سریہ ابن ابی العوجاء سلمی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سریہ ابن ابی العوجاء سلمی
عمومی معلومات
متحارب گروہ
مسلمان
نقصانات

ذی الحجہ میں سریہ ابن ابی العوجاء جنکی تعداد 50 تھی یہ بنی سلیم کی طرف ابن ابی العوجا سلمی کی سربراہی میں گیا بنی سلیم کا ایک جاسوس جو ان کے ہمراہ تھا بنی سلیم کو پہلے ہی بتا دیاکفار پہلے سے ہی تیار تھے مسلمانوں نے انہیں اسلام کی دعوت دی انہوں نے انکار کیا لڑائی میں تیر اندازی ہوئی مسلمانوں کو ہر طرف سے گھیر لیا بہت سخت لڑائی ہو ان میں سے اکثر شہید ہو گئے مقتولین میں ابن ابی العوجاء بھی زخمیوں میں شامل تھے یہ انہیں مردہ سمجھ کر چھوڑ گئے بہت تکلیف اٹھانے کے بعد یہ صفر میں بارگاہ رسالت میں پہنچے۔[1][2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. المواہب اللدنیہ جلد اول صفحہ 389 فرید بکسٹال لاہور
  2. طبقات ابن سعد، حصہ اول ،صفحہ 340،،محمد بن سعد، نفیس اکیڈمی کراچی