سکھر کرکٹ ٹیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سکھر کرکٹ ٹیم سکھر ، صوبہ سندھ پاکستان کی ایک فرسٹ کلاس کرکٹ ٹیم ہے۔ یہ ٹیم پاکستان کے ڈومیسٹک فرسٹ کلاس کرکٹ مقابلوں میں 1974-75 اور 1986-87 کے سیزن میں میچ کھیلی تھی۔ یہ ٹیم اب فرسٹ کلاس کرکٹ نہیں کھیلتی۔

فرسٹ کلاس کرکٹ کی تاریخ[ترمیم]

1970 کی دہائی[ترمیم]

سکھر نے اپنا آغاز 1974-75 کے بی سی سی پی پیٹرنز ٹرافی میں پبلک ورکس ڈیپارٹمنٹ کرکٹ ٹیم کےخلاف کھیل سے کیا تھا ، 49 اور 174 کے اسکور پر آؤٹ ہونے کے بعد 427 رنز سے شکست کھا گئی۔ [1] ٹیم کے نو اور کئی دیگر کھلاڑیوں نے سکھر کی نمائندگی کی۔ 1970 کی دہائی میں 1973-74 کے سیزن کے بعد اپنی فرسٹ کلاس کرکٹ کی حیثیت سے محروم ہونے سے پہلے یہ ٹیم ہمسایہ شہر خیرپور کے لیے کھیلی تھی ۔

انھوں نے 1975-76 میں تین میچ کھیل کھیلے تھے لیکن تمام میچوں میں انہیں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ حیدرآباد کے خلاف میچ میں انہوں نے پہلی اننگز میں برتری حاصل کرلی لیکن اس کے باوجود اسے سات وکٹوں سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ شریف کاکا [2] نے 92 اور 45 رنز بنائے اور پہلی اننگز میں 52 سکور دے کر 6 وکٹیں بھی حاصل کیں جو سکھر کی اب تک کی باؤلنگ کے سب سے بہترین اعداد و شمار ہیں۔ [3]

سکھر کی واحد فتح سکندر علی بھٹو کپ میں 1976-77 کے سیزن کے پہلے کھیل میں ہوئی، جب انہوں نے میرپورخاص کے گاما اسٹیڈیم میں حیدرآباد کو سات وکٹوں سے شکست دی۔ [4] اسلم جعفری [5] نے 104 اور 49 رن بنائے جنہوں نے کم اسکور والے اس میچ میں ہر اننگز میں سب سے زیادہ رنز بنائے۔ عاشق حسین [6] نے 38 رن دے کر 3 اور 38 رن دے کر 5 وکٹ لیے۔ سکھر کی پہلی اننگز میں کل 228 رن بنے تھے اور یہ پہلی بار تھا کہ اس ٹیم نے 200 رنز کا ہندسہ عبور کیا۔

سکھر کے اگلے میچ میں یونائیٹڈ بینک نے دوسری اننگز میں انہیں 28 رنز پر آؤٹ کر دیا جو ان کا اب تک کا سب سے کم مجموعہ ہے۔ [7] اس میچ میں اور ان کے اگلے دو 1976-77 اور 1977-78 سیزن میں سکھر نے چھ مکمل اننگز میں مجموعی طور پر صرف 390 رنز بنائے جبکہ ان کے مد مقابل ٹیموں نے 28 وکٹوں کے نقصان پر 892 رنز بنائے۔ 1977-78 کے بعد وہ پانچ سیزن کے لیے اپنی فرسٹ کلاس کرکٹ کی حیثیت سے محروم ہو گئے۔

انہوں نے آٹھ میچ کھیلے تھے ، ایک میں جیت اور سات میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

1980 کی دہائی[ترمیم]

سکھر 1983-84 میں توسیع شدہ بی سی سی پی پیٹرنز ٹرافی کے لیے فرسٹ کلاس کا درجہ حاصل کرنے والی متعدد ٹیموں میں سے ایک تھی۔ [8] انہوں نے مذکورہ سیزن کے دوران چار میچ کھیلے، تین ڈرا ہوئے اور ایک میں شکست ہوئی۔ رضوان یوسف [9] نے کوئٹہ کے خلاف ڈرا میچ میں سکھر کا سب سے زیادہ اسکور 116 رنز ناٹ آؤٹ کیا۔ جب لاہور سٹی بلیوز کے خلاف میچ ٹیم نے ڈرا کی طرف بڑھا تو سکھر پہلی اننگز میں 191 رنز کے خسارے کا شکار تھی اس میچ میں انہوں نے اپنا سب سے زیادہ مجموعی اسکور پانچ وکٹ پر 312 رن 124 اوورز میں بنائے۔

معروف کھلاڑی[ترمیم]

شریف کاکا سکھر کے سب سے بڑے اسکورر تھے۔ انہوں نے 1970 کی ٹیم میں 25.61 کی اوسط سے 333 رنز بنائے۔ سب سے زیادہ وکٹ لینے والے عاشق حسین تھے، 1970 کی دہائی میں 23.82 اوسط سے 23 وکٹ لیے۔

موجودہ صورت حال[ترمیم]

ٹیم فرسٹ کلاس سطح پر کھیل رہی ہے۔ فی الحال یہ بین الاضلاعی سینئر ٹورنامنٹ جو تین روزہ قومی مقابلہ ہے اس میں حصہ لیتی ہے۔

گراؤنڈز[ترمیم]

سکھر نے تین فرسٹ کلاس ہوم میچ کھیلے، یہ تمام میچسکھر کے میونسپل اسٹیڈیم میں کھیلے گئے۔ اس وقت وہ پی سی بی اکیڈمی گراؤنڈ ، سکھر میں اپنے ہوم میچ کھیلتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

دیگر ذرائع[ترمیم]

  • وزڈن کرکٹرز کا المنک 1976 سے 1988