سيف الدين اينال

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سيف الدين اينال
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1380  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قاہرہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 26 فروری 1461 (80–81 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قاہرہ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن قاہرہ  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد نسل
خاندان برجی مملوک  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

الملک الاشرف سيف الدين ابو النصر اينال الاعلیٰ الزھری عن ناصری الجرود (جن کو سیف الدین اينال کہا جاتا ہے) (ولادت:1381ء - وفات:26 فروری 1461ء) مصر کے 13 واں برجی مملوک سلطان تھے، جنہوں نے 1453ء–1461ء کے درمیان حکمرانی کی۔

ابتدائی زندگی اور کیریئر[ترمیم]

سيف الدين اينال 1381ء میں قاہرہ میں چیرکاسیا تاجر کے ہاں پیدا ہوئے تھے۔ [1] [2] [3] ان کو اصل میں ایک تاجر علاءالدین نے خریدا تھا، جس نے ان کو "الاعلیٰ " نسبت عطا کیا تھا۔ اس کے بعد 1397ء میں علاءالدین نے سيف الدين اينال کو برجی مملوک کے بانی سیف الدین برقوق کے ہاتھوں بیچ دیا، اس وجہ سے سيف الدين اينال کی دوسری نسبت الزھری ملی۔ سيف الدين اينال نے سیف الدین برقوق کے ساتھ اپنی خدمات کے دوران فوجی تربیت حاصل کی۔

سیف الدین برقوق کی موت کے بعد، سلطان ناصر فراج نے سيف الدين اينال کو آزاد کروایا اور اسے اپنی ذاتی مصاحبوںمیں شامل کیا۔ [1] سيف الدين اينال کو اس طرح اضافی نسبت "الناصری" حاصل کیا۔ اسيف الدين اينال کو داڑھی کم ہونے کی وجہ سے "الجرود" نسبت حاصل کیا۔ 1421ء میں الفراج نے سيف الدين اينال کو جمدار کا درجہ دیا۔ 1421ء میں سلطان احمد بن شیخ کے تحت انھیں دس مملوک کا امیر بنا دیا گیا۔ بعد میں، 1422ء میں، سيف الدين اينال کو سلطان بارسبے کے ذریعہ ڈرم کے امیر کے عہدے پر ترقی دے دی گئی۔ [2]

حکومت[ترمیم]

جانشینی اور موت[ترمیم]

1460ء میں قاہرہ میں ایک طاعون پھیل گیا، جس کے نتیجے میں اس طاعون کی وجہ سے مصر کے ہزاروں باشندے ہلاک ہوگئے، جن میں تقریباً 1،400 شاہی مملوک کے خاندان کے لوگ شامل تھے۔ [4] سيف الدين اينال اور ان کی کونسل نے بڑی تعداد میں چوروں کو اکٹھا کیا ، اور سن 1461ء کے وسط میں سلطان سيف الدين خوشخدم کے عروج تک بڑی حد تک ان پر قید رہا۔ [5]

سيف الدين اينال 3 فروری 1461ء کو بیمار گیا۔ اس کے بعد ، سيف الدين اينال نے اپنے خلیفہ المستجید اور قانونی علماء کو طلب کیا اور ان سے اپنی وصیت کی کہ المويد شہاب الدين احمد،[6] اس کا سب سے بڑا بیٹا اور امیر الحجاج ("مکہ مکرمہ زیارت کے کمانڈر")[7] اس کی جانشینی کرے۔[8] اس کے نتیجے میں، سيف الدين اينال نے سلطانی کو ترک کردیا اور 25 فروری کو احمد کو سلطان قرار دیا گیا۔[9] 26 فروری کو سيف الدين اينال سات سال گیارہ ماہ کی حکمرانی کے بعد 80 سال کی عمر میں ان کا انتقال ہوا۔[10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Sharon, 2009, p. 162
  2. ^ ا ب Natho, 2010, p. 214
  3. Van Donzel, 1994, p. 170
  4. Natho, 2010, p. 216
  5. Hawting, 2007, p. 128.
  6. Muir, 1896, pp. 161–162.
  7. Raymond, 2000, p. 166
  8. Muir, 1896, pp. 161–162.
  9. Muir, 1896, pp. 161–162.
  10. Natho, 2010, p. 216

کتابیات[ترمیم]

  • Hawting، G.R. (2007). Muslims, Mongols and Crusaders. Routledge. ISBN 978-0415450966. 
  • Levanoni، Amalia (1995). A Turning Point in Mamluk History: The Third Reign of Al-Nāṣir Muḥammad Ibn Qalāwūn (1310–1341). BRILL. ISBN 9004101829. 
  • Muir، W. (1896). The Mameluke; or, Slave dynasty of Egypt, 1260–1517, A. D. Smith, and Elder. Othman Inal Sultan. 
  • Natho، Kadir I. (2010). Circassian History. Xlibris Corporation. ISBN 978-1441523884. 
  • Raymond، A. (2000). Cairo. Harvard University Press. ISBN 0674003160. Uthman Inal Sultan. 
  • Sharon، M. (2009). Handbook of Oriental Studies: Handbuch der Orientalistik. The Near and Middle East. Corpus Inscriptionum Arabicarum Palaestinae (CIAP). BRILL. ISBN 978-90-04-17085-8. 
  • Van Donzel، E.J. (1994). Islamic Desk Reference. BRILL. ISBN 9004097384. Aynal 1381.