مندرجات کا رخ کریں

سٹیفنی پاور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
سٹیفنی پاور
ذاتی معلومات
مکمل نامسٹیفنی جوڈتھ پاور
پیدائش (1957-04-19) 19 اپریل 1957 (عمر 67 برس)
ٹرینیڈاڈ
بلے بازیدائیں ہاتھ کی بلے باز
حیثیتوکٹ کیپر
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
واحد ٹیسٹ (کیپ 27)15 مارچ 2004  بمقابلہ  پاکستان
پہلا ایک روزہ (کیپ 28)24 جولائی 1993  بمقابلہ  آسٹریلیا
آخری ایک روزہ9 اپریل 2005  بمقابلہ  جنوبی افریقہ
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1982–2005ٹرینیڈاڈ اینڈ ٹوباگو
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 1 34 3 48
رنز بنائے 76 183 129 373
بیٹنگ اوسط 38.00 8.31 32.25 13.32
100s/50s 0/1 0/0 0/1 0/1
ٹاپ اسکور 57 28 57 62
گیندیں کرائیں 6 212
وکٹ 0 6
بالنگ اوسط 9.50
اننگز میں 5 وکٹ 0
میچ میں 10 وکٹ 0
بہترین بولنگ 3/11
کیچ/سٹمپ 0/– 18/11 0/– 22/17
ماخذ: کرکٹ آرکائیو، 15 دسمبر 2021

سٹیفنی جوڈتھ پاور (پیدائش: 19 اپریل 1957ء) ٹرینیڈاڈ کی ایک سابق خاتون کرکٹ کھلاڑی ہے جو وکٹ کیپر اور دائیں ہاتھ سے بلے باز ویسٹ انڈیز کرکٹر کے طور پر کھیلتی ہے۔ وہ 1993ء اور 2005ء کے درمیان ویسٹ انڈیز کے لیے ایک ٹیسٹ میچ اور 34 ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں نظر آئیں اور 2003ء اور 2005ء کے درمیان ٹیم کی کپتانی کی۔ اس نے ٹرینیڈاڈ اور ٹوباگو کے لیے مقامی کرکٹ کھیلی۔ [1] [2] اس نے کوپوس کریڈٹ یونین کے بورڈ آف ڈائریکٹر کی رکن کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ اکتوبر 2015ء میں انھیں یو ایس کرکٹ ہال آف فیم میں شامل کیا گیا اور وہ پہلی خاتون کے طور پر چنی گئی اور اس کے ساتھ ساتھ پہلی خاتون بین الاقوامی کرکٹ کھلاڑی بن گئیں جنہیں یو ایس کرکٹ ہال آف فیم میں شامل کیا گیا۔ [3]

سوانح عمری[ترمیم]

سٹیفنی نے ہوکیٹ بیپٹسٹ پرائمری اسکول میں اپنی ابتدائی تعلیم حاصل کرتے ہوئے آٹھ سال کی عمر سے کرکٹ کھیلنا شروع کر دی۔ اس کے بچپن کے دوران وہ ایک ٹمبائے کے طور پر سمجھا جاتا تھا۔ جب وہ سینٹ فرانسس گرلز کالج میں پڑھتی تھیں تو وہ گرلز اسکول کی ٹیم کے لیے بھی کھیلتی تھیں۔ وہ طلاق یافتہ ہے اور اس کا ایک بچہ ہے۔ وہ سان جوآن نارتھ سیکنڈری اسکول میں تقریباً 37 سال سے جسمانی تعلیم پڑھاتی ہیں۔ [3] انھوں نے 1986ء میں اپنے اکلوتے بیٹے سٹیفن کو جنم دینے کے بعد کرکٹ سے تین سال کا وقفہ بھی لیا۔ اسے نیویارک میں اٹلانٹس کرکٹ کلب کی اعزازی باوقار رکنیت ملی۔ [4]

