سریندر کور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سریندر کور
The President, Dr. A.P.J. Abdul Kalam presenting Padma Shri to Dr. (Smt.) Surinder Kaur, a Punjabi folk singer, at an Investiture Ceremony at Rashtrapati Bhavan in New Delhi on March 29, 2006.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 25 نومبر 1929  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 14 جون 2006 (77 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نیو جرسی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد ڈولی گُلیریا  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فنی زندگی
صنف لوک موسیقی،  فلمی،  پنجابی لوک موسیقی  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آلات موسیقی صوت  ویکی ڈیٹا پر (P1303) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ گلو کارہ،  نغمہ نگار،  گلو کارہ - گیت نگارہ،  پس پردہ گلوکار،  اداکارہ اور ادکارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
IND Padma Shri BAR.png فنون میں پدم شری  (2006)
سنگیت ناٹک اکادمی ایوارڈ   ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ[1]  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سریندر کور (پنجابی: ਸੁਰਿੰਦਰ ਕੌਰ) (ولادت: 25 نومبر 1929ء - وفات: 14 جون 2006ء) بھارتی پنجابی گلوکارہ اور نغمہ نگار تھیں۔انہوں نے بنیادی طور پر پنجابی لوک گیت گائے، جہاں انہیں صنف کی رہنمائی کرنے اور اس کو مقبول بنانے کا سہرا دیا جاتا ہے، سریندر کور نے 1948ء اور 1952ء کے درمیان ہندی فلموں کے کچھ ہندی فلموں کے لیے بھی گانے گائے۔ پنجابی موسیقی میں ان کی شراکت کے لیے،انہیں پنجاب کی بلبل کا خطاب ملا۔1984ء میں سنگیت ناٹک اکیڈمی ایوارڈ اور 2006ء میں پدم شری اعزاز حاصل کیا۔[2][3][4][5]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

سریندر کور برطانوی ہندوستان میں پنجاب کے دار الحکومت لاہور میں ایک پنجابی سکھ گھرانے میں پیدا ہوئیں۔ وہ دو مشہور پنجابی گلوکار، پرکاش کور کی بہن اور ڈولی گلیریا کی والدہ تھیں۔ اس کی تین بیٹیاں تھیں جن میں سے ڈولی گلیریا سب سے بڑی ہیں۔[6] سریندر کور پنجابی لوک موسیقی کی ممتاز شخصیت رینو راجن سے متاثر تھی۔

پیشہ وارانہ زندگی[ترمیم]

سریندر کور نے اگست 1943ء میں لاہور ریڈیو پر براہ راست نغمہ پیش کر کے اپنے پیشہ وارانہ زندگی کا آغاز کیا اور 31 اگست 1943ء کو، انہوں نے اور ان کی بڑی بہن، پرکاش کور نے پہلا نغمہ، "ماون تے دھیان رال بیتھیان"یچ یم وی کے لیے پیش کیا، اسی کے ساتھ وہ برصغیر پاک و ہند میں سپر اسٹار کے طور پر ابھریں۔[7][3]

بیماری اور وفات[ترمیم]

سریندر کور 2004ء میں پنچکولہ میں آباد ہوگئیں، جن کا مقصد چندی گڑھ کے قریب زیرک پور میں ایک مکان تعمیر کرنا تھا۔ اس کے نتیجے میں، 22 دسمبر 2005ء کو، انہیں دل کا دورہ پڑا اور انہیں جنرل اسپتال، پنچکول میں داخل کرایا گیا۔[8] تاہم، بعد میں، وہ صحت یاب ہوئیں اور ذاتی طور پر جنوری 2006ء میںپدم شری اعزاز لینے دہلی چلی گئیں۔ یہ اور بات ہے کہ وہ ان واقعات سے تکلیف سے واقف تھی جس نے پنجابی موسیقی میں بے مثال شراکت کے باوجود اس اعزاز میں اتنے عرصے تک تاخیر کی۔ لیکن جب اسے ایوارڈ ملا تو بھی انھیں افسوس ہوا کہ اس کے لیے نامزدگی ہریانہ سے آئی ہے نہ کہ پنجاب سے جس کے لیے انہوں نے پانچ دہائیوں سے انتھک محنت کی۔[9]

