سورج بنسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سورج بنسی

سورج بنسی راجپوتوں میں سب سے اعلیٰ نسل جس کی ہندو بڑی حرمت کرتے ہیں۔ اگنی پران سے پتہ چلتا ہے کہ سورج بنسیوں کا مورث اعلیٰ اکشو وسط ایشیا سے آیا تھا اور رام چندر اسی اکشو کی نسل سے تھا۔ تمام سورج بنسی رام چندر کو اپنا مورث اعلیٰ قرار دیتے ہیں اور رام کے لڑکوں ’لو‘ اور ’کش‘ کی اولاد کے مدعی ہیں۔ (جیمزٹاڈ۔ تاریخ راجستان جلد اول، 49۔ 58) بحیرہ خزر کے مشرق میں اقوام سیتھا کے نام سے مشہور ہوئیں۔ ان میں میساجٹی یعنی جیٹ یا جت اور سیکی مشہور ہیں۔ لیکن ہر قوم خاص نام سے مشہور ہے۔ جن کو آریا ورت کے لوگ اسو کہتے تھے۔ انہوں نے اسیریا و میدیاکو تباہ و برباد کر دیا تھا۔ انہیں سارومنسن (سورج کے پجاری) بھی کہا گیا ہے۔ کیوں کے یہ سورج کی پوجا کرتے تھے۔ انہوں نے برصغیر پر بھی حملہ کیا تھا۔ یہ مساجیٹی قوم اسو اور سوریہ ایک ہی نسل سے تعلق رکھتے تھے۔ کیوں کہ ان کے دیوتا، سپہ گری کے آداب، شاعری و راگ اور تعمیرات باہم مشابہت رکھتے ہیں۔ (جیمزٹاڈ۔ تاریخ راجستان جلد اول، 72۔ 73) یونانیوں کا کہنا ہے کہ ہیروڈوٹس نے براعظم ایشیا کا نام قبیلہ پروسہس کے نام پر رکھا تھا۔ مگر دوسرے مصنفوں کا کہنا ہے کہ مینس کے پوتے کے نام پرایشیا مشہور ہوا۔ یہ مصنفین قوم اسو کو منس کی نسل سے سمجھتے تھے۔ قوم اسو بڑے شہسوار تھے۔ وہ اس گھوڑے کی پوجا کرتے تھے جو سورج کے نام پر چڑھایا جاتا تھا اور اس کے نام پر قربان کیا جاتا تھا۔ ہیروڈوٹس بیان کرتا ہے کہ وہ اس کو فرائض میں داخل سمجھتے تھے کہ مخلوق کا سب سے تیز رو حیوان سورج کے نام پر قربان کیا جائے۔ بالکل اسی طرح سورج بنسی راجپوت برصغیر میں یہ رسوم جو اشو مید کہلاتی تھی ادا کرتے تھے۔ قوم اسو کی اکثریت اندو نسل سے تھی، مگر ایک شاخ سوریہ کہلاتی تھی۔ برصغیر کے سورج بنسی بھی سوریہ کہلاتے ہیں۔ یونانی مورخ لکھتے ہیں کہ سکندرکے حملے کے وقت متھرا اور اس کے ارد گرد کے علاقے کو سور کہا جاتا تھا۔ (جیمزٹاڈ۔ تاریخ راجستان جلد اول، 51۔72۔ 76۔ 81) راجپوتوں کا سب سے بڑا دیوتا سورج ہے اور سورج بنسی اپنے ابااجداد کی طرح سورج کی پوجا کرتے ہیں۔ سوراشٹر یا سراشٹر جہاں سورج کے بے شمار شوالے ہیں اور اس کو سوراشٹر اس لیے کہاجاتا ہے کہ یہاں سورج کی پوجا کی جاتی تھی، اس کے معنی ملک سارس یعنی سورج کے پجاریوں کا ملک۔ سورج بنسی پہلے صرف آگ اور سورج کی پوجا کرتے تھے اور انہوں نے ہنود کے دوسرے دیوتاؤں کی پوجا بعد میں اختیار کی۔ (جیمزٹاڈ۔ تاریخ راجستان جلد اول، 234۔ 239) سورج بنسی جو تمام راجپوتوں میں اعلیٰ نسل ہے اور ان کے بہت سے قبائل ہیں۔ ان میں سب سے علیٰ خاندان میواڑ کے رانا ہیں۔ تمام ہنود اس بارے میں متفق ہیں کہ یہ رام کی نسل سے ہیں اور رام کے وارث ہیں اور بالاتفاق انہیں ہندوؤں کا سورج کہتے ہیں اور نہ صرف ان کا بلکہ ان کے دارلریاست کا بھی احترام کرتے ہیں۔ (جیمزٹاڈ۔ تاریخ راجستان جلد اول، 229۔ 231)