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

سٹیفنی کو 1993ء کے خواتین کرکٹ عالمی کپ کے لیے ویسٹ انڈیز کی ٹیم میں دوسری چوائس وکٹ کیپر کے طور پر منتخب کیا گیا تھا۔ اس کے بعد اس نے ورلڈ کپ ٹورنامنٹ کے دوران 24 جولائی 1993ء کو آسٹریلیا کے خلاف پہلی پسند کی وکٹ کیپر کی جگہ اپنا ایک روزہ ڈیبیو کیا جو ٹورنامنٹ کے پہلے میچ کے بعد زخمی ہو گئی تھیں۔ [5] وہ 2003ء میں 46 سال کی عمر میں ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم کی کپتان بنیں اور کسی بھی طرز میں کپتانی کے آغاز پر اب تک کی سب سے عمر رسیدہ بین الاقوامی کپتان کے طور پر جانی جاتی ہیں۔ [6] اس نے 2003ء کے عالمی کپ کوالیفائر میں ٹیم کی کپتانی کی اور ویسٹ انڈیز ٹورنامنٹ کے دوران آئرلینڈ کے خلاف رنر اپ بن کر ابھرا۔ اس کے بعد ویسٹ انڈیز نے 2000ء کے خواتین کرکٹ عالمی کپ سے محروم ہونے کے بعد 2005ء کے خواتین کرکٹ عالمی کپ کے لیے بھی کوالیفائی کیا تھا۔ اس نے 15 مارچ 2004ء کو 46 سال اور 334 دن کی عمر میں کراچی میں پاکستان کے خلاف واحد ٹیسٹ میچ میں اپنا ٹیسٹ ڈیبیو کیا۔ [7] وہ خواتین کے ٹیسٹ میچ میں ٹیسٹ کیپ کی حامل اب تک کی سب سے معمر کھلاڑی بن گئیں۔ [8] اس کے بعد اس نے اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر ٹیم کی کپتانی کی اور خواتین کے ٹیسٹ میچ میں کپتانی کا آغاز کرنے والی بھی معمر خاتون بن گئیں۔ [9] اس نے اپنے ڈیبیو پر اپنا پہلا ٹیسٹ ففٹی رجسٹر کیا اور اس کے بعد اس نے اپنے کیریئر میں کبھی دوسرا ٹیسٹ میچ نہیں کھیلا۔ اس نے 2005ء کے ایڈیشن کے دوران 47 سال کی عمر میں پہلی بار کسی عالمی کپ ٹورنامنٹ میں ویسٹ انڈیز کی قومی ٹیم کی کپتانی کی، جس نے بین الاقوامی کرکٹ میں ویسٹ انڈیز کے لیے اس کے آخری عالمی کپ ٹورنامنٹ کو بھی نشان زد کیا۔ ان کی کپتانی میں، ویسٹ انڈیز پانچویں نمبر پر رہی اور وہ 2005ء کے ورلڈ کپ کے بعد بین الاقوامی کرکٹ سے ریٹائر ہوگئیں۔ 2006ء میں وہ ٹرینیڈاڈ اور ٹوباگو ٹیم کی کپتان کے طور پر مقامی کرکٹ سے ریٹائر ہوگئیں۔ [10] اسٹیفنی پاور ڈبلیو او ڈی آئی کی تاریخ میں کھیلنے والی سب سے معمر کھلاڑی ہیں جب انھوں نے یہ کامیابی 2005ء کے عالمی کپ میں میزبان جنوبی افریقہ کے خلاف میچ کے دوران حاصل کی تھی جو اتفاق سے ویسٹ انڈیز کے لیے ان کی آخری بین الاقوامی نمائش تھی (47 سال 355 دن کی عمر میں) اور یہ بھی نولان کلارک کے 47 سال اور 257 دن کے سابقہ ریکارڈ کو پیچھے چھوڑتے ہوئے کسی ایک روزہ بین الاقوامی میں مرد یا عورت کے طور پر نظر آنے والے اب تک کے سب سے معمر کھلاڑی قرار پائیں۔ [11] [12] اس نے 13 سال تک بین الاقوامی کرکٹ میں نظر آنے والی اب تک کی سب سے عمر رسیدہ خاتون کرکٹ کھلاڑی ہونے کا عالمی ریکارڈ اپنے نام کیا یہاں تک کہ نیدرلینڈ کی کیرولین ڈی فوو کو پیچھے چھوڑ دیا گیا جو 52 سال کی عمر میں 10 سال بعد یونائیٹڈ کے خلاف میچ کے دوران ڈچ قومی ٹیم میں واپس آئی تھیں۔ عرب امارات 2018ء کے آئی سی سی خواتین کے ٹی20 ورلڈ کپ کوالیفائر کے دوران یہ نوٹ کیا گیا۔ [13]

