سعید احمد اکبر آبادی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سعید احمد اکبر آبادی
ذاتی
پیدائش1908ء
وفات24 مئی 1985(1985-50-24) (عمر  76–77 سال)
مذہباسلام
دور حکومتبھارت
فرقہسنی
فقہی مسلکحنفی
تحریکدیوبندی
بنیادی دلچسپیاردو ادب، تاریخ، سیرت
قابل ذکر کامفہمِ قرآن، غلامانِ اسلام، صدیقِ اکبر، وحیِ الٰہی
بانئندوۃ المصنفین
مرتبہ

سعید احمد اکبر آبادی (1908ء – 24 مئی 1985ء) ایک بھارتی سنی عالم، اردو-زبان کے مصنف اور ندوۃ المصنفین کے بانیوں میں سے تھے۔ وہ کلیہ دینیات، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے ڈین تھے۔

1908ء میں آگرہ میں پیدا ہوئے، ان کی تعلیم؛ جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی، دار العلوم دیوبند، سینٹ اسٹیفن کالج، دہلی اور اورینٹل کالج لاہور سے ہوئی۔ انھوں نے جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ڈابھیل، مدرسۂ عالیہ فتح پوری، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی، یونیورسٹی آف کالیکٹ اور میک گل یونیورسٹی میں تدریسی خدمات انجام دیں۔ اکبر آبادی؛ علی گڑھ میں کلیہ دینیات کے ڈین پروفیسر کے طور پر ریٹائر ہوئے۔ ان کی تصانیف میں "فہمِ قرآن"، "غلامانِ اسلام"، "صدیقِ اکبر" اور "مسلمانوں کا عروج و زوال" شامل ہیں۔ ان کا انتقال 24 مئی 1985ء کو کراچی میں ہوا۔

ولادت و تعلیم[ترمیم]

سعید اکبرآبادی 1908ء میں نوآبادیاتی بھارتی شہر آگرہ میں پیدا ہوئے۔[1][2] انھوں نے ابتدائی درجات کی تعلیم گھر پر کی، پھر جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی میں تعلیم حاصل کی اور بعد میں دار العلوم دیوبند سے درس نظامی کی تکمیل کی۔ جہاں پر ان کے اساتذہ میں انور شاہ کشمیری، شبیر احمد عثمانی اور ابراہیم بلیاوی شامل تھے۔[2] اس کے بعد انھوں نے اورینٹل کالج لاہور میں تخصصات کی تعلیم حاصل کی۔ اس عرصے کے دوران؛ مدرسہ عالیہ فتح پوری میں مشرقی زبانوں کے استاد کے طور پر اکبر آبادی کی تقرری ہوئی۔ انھوں نے سینٹ اسٹیفن کالج، دہلی سے عربی میں ماسٹر آف آرٹس کی ڈگری حاصل کی۔[1]

خدماتی زندگی[ترمیم]

اورینٹل کالج، لاہور سے تعلیم مکمل کرنے کے بعد؛ اکبر آبادی نے جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ​​ڈابھیل میں مدرس ہوئے۔ اس کے بعد انھوں نے مدرسہ عالیہ فتح پوری میں مشرقی زبانیں پڑھائیں۔ سینٹ اسٹیفن کالج، دہلی سے ایم اے مکمل کرنے کے بعد؛ وہ اسی کالج میں لیکچرر بن گئے۔ اسی دوران محمد ضیاء الحق (سابق صدر پاکستان) ان کے شاگرد بنے۔[2] 1938ء میں اکبر آبادی نے عتیق الرحمن عثمانی، حامد الانصاری غازی اور حفظ الرحمن سیوہاروی کے ساتھ مل کر ندوۃ المصنفین قائم کیا۔[3] 1949ء میں وہ مدرسہ عالیہ کلکتہ کے پرنسپل بنائے گئے۔

1958 میں اکبر آبادی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں کلیہ دینیات کے ڈین مقرر ہوئے۔ انھوں نے ایک کمزور کلیہ کو تبدیل کیا اور گریجویٹ تعلیم اور ڈاکٹریٹ پروگرام متعارف کرایا۔[1] انھوں نے انور شاہ کشمیری پر اپنے (اور کلیہ کے) پہلے ڈاکٹریٹ مقالے کی نگرانی کی، جسے بعد میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی نے 1974ء میں شائع کیا۔[2]

