سویرا مکھرجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سویرا مکھرجی
The Prime Minister, Shri Narendra Modi paying homage at the mortal remains of Smt. Suvra Mukherjee, First Lady, at Rashtrapati Bhavan, in New Delhi on August 18, 2015 (2).jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 17 ستمبر 1940  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نارائل ضلع  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 18 اگست 2015 (75 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نئی دہلی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات سانس کی خرابی  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg ہندوستان (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات پرنب مکھرجی (1957–)  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد ابھیجیت مکھرجی،  شرمسٹھا مکھرجی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کارہ،  مصنفہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وزیر اعظم نریندر مودی راشٹرپتی بھون میں خاتون اول سویرا مکھرجی کی باقیات کو خراج عقیدت پیش کر رہے ہیں۔

سویرا مکھرجی (17 ستمبر 1940ء – 18 اگست 2015ء) بھارت کی خاتون اول تھیں جو سال 2012 ءسے لے کر 2015ء میں اپنی موت تک خدمات انجام دے رہی تھیں۔

ابتدائی اور ذاتی زندگی[ترمیم]

مکھرجی 17 ستمبر 1940ء کو بنگال پریزیڈنسی کےضلع جیسور (اب بنگلہ دیش میں) میں پیدا ہوئیں، [2] اور جب وہ 10 سال کی تھیں تو کلکتہ منتقل ہو گئیں۔ انھوں نے 13 جولائی 1957ء کو پرنب مکھرجی سے شادی کی اور اس جوڑے کے دو بیٹے اور ایک بیٹی تھی۔ [3] انھوں نے تاریخ اور سیاسیات میں دو ماسٹرز کی ڈگریاں حاصل کیں [4] اور مغربی مدنا پور میں 1970ء کی دہائی کے اوائل میں تاریخ اور انگریزی گرامر بھی پڑھائی۔ [5]

مکھرجی، ایک ماہر گلوکار اور رابندر ناتھ ٹیگور کے تخلیق کیے ہوئے گانوں کے گلوکار تھے، جنہیں رابندر سنگیت کے نام سے جانا جاتا ہے۔ انھوں نے بھارت، یورپ، ایشیا اور افریقا میں کئی سالوں تک ان کے رقص ڈراموں میں پرفارم کیا، نیز گیتانجلی ٹولے کی بانی ہونے کے ساتھ، جس کا مشن ٹیگور کے فلسفے کو گیت اور رقص کے ذریعے پھیلانا ہے۔ [6] یہ گروپ اکثر تالکٹورا روڈ پر واقع ان کے گھر میں مشق کرتا تھا۔ انھوں نے کلاسیکی رقص کا اپنا پیار اپنی بیٹی شرمستھا مکھرجی کو دیا، جس کے ساتھ وہ کبھی کبھار پرفارم بھی کرتی تھیں۔ وہ ایک پینٹر بھی تھیں جنہوں نے گروپ اور سولو دونوں نمائشوں میں حصہ لیا۔ [7]

مکھرجی نے دو کتابیں تصنیف کیں: Chokher Aloey وزیر اعظم اندرا گاندھی کے ساتھ ان کی قریبی بات چیت کا ذاتی بیان ہے، اور Chena Achenai Chin ایک سفرنامہ ہے جس میں ان کے دورہ چین کا ذکر ہے۔ اس نے گلوکار کمار سانو کی بھی حمایت کی اور رابندر سنگیت اور مذہبی موسیقی سے متعلق ان کے بہت سے میوزیکل البمز جاری کیے۔

موت[ترمیم]

مکھرجی 74 سال کی عمر میں نئی دہلی، بھارت کے ایک ہسپتال میں انتقال کر گئے۔ اسے سانس کی تکلیف تھی اور اس کا علاج دل کی مریضہ کے طور پر کیا جاتا تھا۔ [8]

نریندر مودی، ہندوستان کے وزیر اعظم نے کہا: "۔۔۔ (وہ) آرٹ، ثقافت اور موسیقی کے عاشق کے طور پر یاد رکھا جائے گا۔ اس کی گرم طبیعت نے اسے ہر اس شخص سے پیار کیا جس سے وہ ملتی تھی" [9] ان کی دوست شیخ حسینہ، بنگلہ دیش کی وزیر اعظم جنہوں نے جنازے میں شرکت کی، نے کہا: "بنگلہ دیش نے ان کے انتقال سے ایک عظیم دوست اور خیر خواہ کو کھو دیا ہے"۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://timesofindia.indiatimes.com/india/Suvra-Mukherjee-President-Pranab-Mukherjees-wife-passes-away/articleshow/48524004.cms
  2. "President Pranab Mukherjee's wife Suvra passes away". Deccan Chronicle. 18 اگست 2015. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2015. 
  3. Sabha 2000.
  4. Das، Madhuparna (20 اگست 2015). "With Suvra Mukherjee's Demise, Gitanjali Troup Will Not Be the Same Again". Economic Times. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2015. 
  5. "Profile of First Lady Mrs Suvra Mukherjee" (PDF). President of India. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2015. 
  6. Jha، Durgesh Nandan (18 اگست 2015). "Suvra Mukherjee, President Pranab Mukherjee's wife, passes away". دی ٹائمز آف انڈیا. اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2015. 
  7. "PM condoles the passing away of First Lady Mrs. Suvra Mukherjee". Office of the Prime Minister of India. 18 اگست 2015. اخذ شدہ بتاریخ 20 اکتوبر 2015. 

کتابیات[ترمیم]

  • Sabha، India Parliament Rajyya (2000). Who's who. Rajya Sabha Secretariat. 
اعزاز و القاب
ماقبل  First Lady of India
2012–2015
خالی
عہدے پر اگلی شخصیت
سویتا کووند