کوچنگ کیریئر[ترمیم]

وہ لیول I اور لیول II کے کوچز کے لیے سند یافتہ لیول II کوالیفائیڈ کوچ اور ٹرینر ہیں۔ اس نے ٹرینیڈاڈ اور ٹوباگو ، برمودا ، فورٹ لاڈرڈیل اور نیو جرسی میں 2008ء میں اور پھر 2009ء میں ریاستہائے متحدہ امریکہ میں کوچنگ کے فرائض انجام دیے۔ اس نے امریکا، کینیڈا اور کیریبین میں متعدد کوچنگ ایجوکیشن پروگرامز بھی کیے ہیں۔ 2009ء میں انھیں ویسٹ انڈیز ویمن کرکٹ فیڈریشن نے ویسٹ انڈیز کی خواتین کرکٹ ٹیم کا اسسٹنٹ کوچ مقرر کیا جس کے لیے شیرون کیمبل نے ہیڈ کوچ کے طور پر خدمات انجام دیں۔ [10] [14] اگست 2018ء میں اس نے کینیڈا کے دورے میں سیکنڈری اسکولز کرکٹ لیگ گرلز ٹیم کی کوچنگ بھی کی۔ [15] [16] وہ بین الاقوامی کرکٹ کونسل کی امریکا کے علاقے میں پہلی اور واحد خاتون کرکٹ ٹرینر/ٹیوٹر بن گئیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Player Profile: Stephanie Power"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2021 
  2. "Player Profile: Stephanie Power"۔ CricketArchive۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2021 
  3. ^ ا ب "Stephanie Power First International Woman Cricketer Hall Of Fame Inductee | USA Cricketers" (بزبان انگریزی)۔ 2015-01-30۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  4. https://www.dreamcricket.com/articles/dreamcricket-usa-news/coach-stephanie-power-honored-by-atlantis-amidst-aftermath-of-storm/
  5. "Full Scorecard of WI Women vs AUS Women 9th Match 1993 - Score Report | ESPNcricinfo.com"۔ ESPNcricinfo (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  6. "Stephanie Power: The oldest cricketer to play an ODI match – The Roar"۔ www.theroar.com.au۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  7. "Full Scorecard of PAK Women vs WI Women Only Test 2003/04 - Score Report | ESPNcricinfo.com"۔ ESPNcricinfo (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  8. "Records | Women's Test matches | Individual records (captains, players, umpires) | Oldest players | ESPNcricinfo.com"۔ Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  9. "Records | Women's Test matches | Individual records (captains, players, umpires) | Oldest captains on captaincy debut | ESPNcricinfo.com"۔ Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  10. ^ ا ب "Power appointed West Indies women assistant coach"۔ ESPNcricinfo (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  11. "Full Scorecard of WI Women vs SA Women 3rd ODI 2004/05 - Score Report | ESPNcricinfo.com"۔ ESPNcricinfo (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  12. "5 Unbreakable records set by female cricketers"۔ CricTracker (بزبان انگریزی)۔ 2020-06-04۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  13. "Stats: Netherlands' cricketer Caroline de Fouw features in a T20I at the age of 52"۔ CricTracker (بزبان انگریزی)۔ 2018-07-08۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  14. "Power: Windies Women must be more ruthless"۔ Trinidad and Tobago Newsday (بزبان انگریزی)۔ 2017-10-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  15. "TT schoolgirls for Canada cricket tour"۔ Trinidad and Tobago Newsday (بزبان انگریزی)۔ 2018-07-02۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021 
  16. "Women's cricket blasting off"۔ Trinidad and Tobago Newsday (بزبان انگریزی)۔ 2018-07-01۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021