1962ء اور 1963ء کے دوران؛ اکبر آبادی کینیڈا میں میک گل یونیورسٹی میں انسٹی ٹیوٹ آف اسلامک اسٹڈیز میں مہمان پروفیسر تھے۔ 1972 میں اے ایم یو سے ریٹائرمنٹ کے بعد؛ وہ تغلق آباد میں ہمدرد کے ایک اسلامی انسٹی ٹیوٹ میں چار سال کے لیے شامل ہوئے۔

اس کے بعد؛ وہ یونیورسٹی آف کالیکٹ اور پھر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں مہمان پروفیسر رہے۔ دار العلوم دیوبند میں پھر انھیں اپنے نئے تحقیقی شعبہ، شیخ الہند اکیڈمی کا ڈائریکٹر بنا دیا، اس عہدہ پر وہ 25 دسمبر 1982ء سے اپنی وفات (24 مئی 1985ء) تک رہے۔[2]

قلمی خدمات[ترمیم]

اکبر آبادی کی تصانیف میں درج ذیل کتابیں بھی شامل ہیں:[4]

  • الرِّق فی الاسلام
  • فہمِ قرآن
  • غلامانِ اسلام
  • ہندوستان کی شرعی حیثیت
  • ہند پاکستان کی تحریکِ آزادی اور علمائے حق کا سیاسی موقف
  • خطباتِ اقبال پر ایک نظر
  • مسلمانوں کا عروج و زوال
  • صدیقِ اکبر
  • مولانا عبید اللہ سندھی اور ان کے ناقد
  • عثمان ذی النورین
  • وحیِ الٰہی

اسلوبِ نگارش[ترمیم]

اکبر آبادی؛ اسلوب نگارش میں شبلی نعمانی سے متاثر تھے، انھوں نے شبلی کی الفاروق کے رنگ میں صدیق اکبر ؓلکھی، جو برصغیر کے علمی حلقوں میں بہت مقبول ہوئی، ابو الحسن علی ندوی موصوف کے طرز نگارش پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

مولانا اکبرآبادی صاحب کو لکھنے کا بڑا سلیقہ تھا۔ انھوں نے مولانا شبلی کے اسلوب سے زیادہ فائدہ اٹھایا اور ان کی تحریر میں اسی کا رنگ رہا، جیسا کہ انھوں نے اپنے مضمون؛ "میری محسن کتابیں" میں اس کا اظہار کیا۔[5]

ورثہ[ترمیم]

اکبر آبادی سے متعلق مطالعہ جات میں شامل ہیں:[2]

  • مولانا سعید احمد اکبر آبادی: احوال-آثار از ڈاکٹر مسعود عالم قاسمی
  • مولانا سعید احمد اکبر آبادی: حیات و خدمات از ڈاکٹر قیصر حبیب ہاشمی
  • مولانا سعید احمد اکبر آبادی اور ان کی ادبی خدمات از محترمہ جہان آرا (پنجاب یونیورسٹی، لاہور میں پیش کیا گیا مقالہ)۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ سید محبوب رضوی. تاریخ دار العلوم دیوبند (جلد 2) (ایڈیشن 2005). المیزان ناشران و تاجران کتب، الکریم مارکیٹ، اردو بازار، لاہور. صفحہ 154. اخذ شدہ بتاریخ 2 اگست 2020. 
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ث مفتی عبید انور شاہ قیصر. "مولانا سعید احمد اکبر آبادی: ایک صاحب قلم شخصیت". ندائے دار العلوم وقف (ایڈیشن ربیع الثانی، 1438ھ). دار العلوم وقف دیوبند. صفحات 49–53. 
  3. نایاب حسن قاسمی. دار العلوم دیوبند کا صحافتی منظر نامہ. ادارۂ تحقیق اسلامی، دیوبند. صفحات 176, 198. 
  4. "Profile of Saeed Ahmad Akbarabadi on WorldCat" [ورلڈ کیٹ پر سعید احمد اکبر آبادی کی پروفائل]. ورلڈ کیٹ. اخذ شدہ بتاریخ 02 جنوری 2021. 
  5. ندوی، ابو الحسن علی، ویکی نویس (10-25 جولائی 1985). "مولانا سعید احمد اکبر آبادی ایک جامع شخصیت". پندہ روزہ تعمیر حیات لکھنؤ. شعبۂ تعمیر و ترقی دار العلوم ندوۃ العلماء، لکھنؤ: 4.