سعید بن علی کرمی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سعید بن علی کرمی
(عربی میں: سعيد الكرمي ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائشی نام (عربی میں: سعيد علي منصور الكرمي ویکی ڈیٹا پر (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش سنہ 1852[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طولکرم  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 10 مارچ 1935 (82–83 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طولکرم  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن طولکرم  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش طولکرم  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ
Palestine-Mandate-Ensign-1927-1948.svg انتداب فلسطین  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آبائی علاقہ طولکرم  ویکی ڈیٹا پر (P66) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بالوں کا رنگ سفید  ویکی ڈیٹا پر (P1884) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد علی بن منصور الکرمی  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ الازہر  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تخصص تعلیم عربی ادب،  شریعت  ویکی ڈیٹا پر (P812) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان،  عالم،  مفتی،  منصف،  مصنف،  شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی،  انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل ریاست کار،  وزیر  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
P islam.svg باب اسلام

سعید علی منصور کرمی (ولادت: 1852ء طولکرم - وفات: 18 مارچ 1935ء طولکرم)[2] فلسطینی شیخ، مفتی، قاضی، عالم دین اور عربی زبان کے عالم تھے۔ سعید علی منصور کرمی طولکرم کے مفتی تھے اور پھر 1922ء سے 1926ء تک اردن میں وزیر اسلام اور عدلیہ بنائے گئے۔ آپ فلسطین کے سب سے مشہور شیخوں میں سے ایک ہیں۔ آپ جامعہ الازہر سے فارغ التحصیل ہیں اور الازہر سے اعلی ترین ڈگری حاصل کی۔ سعید علی منصور کرمی ان آٹھ افراد میں سے ایک ہے جنھوں نے دمشق کی عرب اکیڈمی کی بنیاد رکھی۔

حالات زندگی[ترمیم]

سعید علی منصور کرمی فلسطینی کے طولکرم میں پیدا ہوئے۔

تالیفات[ترمیم]

سعید علی منصور کرمی نے سیاست اور سرکاری عہدوں پر اپنی دلچسپی کے باوجود،[3] انہوں نے متعدد کتابیں شائع کیں، جن میں سے یہ کتابیں سب سے اہم ہیں:

  • كتاب «واضح البرهان في الرد على أهل البهتان»،[4] عام 1875.[5]
  • كتاب «الإعلام بمعاني الأعلام»،[6] ضمن مجلدين.[7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ایف اے ایس ٹی - آئی ڈی: http://id.worldcat.org/fast/129129 — بنام: Saʻid Karmī
  2. "سعيد الكرمي". 21 مارچ 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جنوری 2021. 
  3. "الشيخ سعيد الكرمي في أعلام فلسطين في أواخر العهد العثماني". هوية (بزبان عربی). 25 يونيو 2010. 11 ديسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 ديسمبر 2020. 
  4. الزركلي، خير الدين،أعلام3، ص 99 آرکائیو شدہ 2020-05-07 بذریعہ وے بیک مشین