سلطانہ بنت ترکی السدیری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سلطانہ بنت ترکی السدیری
معلومات شخصیت
تاریخ وفات 30 جولا‎ئی 2011  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سلطانہ بنت ترکی السدیری ( (عربی: سلطانة بنت تركي السديري)‏ ; ت 1940ء- 30 جولائی 2011ء) ایک سعودی شہزادی تھیں۔ وہ شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کی پہلی بیوی تھیں، جو بعد میں سعودی عرب کے بادشاہ بنے

سوانح[ترمیم]

سلطانہ ترکی السدیری کی بیٹی تھیں جنہوں نے سلطنت کے ابتدائی دنوں سے 8 جون 1969ء تک صوبہ عسیر کی گورنر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں اور پھر صوبہ جیزان کی گورنر مقرر کی گئیں۔ وہ شاہ سلمان کے ماموں تھے۔[1][2]

انھوں نے 1954ء میں سلمان بن عبدالعزیز سے شادی کی[3] ان کے چھ بچے تھے: شہزادہ فہد، شہزادہ احمد، شہزادہ سلطان، شہزادہ عبدالعزیز، شہزادہ فیصل اور حصہ بنت سلمان۔[2][4] یہ خاندان شاہی محل کے قریب ایک محل میں رہتا تھا۔ [4]

وہ شہزادہ فہد بن سلمان چیریٹیبل سوسائٹی فار دی کیئر آف کڈنی کے مریضوں اور سعودی عرب اور پاکستان میں کئی دیگر خیراتی تنظیموں کے ذریعے انسان دوستی کی سرگرمیوں میں شامل تھیں۔[5][6] انہوں نے مئی 1990ء میں شہزادی سلطانہ فاؤنڈیشن کی بنیاد رکھی۔ [6] انھوں نے ایک تعلیمی ادارہ 2000ء میں قائم کیا تھا، اور شہزادی سلطانہ یونیورسٹی کالج برائے خواتین 2001ء میں قائم کی گئی تھی جو اسلام آباد، پاکستان میں خواتین کے لیے ایک جدید اعلیٰ تعلیمی ادارہ ہے۔ [6][7]

سلطانہ بنت ترکی السدیری کو 1980ء کی دہائی کے اوائل سے گردے کی بیماری تھی[8] اور علاج کے لیے اکثر بیرون ملک جاتی تھیں۔ انھوں نے طویل عرصے تک تعطیلات کاسا ریاض محل میں گزاریں، جو ماربیا میں گولڈن میل پر فہد بن عبدالعزیز آل سعود کے خاندان کے محل کے ساتھ واقع ہے۔ [9] 2011ء میں ماربیلا میں چھٹی کے دوران میں ان کا علاج وہاں کے ایک پرائیویٹ اسپتال میں ہوا، لیکن جولائی کے وسط میں ان کی حالت بہت زیادہ خراب ہونے پر انہیں مالگا ہوائی اڈا سے ایک ایئر ایمبولینس طیارے کے ذریعے ریاض منتقل کیا گیا۔ [9] ان کا انتقال 71 سال کی عمر میں 30 جولائی 2011ء کو ریاض میں ہوا۔ [5] ان کی نماز جنازہ 2 اگست کو ریاض کی امام ترکی بن عبداللہ مسجد میں ادا کی گئی۔[5][9][5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Gary Samuel Samore (1984). Royal Family Politics in Saudi Arabia (1953–1982) (PhD thesis). Harvard University. صفحہ 260. پرو کویسٹ 303295482. 
  2. ^ ا ب "New Saudi king Salman bin Abdulaziz 'raised cash for Mujahideen'". NZ Herald. 23 جنوری 2015. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  3. "بالفيديو: الأمير "سلطان بن سلمان" يروي قصة زواج والدہ الملك سلمان من سلطانة بنت تركي السديري". Al Marsad (بزبان عربی). اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  4. ^ ا ب Ben Hubbard (19 مارچ 2020). "The Kingdom". The New York Times. صفحہ F4. پرو کویسٹ 2378564664. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  5. ^ ا ب پ ت "Riyadh: Kingdom Mourns Loss of Philanthropist Princess". Daiji World. Riyadh. Arab News. 3 اگست 2011. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  6. ^ ا ب پ "Imran Khan all praise for pioneering role of Princess Sultana Foundation". Saudi Gazette. 27 نومبر 2019. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  7. "Affiliated Colleges". University of Punjab. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021. 
  8. "Princess Sultana, wife of Saudi Prince Salman bin Abdulaziz". UPI Archives. 16 جون 1983. اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2021. 
  9. ^ ا ب پ Héctor Barbotta (3 اگست 2011). "Marbella dice adiós a una amiga". Diario Sur (بزبان الإسبانية). Marbella. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2021.