کچھ دن کاٹے تھے۔ سرگوجا ضلع سڑک اور ریل راستے سے براہ راست جڑا ہوا ہے۔

سڑک راستہ

چھتیس گڑھ صوبہ میں:

  • رائے پور سے امبیکاپور (ضلع ہیڈکوارٹر) - 358 کلومیٹر
  • بلاسپور سے امبیکاپور - 230 کلومیٹر
  • رائے گڑھ سے امبیکاپور - 210 کلومیٹر
  • مدھیہ پردیش صوبہ میں: انپپر سے امبیکاپور - 205 کلومیٹر
  • شمالی صوبہ میں: وارانسی سے امبیکاپور - 350 کلومیٹر
  • جھارکھنڈ صوبہ میں: رانچی سے امبیکاپور - 368 کلومیٹر
  • اڈیسا صوبہ میں: جھارسگڈا سے امبیکاپور - 415 کلومیٹر
ریل راستہ

سرگوجا ضلع ہیڈکوارٹر امبیکاپور 03 جون 2006 سے ریل لائن سے جڈ گیا ہے۔ امبیکاپور شہر کے اہم راستہ دے ویگج روڈ پر واقع گاندھی چوک سے ریلوے اسٹیشن کی دری تقریبا 5 کلومیٹر ہے۔ یہاں سے ٹے مپو، ٹیکسی وغیرہ سے امبیکاپور شہر آیا جا سکتا ہے۔ آپ مندرجہ ذیل ٹرے ن رٹ استعمال امبیکاپور آنے کے لیے رسائی حاصل ہے:

بلاسپور سے امبیکاپور آنے کے لیے بس اور ٹرے ن دونوں کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔ بس امبیکاپور تک براہ راست آتی ہے جبكہ ٹرے ن انپپر (مدھیہ پردیش) هوتے ہوئے امبیکاپور تک آتی ہے۔ رائے گڑھ سے امبیکاپور آنے کے لیے بس کی سہولت ہی دستیاب ہے۔

  • ہوا راستہ:

امبیکاپور براہ راست آنے کے لیے ہوا راستہ دستیاب نہیں ہے، آپ رائے پور تک ملک کے مندرجہ ذیل مقامات سے ہوا راستے سے آ سکتے ہے، اس کے بعد رائے پور سے امبیکاپور آنے کے لیے بس کا استعمال کرنا ہوگا:

  • نئی دہلی سے رائے پور
  • ممبئی سے رائے پور
  • چنئی سے رائے پور
  • کولکتہ سے رائے پور
  • ناگپور سے رائے پور
  • رانچی سے رائے پور

بیرونی روابط[ترمیم]

ڑا۔ سنجے الگ - چھتیس گڑھ کی صوبہیں اور جمینداریا (شان و شوکت اشاعت، رائے پور 1، ISBN 81-89244-96-5) ڑا۔ سنجے الگ - چھتیس گڑھ کی جنجاتیا / Tribes اور ذات / Castes (مانسی پبلیكے شن، دہلی 6، ISBN 978-81-89559-32-8)