2006ء میں، ایک طویل بیماری نے انہیں ریاستہائے متحدہ میں علاج کروانے پر مجبور کیا۔ سریندر کور14 جون 2006ء کو 77 سال کی عمر میں نیو جرسی کے ایک اسپتال میں انتقال کر گیئں۔ ان کے تین بیٹیاں تھیں، ان میں سب سے بڑی، گلوکارہ ڈولی گلیریا جو پنچکولہ میں رہتی ہیں، اس کے بعد نندینی سنگھ اور پرمودنی جگگی، دونوں نیو جرسی میں آباد ہیں۔[3] ان کی وفات کے بعد، ہندوستان کے وزیر اعظم، ڈاکٹر منموہن سنگھ نے انھیں "پنجاب کی بلبل" اور "پنجابی لوک موسیقی اور مقبول موسیقی میں ایک افسانوی اور پنجابی راگ میں ایک رجحان ساز" کے طور پر بیان کیا۔ اور مزید کہا، "مجھے امید ہے کہ ان کی لازوال آواز دوسرے فنکاروں کو پنجابی لوک میوزک کی صحیح روایت پر عمل کرنے کی تحریک دے گی"۔

ایوارڈ اور پہچان[ترمیم]

آرٹس میں ان کی شراکت کے لیے انہیں سنگیت ناٹک اکیڈمی ایوارڈ دیا گیا تھا یہ ایوارڈ انڈیا کی نیشنل اکیڈمی آف میوزک، ڈانس اینڈ تھیٹر کے سنگیت ناٹک اکیڈمی نے دیا تھا۔ [10] 2006 ءمیں آرٹ میں ان کی شراکت کے لیے انہیں ملینیم پنجابی گلوکار ایوارڈ اور پدما شری ملا۔ سال 2002ء میں گرو نانک دیو یونیورسٹی نے انہیں ڈاکٹریٹ کی ڈگری سے نوازا تھا۔[8]

میراث[ترمیم]

سریندر کور کی زندگی اور کاموں سے متعلق دوردرشن دستاویزی فلم 2006ءمیں جاری کی جس کا عنوان "پنجاب دی کوئل" تھا۔ بعد میں انہوں نے دور درشن قومی ایوارڈ جیتا تھا۔ پنجاب کی پانچ خواتین کے بارے میں پریت انڈر ڈھلون کی لکھی ہوئی کتاب میں جس کا پہلا نام وہ سریندر کور ہیں۔[11]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. میوزک برینز آرٹسٹ آئی ڈی: https://musicbrainz.org/artist/ab4b02c0-9614-41cd-b847-b5e1233f6ca9 — اخذ شدہ بتاریخ: 23 اگست 2021
  2. Surinder Kaur
  3. ^ ا ب پ "Punjab's Nightingale is no more". دی ٹریبیون newspaper. 16 June 2006. , Retrieved 18 Aug 2016
  4. "Surinder Kaur's profile". LastFM. , Retrieved 18 Aug 2016
  5. "Tributes paid to melody queen". دی ٹریبیون newspaper. 26 June 2006. , Retrieved 18 Aug 2016
  6. "The Sunday Tribune– Books". دی ٹریبیون newspaper. 12 June 2011. اخذ شدہ بتاریخ 18 اگست 2016. 
  7. "Surinder Kaur leaves Delhi to settle in Punjab". دی ٹریبیون newspaper. 24 April 2004. , Retrieved 18 Aug 2016
  8. ^ ا ب "Surinder Kaur leaves Delhi to settle in Punjab". دی ٹریبیون newspaper. 24 April 2004. , Retrieved 18 Aug 2016
  9. "Surinder Kaur gets Padma Shri". دی ٹریبیونnewspaper. 28 January 2006. , Retrieved 18 Aug 2016
  10. http://www.sangeetnatak.gov.in/sna/SNA-Awards.php آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ sangeetnatak.gov.in [Error: unknown archive URL], Sangeet Natak Academy website, Retrieved 18 Aug 2016
  11. "DD's honourable men". دی ٹریبیون. 22 November 2006. , Retrieved 18 Aug 2016